உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرپٹو سے ہوئی کمائی پر 30 فیصد کا ٹیکس! جانئے اس نئے ٹیکس ضوابط کے بارے میں سب کچھ

    مرکزی بجٹ 2022 (Union Budget 2022) سے صاف ہوگیا ہے کہ ڈیجیٹل کرنسیز پر کس طریقے سے ٹیکس (Tax on Digital Currencies) لگایا جائے گا۔

    مرکزی بجٹ 2022 (Union Budget 2022) سے صاف ہوگیا ہے کہ ڈیجیٹل کرنسیز پر کس طریقے سے ٹیکس (Tax on Digital Currencies) لگایا جائے گا۔

    مرکزی بجٹ 2022 (Union Budget 2022) سے صاف ہوگیا ہے کہ ڈیجیٹل کرنسیز پر کس طریقے سے ٹیکس (Tax on Digital Currencies) لگایا جائے گا۔

    • Share this:
      نئی دہلی: مرکزی بجٹ 2022 (Union Budget 2022) سے صاف ہوگیا ہے کہ ڈیجیٹل کرنسیز پر کس طریقے سے ٹیکس (Tax on Digital Currencies) لگایا جائے گا۔ منگل کو وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن (Finance minister Nirmala Sitharaman) نے بجٹ پیش کرتے ہوئے کرپٹو کرنسی سرمایہ کاروں کے لئے ایک نئے ٹیکس فریم کا اعلان کیا۔

      مرکزی بجٹ 2022 (Union Budget 2022) میں تجویز پیش کی گئی ہے کہ کسی بھی ورچوئل یا کرپٹو کرنسی جائیداد (Virtual or Cryptocurrency Asset) کی منتقلی (Transfer) پر 30 فیصد ٹیکس لگایا جائے گا۔ وزیر خزانہ نے بجٹ 2022 میں کہا کہ حصول کے اخراجات کی لاگت (Cost of Acquisition) کو چھوڑ کر کسی بھی کٹوتی کی اجازت نہیں دی جائے گی اور لین دین میں کسی بھی نقصان کو کیری فارورڈ کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

      بجٹ کے بعد ایک پریس کانفرنس (FM Sitharaman PC) کو خطاب کرتے ہوئے وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے کرپٹوکرنسی اور اس پر ٹیکس کو لے کر صورتحال کچھ اور واضح کیں۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی کرنسی کو تب تک کرنسی نہین مانا جاسکتا ہے، جب تک کہ اسے سینٹرل بینک نے جاری نہیں کیا ہو۔ سینٹرل کے فریم ورک کے باہر جو بھی کرپٹوکرنسی ہیں، وہ کرنسی نہیں ہیں۔

      حکومت کر پائے گی اچھے سے نگرانی

      اس پر شاردل امرچند منگل داس اینڈ کمپنی کے پارٹنر امت سنگھانیا نے کہا کہ ڈیجیٹل کرنسیز پر ٹیکسیشن سے صورتحال کچھ واضح ہوئی ہے۔ پہلی نظر میں ایسا لگتا ہے کہ ڈیجیٹل کرنسیز پر اسکل بنیاد (Gross Basis) پر 30 فیصد فلیٹ ٹیکس لگایا جائے گا۔ سنگھانیا نے بتایا کہ اس کے علاوہ، ایک یقینی سرحد سے زیادہ لین دین کے لئے ایک فیصد کی شرح سے کرپٹو ایسیٹ کی منتقلی کے لئے ٹی ڈی ایس لگایا جائے گا۔ وزیر خزانہ نے یہ بھی اعلان کیا کہ کرپٹو کو تحفہ کے طور پر حاصل کرنے والے کو ٹیکس چکانا ہوگا۔ سنگھانیا نے کہا، ’کرپٹو-ٹرانسفر پر ٹی ڈی ایس کی شروعات حکومت کو کرپٹو لین دین کی بہتر نگرانی کرنے کا اہل بنائے گی۔

      کرپٹو انڈسٹری کے لئے بہتر

      WazirX کے بانی اور سی ای او نشچل شیٹی نے کہا، ’ٹیکس کی وضاحت ایک خوش آئند قدم ہے۔ کل ملاکر یہ دیکھنا ایک بڑی راحت کی بات ہےکہ ہماری حکومت انوویشن کی سمت میں آگے بڑھنے کے لئے پرگتی شیل رخ اپنا رہی ہے۔ ٹیکسیشن لاکر، حکومت کافی حد تک کرپٹو انڈسٹری کو قانونی بناتی ہے۔ بیشتر لوگ، خصوصی طور پر کارپوریٹ، جو غیر یقینی صورتحال کی وجہ سے، وہ اب کرپٹو میں حصہ لے سکیں گے۔ مجموعی طور پر یہ صنعت کے لیے ایک مثبت قدم ہے‘۔

      کرپٹو پر ٹیکس ہائی، لیکن مثبت

      ZebPay کے سی ای او اویناش شیکھر نے کہا، ’ورچوئل ڈیجیٹل ایسسٹس پر ٹیکس لگانے سے سرمایہ کاروں اور ایکسچینجوں سمیت پورے ایکو سسٹم کو آگے کی راہ دکھنے لگی ہے۔ حالانکہ ورچوئل ڈیجیٹل ایسسٹس سے آمدنی پر 30 فیصد ٹیکس کافی زیادہ ہے، لیکن یہ ایک منفی قدم ہے، کیونکہ یہ کرپٹو کو قانونی بناتا ہے اور ملک میں سبھی شیئر ہولڈروں میں کرپٹو اور این ایف ٹی کی قبولیت کے لیے ایک پُرامید جذبات کی نشاندہی کرتا ہے۔ حکومت نے گزشتہ فروری سے آج تک کرپٹو کے تئیں اپنے رخ میں ایک لمبا سفر طے کیا ہے اور ہمیں یقین ہے کہ یہ ویب 3.0 میں ہندوستان کے لئے ترقی اور اینوویشن کے ایک نئے دور کا آغاز کریں گے۔

      واضح رہے کہ گزشتہ تین مہینوں سے کرپٹو کرنسی کو لے کر سرمایہ کار اور کمپنیاں (ایکسچینج) مخمصے کا شکار تھیں کہ حکومت اس پر کیا ایکشن لے گی۔ حکومت نے اسے ریگولیٹ کرنے کی سمت میں قدم بڑھائے ہیں۔ واضح رہے کہ کرپٹوکرنسی نے گزشتہ کچھ سالوں میں ہندوستان میں بے پناہ مقبولیت حاصل کی ہے۔ 10 کروڑ سے زیادہ کرپٹو کرنسی سرمایہ کاروں کے ساتھ، ہندوستان ڈیجیٹل ٹوکن کا بھی بڑا بازار ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: