உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Jacqueline Fernandez ED Case:جیکلن فرنانڈیز کو سوکیش چندرشیکھر منی لانڈرنگ معاملے کے درمیان بیرون ملک جانے کی ملی اجازت

    اداکارہ جیکلن کو ملی یہ بڑی راحت۔

    اداکارہ جیکلن کو ملی یہ بڑی راحت۔

    Jacqueline Fernandez ED Case: سوکیش چندر شیکھر بالی ووڈ کی کئی ماڈلز اور اداکاراؤں پر 20 کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کر چکا ہے۔ اس وقت وہ جیل میں ہیں۔ جیکلین فرنانڈس ایک فلمی اداکارہ ہیں، انھوں نے کئی فلموں میں کام کیا ہے۔

    • Share this:
      Jacqueline Fernandez ED Case:اداکارہ جیکلین فرنانڈس کو عدالت نے ابوظہبی میں 31 مئی سے 6 جون تک منعقد ہونے والے آئیفا ایوارڈز میں شرکت کی اجازت دے دی ہے جس کے باعث اب ان کے بیرون ملک جانے کا راستہ کھل گیا ہے۔

      جیکلن سے ای ڈی کئی بار کرچکی ہے پوچھ تاچھ
      غور طلب ہے کہ اداکارہ جیکولین فرنینڈس سوکیش چندر شیکھر کے معاملے میں ای ڈی کے ریڈار پر ہیں، انہوں نے فرانس، ابوظہبی اور نیپال جانے کے لیے پٹیالہ ہاؤس کورٹ میں درخواست دائر کی تھی۔اس معاملے میں ان کا بیان بھی ریکارڈ کیا گیا ہے۔

      سوکیش چندر شیکھر نے جیکلین کو مہنگے تحائف دیے ہیں۔جس کی وجہ سے ای ڈی نے ان کی 7 کروڑ روپے کی جائیداد ضبط کر لی ہے، جو انہیں سوکیش چندر شیکھر نے تحفے میں دی تھی۔اس سے قبل ای ڈی نے پنکی ایرانی کے خلاف سپلیمنٹری چارج شیٹ داخل کی ہے جو کہ سوکیش چندر شیکھر کی شاگرد ہے۔ یہ الزام ہے کہ پنکی ایرانی نے جیکلین فرنانڈس کو کئی مہنگے تحائف دیے اور چندر شیکھر کی طرف سے دیے گئے پیسے بھی پہنچائے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Bollywood Actrsses on Mumbai Streets:ورک آوٹ سے پہلے بولڈاندازمیں نظرآئیں رکول پریت سنگھ

      یہ بھی پڑھیں:
      Gauri Khan PHOTOS:شاہ رُخ خان کی بیگم گوری خان کی ایسی تصویریں پہلے نہیں دیکھی ہوں گی

      سوکیش چندر شیکھر بالی ووڈ کی کئی ماڈلز اور اداکاراؤں پر 20 کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کر چکا ہے۔ اس وقت وہ جیل میں ہیں۔ جیکلین فرنانڈس ایک فلمی اداکارہ ہیں، انھوں نے کئی فلموں میں کام کیا ہے۔ ان کی فلموں کو خوب پسند کیا گیا ہے۔ وہ سوشل میڈیا پر ایکٹو رہتی ہیں۔ وہ اکثر اپنی ہاٹ اور بولڈ تصاویر اور ویڈیوز شیئر کرتی رہتی ہیں جو بہت تیزی سے وائرل ہو جاتی ہیں۔وہ جلد ہی کئی فلموں میں نظر آنے والی ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: