உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Sapna Chaudhary New Song:سپنا کا نیا گانا’چھورا میری جان سے‘مچارہا ہے دھوم

    سپنا چودھری کا نیا گانا بنا انٹرنیٹ سینسیشن۔

    سپنا چودھری کا نیا گانا بنا انٹرنیٹ سینسیشن۔

    Sapna Chaudhary New Song: سپنا چودھری نے اپنے انسٹاگرام پیج پر اس گانے کے بارے میں معلومات دی ہیں اور اس کا ٹیزر شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے- 'پیار حاصل کرنے سے بہتر ہوتا ہے، وہ سفر جب آپ کسی کے ہوچکے ہو اور اسے پتہ بھی نہیں ہوتا،

    • Share this:
      Sapna Chaudhary New Song:سپنا چودھری آج انڈسٹری میں کسی شناخت کی محتاج نہیں ہے۔ سپنا اپنے دیسی ڈانس اسٹائل سے مداحوں کے دلوں پر راج کرتی ہیں۔ سپنا چودھری کے مداحوں کی تعداد بھی لاکھوں میں ہے، یہی وجہ ہے کہ سپنا کی نئی ویڈیوز اور تصاویر آئے روز وائرل ہوتی رہتی ہیں۔ ایسے میں، سپنا چودھری کا نیا گانا ریلیز ہوگیا ہے۔ سپنا کے اس تازہ ترین ہریانوی گانے کا ٹائٹل 'چھورا میری جان سے' ہے-



      سپنا چودھری کا نیا ہریانوی گانا 'چھورا میری جان سے' ریلیز ہوتے ہی دھمال مچا رہا ہے۔ اس گانے میں سپنا ایک بار پھر سوٹ سلوار پہنے اپنے دیسی انداز میں نظر آ رہی ہیں۔ دیسی کوئن کا یہ انداز پہلے ہی ان کے مداحوں کے دل موہ چکا ہے۔ اب جب ان کا یہ گانا ریلیز ہوا تو ریلیز ہوتے ہی انٹرنیٹ پر وائرل ہو گیا ہے۔

      تازہ ترین ہریانوی گانے 'چھورا میری جان سے' میں، سپنا چودھری ایک چھورے کے پیار میں باوری نظر آرہی ہیں اور پورے گانے میں صرف آکاش کھتری پر نظریں جمائے ہوئے ہیں۔ اوپر سے سپنا کا یہ دیسی روپ ان کے مداحوں میں کریز پیدا کر رہا ہے۔ دیکھتے ہی دیکھتے سپنا چودھری کا یہ گانا انٹرنیٹ پر چھا گیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Razia Sultan: کمال امروہی کا ڈریم پروجیکٹ تھی’رضیہ سلطان‘،کروڑوں کا تھا بجٹ لیکن ۔۔۔

      یہ بھی پڑھیں:
      وکی کوشل کے بھائی کی Girl Friend ہے بے حد خوبصورت، اس سابقCMسے ہے گہرا رشتہ

      سپنا چودھری نے اپنے انسٹاگرام پیج پر اس گانے کے بارے میں معلومات دی ہیں اور اس کا ٹیزر شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے- 'پیار حاصل کرنے سے بہتر ہوتا ہے، وہ سفر جب آپ کسی کے ہوچکے ہو اور اسے پتہ بھی نہیں ہوتا، ایسے ہی میٹھے خوشنما احساس کی کہانی ہے یہ گیت 'چھورا میری جان سے'... ایکٹریس نے آگے لکھا ہے کہ ’امید ہے آپ کو گانا اچھا لگے گا اور باقی گانوں کی طرح آپ بھرپور پیار اور آشیرواد دیں گے۔۔۔‘
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: