உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

     وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر لگایا ہندو فوبیا کا الزام، کہا- مشکل لڑائی میں دیں میرا ساتھ

    ’دی کشمیر فائلس‘ کے ڈائریکٹر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا ہے۔ وویک اگنی ہوتری آکسفورڈ یونین کے انسانی پروگرام یاترا کو خطاب کرنے والے تھے، لیکن پروگرام کے مقررہ وقت سے کچھ گھنٹے پہلے اسے منسوخ کردیا گیا، جس کو لے کر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا۔

    ’دی کشمیر فائلس‘ کے ڈائریکٹر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا ہے۔ وویک اگنی ہوتری آکسفورڈ یونین کے انسانی پروگرام یاترا کو خطاب کرنے والے تھے، لیکن پروگرام کے مقررہ وقت سے کچھ گھنٹے پہلے اسے منسوخ کردیا گیا، جس کو لے کر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا۔

    ’دی کشمیر فائلس‘ کے ڈائریکٹر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا ہے۔ وویک اگنی ہوتری آکسفورڈ یونین کے انسانی پروگرام یاترا کو خطاب کرنے والے تھے، لیکن پروگرام کے مقررہ وقت سے کچھ گھنٹے پہلے اسے منسوخ کردیا گیا، جس کو لے کر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا۔

    • Share this:
      نئی دہلی: ’دی کشمیر فائلس‘ کے ڈائریکٹر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا ہے۔ وویک اگنی ہوتری آکسفورڈ یونین کے انسانی پروگرام یاترا کو خطاب کرنے والے تھے، لیکن پروگرام کے مقررہ وقت سے کچھ گھنٹے پہلے اسے منسوخ کردیا گیا، جس کو لے کر وویک اگنی ہوتری نے آکسفورڈ یونین پر ہندو فوبیا کا الزام لگایا۔

      وویک اگنی ہوتری نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ٹوئٹر پر ایک ویڈیو شیئر کرکے آکسفورڈ یونین کی تنقید کی۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے ٹوئٹ میں لکھا کہ ہندو فوبک آکسفورڈ یونین میں ایک اور ہندو آواز پر لگام لگایا گیا ہے۔ انہوں نے مجھے منسوخ کردیا ہے۔ حقیقت میں انہوں نے ہندوؤں کا قتل عام اور ہندو طلبا کو منسوخ کردیا، جو آکسفورڈ یونیورسٹی میں اقلیت ہیں۔ چیئرمین ایک پاکستانی ہے۔ برائے مہربانی اس سب سے مشکل لڑائی میں مجھے شیئر کریں اور میری حمایت کریں۔



      وویک اگنی ہوتری نے کہا کہ کچھ گھنٹے پہلے میرا پروگرام منسوخ کردیا گیا۔ انہوں نے مجھ سے پوچھے بغیر پروگرام کو یکم جولائی کے لئے دوبارہ شیڈول کردیا۔ یکم جولائی کو جب کوئی طالب علم نہیں ہوگا وہاں پر تو پھر پروگرام کرنے کا کوئی مطلب نہیں ہے۔

      انہوں نے مزید کہا کہ کیا وہ مجھے رد کر رہے ہیں؟ وہ ہندوستان کی جمہوری طور پر منتخب کی گئی حکومت، خاص طور پر نریندر مودی کو منسوخ کرنا چاہتے ہیں۔ وہ ہمیں پھانسی وادی اور اسلامو فوبک کے طور پر لیبل کرنا چاہتے ہیں۔ جیسے ہزاروں کشمیری ہندووں کو مارنا ہندو فوبیا نہیں تھا، لیکن سچائی پر فلم اسلامو فوبک ہے۔ وہ مجھے منسوخ نہیں کر رہے ہیں، وہ قتل عام اور ہندووں کو منسوخ کر رہے ہیں۔ آکسفورڈ یونیورسٹی میں ہندو اقلیت ہیں اور یہ اقلیتوں کا استحصال ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: