உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    " واجپئی کی یاد میں شاہ رخ خان نے لکھا جذباتی پیغام ، کہا ۔ " لو یو باپ جی

    شاہ رخ خا ن نے لکھا ، "دہلی میں میرے والد مجھے واجپئی کی ہر تقریر سننے کیلئے اپنے ساتھ لے جاتے تھے۔مجھے ان سے ملنے کا موقع ملا اور ہم نے کویتا فلم اور سیاست کے بارے میں بات چیت کی۔ انہیں گھر پر "باپ جی " کہا جاتا تھا۔

    شاہ رخ خا ن نے لکھا ، "دہلی میں میرے والد مجھے واجپئی کی ہر تقریر سننے کیلئے اپنے ساتھ لے جاتے تھے۔مجھے ان سے ملنے کا موقع ملا اور ہم نے کویتا فلم اور سیاست کے بارے میں بات چیت کی۔ انہیں گھر پر "باپ جی " کہا جاتا تھا۔

    شاہ رخ خا ن نے لکھا ، "دہلی میں میرے والد مجھے واجپئی کی ہر تقریر سننے کیلئے اپنے ساتھ لے جاتے تھے۔مجھے ان سے ملنے کا موقع ملا اور ہم نے کویتا فلم اور سیاست کے بارے میں بات چیت کی۔ انہیں گھر پر "باپ جی " کہا جاتا تھا۔

    • Share this:
      سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپئی کے انتقال کے بعد ان کی آخری رسوم کی تیاری شروع کر دی گئی ہے۔ سیاست ، فلم کھیل دنیا کے ساتھ پورا ملک ان کے انتقال سے گہرے غم میں ہے۔ پر مشکل حالات اور چیلنجز کو قبول کرنے والے اٹل جی کے جسد خاکی کو دیکھنے کیلئے شام سے ہی ان کے گھر لوگوں کی بھاری بھیڑ لگی ہوئی ہے۔ بالی ووڈ کے کئی اداکاروں نے ٹویٹ کر کے اپنے غم کا اظہار کیا ہے۔ اسی پہر میں شاہ رخ خان نے ٹویٹ کر کے غم ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ آج ملک نے ایک والد جیسا شخص کھو دیا۔

      شاہ رخ خا ن نے لکھا ، "دہلی میں میرے والد مجھے واجپئی کی ہر تقریر سننے کیلئے اپنے ساتھ لے جاتے تھے۔مجھے ان سے ملنے کا موقع ملا اور ہم نے کویتا فلم اور سیاست کے بارے میں بات چیت کی۔ انہیں گھر پر "باپ جی " کہا جاتا تھا۔ مجھے ان کی ایک کویتا کو پردے پر اتارنے کا بھی موقع ملا تھا۔ نجی طور پر اگر میں کہوں تو میں نے اپنے بچپن کا ایک حصہ سیکھنے  ، مسکرانے اور کویتاؤں کی یادوں میں کھو دیا ہے"۔

      شاہ رخ خان نے آگے لکھا ، "میں خود کو خوش قسمت مانتا ہوں کہ انہوں نے میری زندگی کو حوصلہ بخشا ۔ خدا ان کی روح کو امن دے"۔

      اس کے ساتھ ہی شاہ ر خ  خان نے اٹل جی کی کویتا  " کیا کھویا کیا پایا "کا لنک بھی شیئر کیا ہے جس میں جگجیت سنگھ نے اپنی آواز دی تھی۔

      First published: