உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شلپا شیٹی اور راج کندرا کی مشکلات نہیں ہورہی ہیں کم ، اب درج ہوا دھوکہ دہی کا کیس

    شلپا شیٹی اور راج کندرا کی مشکلات نہیں ہورہی ہیں کم ، اب درج ہوا دھوکہ دہی کا کیس

    شلپا شیٹی اور راج کندرا کی مشکلات نہیں ہورہی ہیں کم ، اب درج ہوا دھوکہ دہی کا کیس

    ممبئی پولیس کے باندرہ پولیس اسٹیشن میں شلپا شیٹی اور ان کے شوہر راج کندرا سمیت دیگر لوگوں کے خلاف نتن برائی نام کے شخص نے شکایت درج کرائی ہے ۔ واقعہ مبینہ طور پر جولائی 2014 کا ہے ۔

    • Share this:
      ممبئی : بالی ووڈ اداکارہ شلپا شیٹی اور ان کے شوہر راج کندرا کی مشکلات کم ہونے کا نام نہیں لے رہی ہیں ۔ پورنوگرافی کیس میں مہینوں بعد ملی ضمانت کے بعد گھر پہنچے راج کندرا ایک نئے معاملہ کو لے کر سرخیوں میں ہیں ۔ ممبئی کے باندرہ پولیس اسٹیشن میں شلپا شیٹی اور ان کے شوہر راج کندرا کے خلاف دھوکہ دہی کا معاملہ درج ہوا ہے ۔ ایک شخص نے شلپا اور راج کے ساتھ دو دیگر لوگوں کے خلاف ایک کروڑ اکیاون لاکھ روپے کی دھوکہ دہی کا الزام لگایا ہے ۔ معاملہ میں جن دیگر لوگوں کو تذکرہ کیا گیا ہے ان میں کاشف خان بھی شامل ہیں ۔

      ممبئی پولیس کے باندرہ پولیس اسٹیشن میں شلپا شیٹی اور ان کے شوہر راج کندرا سمیت دیگر لوگوں کے خلاف نتن برائی نام کے شخص نے شکایت درج کرائی ہے ۔ واقعہ مبینہ طور پر جولائی 2014 کا ہے ۔ شکایت کنندہ نے الزام لگایا ہے کہ ایس ایف ایل فٹنس پرائیویٹ لمیٹڈ کے ڈائریکٹر کاشف خان نے شلپا شیٹی ، راج کندرا اور دیگر کے ساتھ ان سے فٹنس اسکیم میں پیسہ لگانے کیلئے کہا اور منافع کا وعدہ کیا تھا ۔

      شکایت کنندہ کا الزام ہے کہ انہوں نے سرمایہ کاری کی اور جب کوئی منافع نہیں ہوا تو اپنے پیسے واپس مانگے ، جس کے بعد انہیں دھمکیاں دی گئیں ۔ اس شکایت کے بعد باندرہ پولیس نے شلپا شیٹی ، راج کندرا سمیت دیگر ملزمین کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 406 ، 409 ، 420 ، 506 ، 34 اور 120 ( بی) کے تحت معاملہ درج کرکے جانچ شروع کردی ہے ۔ اس معاملہ کی جانچ کیلئے اب جلد ہی پولیس راج کندرا اور شلپا شیٹی سے پوچھ گچھ کرسکتی ہے ۔

      راج کندرا گزشتہ دنوں پورونوگرافی ویڈیو بنانے اور اس کو الگ الگ ایپس کے ذریعہ پبلش کرنے کے معاملہ میں جیل میں بند تھے ۔ انہیں آرتھر روڈ جیل میں  کیا گیا تھا ۔ فی الحال وہ ضمانت پر باہر ہیں ۔ پولیس کو ان کے فون پر 100 سے زیادہ فحش ویڈیوز ملے تھے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: