உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جیکولین فرنینڈس آج دہلی کی عدالت میں ہوں گی پیش، قبل از گرفتاری ضمانت کی درخواست

    ان کی قانونی ٹیم قبل از گرفتاری ضمانت کی درخواست کرے گی۔

    ان کی قانونی ٹیم قبل از گرفتاری ضمانت کی درخواست کرے گی۔

    Jacqueline Fernandez: جیکولین فرنینڈس کو دہلی پولیس کے اقتصادی جرائم ونگ نے گزشتہ ہفتے سات گھنٹے سے زیادہ پوچھ گچھ کی۔ یہ دوسری بار تھا جب انھیں اس کیس میں ان کے مبینہ کردار پر پوچھ گچھ کے لیے طلب کیا گیا تھا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Mumbai | Jammu | Hyderabad | Lucknow
    • Share this:
      اداکارہ جیکولین فرنینڈس (Jacqueline Fernandez) مبینہ مجرم سکیش چندر شیکھر (Sukesh Chandrashekhar) سے منسلک جبری وصولی کیس کے سلسلے میں آج یعنی پیر کی صبح دہلی کی پٹیالہ ہاؤس عدالت میں پیش ہوں گی۔ ذرائع نے بتایا کہ ان کی قانونی ٹیم قبل از گرفتاری ضمانت کی درخواست کرے گی۔ فرنانڈیز خصوصی این آئی اے جج شیلیندر ملک کے سامنے پیش ہوں گی اور چونکہ اس کیس میں ضمنی چارج شیٹ داخل کی گئی ہے، اسی لیے ان کی قانونی ٹیم عدالت میں پیشی کے دوران قبل از گرفتاری ضمانت کی درخواست پیش کرے گی۔

      جیکولین فرنینڈس کو دہلی پولیس کے اقتصادی جرائم ونگ نے گزشتہ ہفتے سات گھنٹے سے زیادہ پوچھ گچھ کی۔ یہ دوسری بار تھا جب انھیں اس کیس میں ان کے مبینہ کردار پر پوچھ گچھ کے لیے طلب کیا گیا تھا۔ اس معاملے کی تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ چندر شیکھر نے فرنانڈیز کے ایجنٹ پرشانت کو ان کی سالگرہ پر موٹرسائیکل دینے کی پیشکش کی تھی لیکن اس نے لینے سے انکار کر دیا۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      تاہم چندر شیکھر نے دو پہیہ گاڑی اور اس کی چابیاں پرشانت کے مقام پر چھوڑ دی، اس سے قبل پولیس نے کہا تھا کہ گاڑی ضبط کر لی گئی۔ چندر شیکھر اس وقت جیل میں ہیں، ان پر بہت سے لوگوں کو دھوکہ دینے کا الزام ہے، جن میں ہائی پروفائل افراد فورٹس ہیلتھ کیئر کے سابق پروموٹر شیوندر موہن سنگھ کی اہلیہ ادیتی سنگھ بھی شامل ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      واضح رہے کہ 17 اگست کو ای ڈی نے چندر شیکھر سے منسلک کروڑوں روپے کے منی لانڈرنگ کیس میں فرنانڈیز کو ملزم کے طور پر نامزد کرتے ہوئے چارج شیٹ داخل کی۔ ای ڈی کے مطابق فرنانڈیز اور ایک اور بالی ووڈ اداکار نورا فتحی (Nora Fatehi) نے ان سے لگژری کاریں اور دیگر مہنگے تحائف وصول کیے تھے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: