ہوم » نیوز » Explained

Explained: جانئے آن لائن ٹرولنگ کیا ہے اور متاثرہ شخص کے پاس کیا کیا قانونی راستے موجود ہیں

ٹرولنگ کا متاثرہ شخص کی ذہنی ، جذباتی اور جسمانی کیفیت بڑا اثر پڑتا ہے ۔ ٹرولنگ کا حقیقی امور سے توجہ ہٹانے کیلئے بھی استعمال کیا جاسکتا ہے ۔

  • Share this:
Explained: جانئے آن لائن ٹرولنگ کیا ہے اور متاثرہ شخص کے پاس کیا کیا قانونی راستے موجود ہیں
جانئے آن لائن ٹرولنگ کیا ہے اور متاثرہ شخص کے پاس کیا کیا قانونی راستے موجود ہیں ۔ تصویر : Shutterstock

ٹرولنگ کیا ہے ؟


ٹرولنگ آن لائن گالی گلوچ کی انتہائی بدترین شکل ہے ۔ ٹرولس ہراساں کرنے اور بلیئنگ جیسے ہتھکنڈے استعمال کرتے ہیں ۔ جان بوجھ کرآن لائن مجرمانہ اور اشتعال انگیز مواد پوسٹ کرتے ہیں ، جو ہندوستان میں لاگو قوانین کے اندر ممنوع ہے ۔


ٹرولس کون ہیں ؟


ٹرول وہ شخص ہوتا ہے جو اشتعال انگیز لڑائی شروع کرتا ہے یا جان بوجھ کر انٹرنیٹ پر لوگوں کو پریشان کرتا ہے۔

ٹرولس کس کو نشانہ بناتے ہیں ؟

کوئی بھی اور ہر ایک ، یہ فرد یا لوگوں کا گروپ ہوسکتا ہے۔ خواتین انتہائی آسان نشانہ ہوتی ہیں ۔

ٹرولنگ کیوں نقصان دہ ہے ؟

ٹرولنگ کا نشانہ پر لئے گئے شخص کی ذہنی ، جذباتی اور جسمانی کیفیت بڑا اثر پڑتا ہے ۔ ٹرولنگ کا حقیقی امور سے توجہ ہٹانے کیلئے بھی استعمال کیا جاسکتا ہے ۔ سخت ثقافی اور معاشرتی رسم و رواج اور گائیڈلائنس کو انفورس کرنے اور اثر انداز ہونے کیلئے بھی ٹرولس کا استعمال کیا جاتا ہے ، جس کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہوتی ہے ۔ یہ آف لائن کارروائی کا باعث بھی بن سکتا ہے ۔

یہ ایک پریشانی کیوں ہے ؟

ٹرولس کو عام طور پر قابل اعتراض مواد آن لائن پوسٹ کرنے کیلئے جوڑ توڑ کے ہنر سکھائے جاتے ہیں ۔ اس عمل میں سوشل میڈیا کے ٹرینڈ جیسے ٹویٹر ٹرینڈ کسی شخص یا گروہوں کے خلاف ہیش ٹیگ کا استعمال کرکے بنائے جاتے ہیں ۔

ٹرلنگ کا نشانہ بننے والوں کے پاس کیا کیا قانونی راستے ہیں ؟

ٹرولنگ کا نشانہ بننے والے ان دفعات کے تحت کارروائی کا مطالبہ کرسکتے ہیں جو مجرمانہ دھمکیوں ، جنسی ہراسانی ، ہتک عزت ، شہوت نظری ، آن لائن تعاقب اور فحش مواد سے متعلق ہیں ۔ تاہم قانونی حل کے حصول کا بوجھ نشانہ بننے والے پر پڑتا ہے ۔

تعزیرات ہند 1860 ٹرولنگ یا بلیئنگ کی تعریف نہیں کرتا ہے۔ تاہم انفارمیشن ٹیکنالوجی ایکٹ 2000 ( آئی ٹی ایکٹ) کے ساتھ پینل کوڈ کی مختلف شقوں کا استعمال سائبر بلیئنگ اور ٹرولس سے لڑنے کے لئے کیا جاسکتا ہے ۔

یہ قانونی راستے کتنے موثر ہیں؟

ٹرولس کو سزا دینا مشکل کام ہے کیوں کہ ٹرولس اکثر گمنامی میں رہتے ہیں جس کی وجہ سے قانونی کارروائی کیلئے عرضی کو منظوری حاصل کرنے میں مشکل پیش آتی ہے۔ تاہم ، نفرت انگیز تقریر ، دھمکیاں ، عصمت دری کی دھمکیاں ، تشدد پر اکسانا یہ سب قابل مواخذہ عمل ہیں ۔

کیا کسی پر ہندوستان میں ٹرولنگ کے الزام میں مقدمہ چلایا گیا ہے؟

جی ہاں ، مگر ایسا بہت کم ہی ہوا ہے ۔ ٹرولنگ کافی زیادہ پرکشش ہے اور گروپ حملوں اور گمنام کیریکٹر کی ہوتی ہے ۔ مثال کے طور پر ایک بالی ووڈ گلوکار کو 2016 میں صحافی کو آن لائن گالی دینے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا اور بعد میں اس کا ٹویٹر اکاؤنٹ معطل ہوگیا تھا ۔

ہمیں کیوں پروا کرنی چاہئے؟ اور ہم کس طرح مدد کرسکتے ہیں؟

ٹرولنگ امن اور ہم آہنگی میں خلل ڈالنے کا باعث بن سکتی ہے جیسے نفرت انگیز تقریر۔ یہ لوگوں کی ذہنیت کو زہر آلودہ بنادیتی ہے ۔ یہ خوف کا ایک کلچر پیدا کرتی ہے۔ یہاں تک کہ اگر ہم ٹرولنگ کا نشانہ بننے والوں کے نظریہ سے متفق نہیں ہیں ، تو بھی صرف حمایت کا اعلان کرکے مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔

نوٹ : پراچی مشرا سپریم کورٹ کی وکیل ہیں ۔ 
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Mar 22, 2021 04:06 PM IST