ہوم » نیوز » انٹرٹینمنٹ

Raj Kundra Arrested: فحش فلمیں بنانے کے الزام میں آخر کیسے گھرے راج کندرا؟ جانیں انسائیڈ اسٹوری

ممبئی کرائم برانچ (Mumbai Crime Branch) کا کہنا ہے کہ راج کندرا (Raj Kundra) اس معاملے میں سازش کرنے والے کے طور پر سامنے آرہے ہیں اور ان کے پاس راج کندرا کے خلاف مناسب ثبوت بھی موجود ہیں۔

  • Share this:
Raj Kundra Arrested: فحش فلمیں بنانے کے الزام میں آخر کیسے گھرے راج کندرا؟ جانیں انسائیڈ اسٹوری
فحش فلمیں بنانے کے الزام میں آخر کیسے گھرے راج کندرا؟ جانیں انسائیڈ اسٹوری

ممبئی: بالی ووڈ اداکارہ شلپا شیٹی کندرا (Shilpa Shetty) کے شوہر اور بزنس مین راج کندرا (Raj Kundra) کو پیر کی شب کرائم برانچ نے گرفتار (Raj Kundra Arrest) کرلیا۔ راج کندرا کو فحش فلمیں بنانے اور کچھ ایپ کے ذریعہ انہیں دکھانے کے معاملے میں گرفتار کیا گیا ہے۔ ان کے گرفتار ہونے کی خبر اب چاروں طرف پھیل چکی ہے۔ ممبئی کرائم برانچ اس معاملے کی جانچ کر رہی ہے۔ ممبئی کرائم برانچ (Mumbai Crime Branch) کا کہنا ہے کہ راج کندرا اس معاملے میں سازش کرنے والے کے طور پر سامنے آرہے ہیں اور ان کے پاس راج کندرا کے خلاف مناسب ثبوت بھی موجود ہیں۔ لیکن، اگر آپ نہیں جانتے کہ پورا معاملہ کیا ہے تو آئیے آپ کو بتاتے ہیں معاملے کی انسائیڈ اسٹوری۔


کب درج ہوا معاملہ


راج کندرا کے خلاف اسی سال 4 فرروی کو ممبئی کے ملوانی تھانہ کرائم برانچ نے معاملہ درج کیا تھا۔ ان کے خلاف جرم نمبر-103/2021 کے تحت معاملہ درج کیا گیا تھا۔ راج کندرا پر تعزیرات ہند (آئی پی سی) کی دفعہ 292, 293, 420, 34 اور  انفارمیشن ٹکنالوجی ایکٹ کے تحت 67 اور 67 اے سمیت دیگر دفعات لگائی گئی تھیں۔


 راج کندرا کے خلاف اسی سال 4 فرروی کو ممبئی کے ملوانی تھانہ کرائم برانچ نے معاملہ درج کیا تھا۔ ان کے خلاف جرم نمبر-103/2021 کے تحت معاملہ درج کیا گیا تھا۔

راج کندرا کے خلاف اسی سال 4 فرروی کو ممبئی کے ملوانی تھانہ کرائم برانچ نے معاملہ درج کیا تھا۔ ان کے خلاف جرم نمبر-103/2021 کے تحت معاملہ درج کیا گیا تھا۔


کیا ہے معاملہ

دراصل، ممبئی کرائم برانچ کی پراپرٹی سیل نے فلم انڈسٹری میں بریک دینے کے بہانے خواتین اور نوجوانوں کو فحش ویڈیو اور پورنوگرافی میں دھکیلنے والے ایک بڑے ریکٹ کا پردہ فاش کیا ہے۔ اس معاملے میں اب تک پانچ ملزمین کو گرفتار کیا جاچکا ہے، جن میں دو مرد اداکار، ایک لائٹ مین کے طور پر کام کرنے والا شخص اور دو خواتین شامل ہیں۔ جو ویڈیو گرافر، فوٹو گرافر اور گرافک ڈیزائنر کے طور پر کام کرتی ہیں۔

بتایا جارہا ہے کہ معاملے سے جڑے ملزم سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر بنائے گئے فحش ویڈیوز کو جاری کرتے تھے، جس کی اطلاع ملنے پر ممبئی کرائم برانچ کی پراپرٹی سیل نے جانچ شروع کی۔ ممبئی کرائم برانچ کی پراپرٹی سیل کو اطلاع ملی تھی کہ ملاڈ مغرب کے مڈ گاوں میں فحش ویڈیو کی شوٹنگ چل رہی ہے۔ معاملے کی اطلاع ملنے پر اے پی آئی لکشمی کانت سالنکھے نے بنگلے پر چھاپہ ماری کی، جہاں نیوڈ ویڈیو کی شوٹنگ جاری تھی۔

ابتدائی جانچ میں پولیس کو ملزمین کے پاس سے ملے موبائل سے ’ہوتھت موویز‘ کا پتہ چلا، جو کہ ایک موبائل ایپ ہے، اس میں ان ویڈیوز کو اپلوڈ کیا جاتا ہے۔ فحش ویڈیو دیکھنے کے لئے اس اپلی کیشن کی رکنیت لینی پڑتی ہے، جس کے لئے روپیوں کی ادائیگی کرنی ہوتی ہے۔ اس گروہ کے پاس کچھ اور بھی ایسے ہی موبائل اپلی کیشن ہیں۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 20, 2021 09:58 AM IST