உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Pakistani Actresses On Alia Bhatt:’میں پارسل نہیں ہوں‘عالیہ بھٹ کے بیان پر پاکستانی اداکاراؤں کا آیا ری ایکشن

    پدرانہ سوچ پر عالیہ بھٹ نے ظاہر کی ناراضگی۔

    پدرانہ سوچ پر عالیہ بھٹ نے ظاہر کی ناراضگی۔

    Pakistani Actress On Alia Bhatt Pregnancy: عالیہ بھٹ نے پوسٹ کرتے ہوئے لکھا تھا کہ ’ہم اب بھی ان لوگوں کے درمیان رہتے ہیں جن کے ذہن میں ایسے خیالات آتے ہیں۔ ہم اب بھی ایک پدرانہ دنیا میں رہتے ہیں۔

    • Share this:
      Pakistani Actress On Alia Bhatt Pregnancy: بالی ووڈ اداکارہ عالیہ بھٹ(Alia Bhatt) نے حال ہی میں اعلان کیا کہ وہ ماں بننے والی ہیں۔ حمل کے اعلان کے بعد ایک میڈیا رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ عالیہ اپنی ہالی ووڈ ڈیبیو فلم 'ہارٹ آف اسٹون' (Heart Of Stone)اور 'راکی اور رانی کی پریم کہانی'(Rocky Aur Rani Ki Prem Kahani) کی شوٹنگ جولائی تک پوری کرلیں گی اور پھر عالیہ آرام کریں گی۔ رپورٹ میں بھی یہ کہا گیا تھا کہ، شوہر رنبیر کپور(Ranbir Kapoor) عالیہ کو یو کے سے لینے جائیں گے۔ اس پر ایکٹریس نے اپنا شدید ردعمل ظاہر کیا تھا۔

      عالیہ بھٹ نے اس طرح کی خبروں پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ پارسل نہیں ہیں، جو کوئی انہیں لینے جائے گا۔ عالیہ کی اس پوسٹ پر مشہور شخصیات سے لے کر پاکستانی اداکارائیں بھی اپنے ردعمل کا اظہار کر رہی ہیں۔ زارا نور عباس صدیقی نے کیپشن میں لکھا، ’’میں نے سوچا، صرف پاکستان ہی ایسا سوچتا ہے، خاص طور پر جب برانڈز مجھے چھوڑنا چاہتے ہیں، جب انہیں پتہ چلتا کہ میں حاملہ ہوں۔ حاملہ ہونا اور اداکارہ ہونا معاشرہ کو یہ سوچنے پر مجبور کرتا ہے کہ اب آپ کام کے لیے اچھے نہیں ہیں۔ ٹھیک ہے، اندازہ لگائیں، خواتین ہر چیز اور کسی بھی چیز کے لیے کافی اچھی ہیں۔ اب وقت آ گیا ہے کہ تاناشاہ اسے محسوس کریں۔ ہمیں کسی پدرانہ نظام کے سامنے اپنی مادریت اور قابلیت کو ثابت کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔‘

      یہ بھی پڑھیں:
      Bhojpuri news:پرینکا سنگھ کے ساتھPawan Singhنے چلایا سُروں کا جادو، ایکٹر ہوئے بے قابو

      یہ بھی پڑھیں:
      کیاخطروں کے کھلاڑی میں نہیں ہوگیShivangi Joshiکی انٹری؟اداکارہ کے پوسٹ سے لگ رہے اندازے

      اس کے ساتھ ہی دورافشاں سلیم(Durefishan Saleem) نے بھی عالیہ کے بیان پر رد عمل کا اظہار کیا ہے اور اداکارہ کی پوسٹ کو دوبارہ شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ہم شادی کر سکتے ہیں/بچے پیدا کر سکتے ہیں۔ شادی زندگی کا حصہ ہے پڑاؤ نہیں۔ خواتین کو یہ بتانا بند کریں کہ ان کے کیریئر کے مقاصد اس سے میل نہیں کھاتے ہیں۔‘ آپ کو بتادیں کہ عالیہ بھٹ نے پوسٹ کرتے ہوئے لکھا تھا کہ ’ہم اب بھی ان لوگوں کے درمیان رہتے ہیں جن کے ذہن میں ایسے خیالات آتے ہیں۔ ہم اب بھی ایک پدرانہ دنیا میں رہتے ہیں۔ کچھ بھی معطل نہیں ہو رہا ہے۔ کوئی کسی کو پک کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ میں ایک عورت ہوں، پارسل نہیں ہوں۔ آپ کو ڈاکٹر کے سرٹیفیکیشن کی ضرورت ہے، یہ 2022 ہے، کیا ہم اس سے نکل سکتے ہیں؟ کیا ہم یہ قدیم سوچ سے نکل سکتے ہیں! کیا اب آپ مجھے معاف کر سکتے ہیں، میرا شاٹ ریڈی ہے۔‘
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: