உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جل پری والی Black Dressپہن کر نورا فتیحی نے چلی ایسی مستانی چال کے لاکھوں دلوں کی دھڑکن ہوئی تیز!

    نورا فتیحی نے نئے بلیک ڈریس میں چلی ایسی مستانی چال کے لاکھوں دلوں کی دھڑکن ہوئی تیز۔

    نورا فتیحی نے نئے بلیک ڈریس میں چلی ایسی مستانی چال کے لاکھوں دلوں کی دھڑکن ہوئی تیز۔

    نورا فتحی جلد ہی رئیلٹی شو ڈانس دیوانے جونیئر کو جج کرتی نظر آئیں گی۔ ان کا روپ ڈانس دیوانے جونیئر کے سیٹ کے باہر کا ہے۔ نورا کے علاوہ نیتو کپور اور مرزی بھی ڈانس دیوانے جونیئر میں شو کو جج کرتے نظر آئیں گے۔

    • Share this:
      Nora Fatehi New Look: بالی ووڈ کی دلبر نورا فتحی آج کسی تعارف کی محتاج نہیں ہے، نورا نے اپنے کیرئیر میں یہ مقام اپنی محنت سے حاصل کیا ہے۔ نورا فتحی کے چاہنے والوں کی فہرست بہت طویل ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اداکارہ کے انسٹاگرام پر فالوورز کی فہرست کافی لمبی ہے۔ نورا کے گانے سوشل میڈیا پر اکثر ٹرینڈ کرتے رہتے ہیں۔ اسی دوران نورا کی ایک ویڈیو سامنے آئی ہے جو انٹرنیٹ پر کافی وائرل ہو رہی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Lock Upp:پونم پرانے دنوں کو یاد کرکے ہوئی جذباتی،کہا-فیملی کوسوسائٹی سے نکال دیاگیاتھاباہر

      نورا فتحی کے مداح آئے روز ان کی نئی تصاویر اور ویڈیوز شیئر کرتے رہتے ہیں۔ اسی دوران نورا فتحی کی ایک تازہ ویڈیو منظر عام پر آئی ہے جو وومپلا کی ویڈیو ہے اور نورا کے فین کلب نے اسے اپنے انسٹاگرام پر بھی شیئر کیا ہے۔ اس ویڈیو میں نورا فتحی کالے رنگ کا مرمیڈ ڈریس پہنے کیمرے کے سامنے پوز دیتی نظر آ رہی ہیں۔ ویڈیو میں نورا سیاہ لباس پہن کر مستانی چال چلتی نظر آرہی ہیں۔



      یہ بھی پڑھیں:
      ہیمامالینی کودیکھتے ہی ان پرفداہوگئے تھے دھرمیندر،Shashi Kapoorکے سامنے کہہ دی تھی یہ بات

      ویڈیو میں نورا کا دلکش انداز آپ کو بھی اپنا دیوانہ بنا سکتا ہے۔ نورا کا یہ روپ دیکھتے ہی دیکھتے سوشل میڈیا پر وائرل ہو گیا۔ اس لک میں نورا کی کئی تصاویر بھی سامنے آ چکی ہیں، جنہیں مداحوں نے بے حد پسند کیا ہے۔ نورا کی اس ویڈیو کو ہزاروں بار دیکھا جا چکا ہے۔ آپ کو بتادیں کہ نورا فتحی جلد ہی رئیلٹی شو ڈانس دیوانے جونیئر کو جج کرتی نظر آئیں گی۔ ان کا روپ ڈانس دیوانے جونیئر کے سیٹ کے باہر کا ہے۔ نورا کے علاوہ نیتو کپور اور مرزی بھی ڈانس دیوانے جونیئر میں شو کو جج کرتے نظر آئیں گے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: