உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Explained: ’قانونی طور پر لڑ کر عوامی حمایت حاصل کریں‘ عمران خان کی حکمت عملی کیا ہے؟

    Youtube Video

    دریں اثنا پاکستانی حکومت نے جمعہ کے روز لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان کی سربراہی میں مبینہ غیر ملکی سازش کی تحقیقات کے لیے ایک کمیشن قائم کیا۔ وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بتایا کہ کمیشن کی تشکیل کا فیصلہ خان کی زیر صدارت کابینہ کے اجلاس میں کیا گیا۔

    • Share this:
      ایک اعلیٰ معاون نے CNN-News18 کو بتایا کہ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان (Imran Khan) لوگوں کو اعتماد میں لے کر لڑنے کا ارادہ رکھتے ہیں، کیونکہ انہیں 9 اپریل کو عدم اعتماد کے ووٹ کا سامنا ہے۔ معاون نے کہا کہ عمران خان قانونی طور پر اور رائے عامہ کی عدالت میں لڑیں گے۔ پارلیمنٹ کا اجلاس ان کیمرہ ہوگا اور خان کو لگتا ہے کہ ہر چیز کو بے نقاب کرنے کے لیے یہ مناسب جگہ ہوگی۔

      ذرائع کے مطابق عمران خان سے توقع ہے کہ وہ ’دھمکی آمیز خط‘ کی وضاحت کریں گے، جو ان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے پیچھے مبینہ ’غیر ملکی سازش‘ کو بے نقاب کرسکتا ہے۔CNN-News18 نے پہلے اطلاع دی ہے کہ خان کا استعفیٰ دینے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے اور وہ جنگ لڑیں گے۔

      دریں اثنا پاکستانی حکومت نے جمعہ کے روز لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان کی سربراہی میں مبینہ غیر ملکی سازش کی تحقیقات کے لیے ایک کمیشن قائم کیا۔ وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بتایا کہ کمیشن کی تشکیل کا فیصلہ خان کی زیر صدارت کابینہ کے اجلاس میں کیا گیا۔

      انہوں نے کہا کہ کمیشن بنانے کا فیصلہ سپریم کورٹ کی جانب سے قومی اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کو مسترد کرنے کے متنازع اقدام کو کالعدم قرار دینے کے ایک دن بعد لیا گیا ہے۔ ہمارے پاس آٹھ اختلافی صوبائی قانون سازوں کے غیر ملکی معززین سے رابطے میں ہونے کے ثبوت ہیں۔ کمیشن مقامی ہینڈلرز اور حکومت کی تبدیلی کے درمیان تعلق کو دیکھے گا۔ عمران خان کو قومی سلامتی کے خطرے کا حوالہ دیتے ہوئے کرکٹر سے سیاست دان بننے کے لیے ایک بڑا دھچکا لگا ہے۔

      ۔ 5-0 کے تاریخی فیصلے میں چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے فیصلہ دیا کہ ڈپٹی سپیکر کا فیصلہ آئین اور قانون کے منافی ہے اور اس کا کوئی قانونی اثر نہیں ہے، اور اسی کے ذریعے اسے ASIDE مقرر کیا جاتا ہے۔ جیو نیوز نے رپورٹ کیا کہ سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق تحریک عدم اعتماد پر قومی اسمبلی کا اجلاس ہفتہ کی صبح 10:30 بجے شروع ہوگا۔ اپوزیشن جماعتوں کو خان ​​کو ہٹانے کے لیے 342 رکنی ایوان میں 172 ارکان کی ضرورت ہے۔

      Ramazan 2022: رمضان المبارک میں سحری و افطار کے کھانے میں رکھیں ان چیزوں کا خاص خیال  

      واضح رہے کہ عمران خان 2018 میں 'نیا پاکستان' بنانے کے وعدوں کے ساتھ اقتدار میں آئے، لیکن اشیاء کی قیمتوں کو کنٹرول میں رکھنے کے بنیادی مسئلے کو حل کرنے میں ناکام رہے۔ قومی اسمبلی کی موجودہ مدت اگست 2023 میں ختم ہونے والی تھی۔

      JEE Main 2022 exam dates: جے ای ای مین امتحان کی نئی تاریخ کا اعلان، ایسا ہوگا پورا شیڈول

      آج تک کسی پاکستانی وزیر اعظم نے اپنی پانچ سالہ مدت پوری نہیں کی۔ خان کو پاکستان کی تاریخ کے پہلے وزیر اعظم ہونے کا امکان ہے جسے تحریک عدم اعتماد میں ووٹ دیا جائے گا۔

      پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے جمعہ کو قومی اسمبلی کو تحلیل کرنے کے سپریم کورٹ کے فیصلے پر ناراضگی کا اظہار کیا اور صدر عارف علوی کو وزیر اعظم خان کے مشورے کو غیر آئینی قرار دیا۔ قوم سے خطاب میں انہوں نے عدالتی فیصلے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عدالت کو غیر ملکی سازش کا معاملہ کیوں نظر نہیں آیا، عدالت کو ثبوت دیکھنا چاہیے تھے۔

      انہوں نے مزید کہا کہ ملک میں کھلے عام ممبران پارلیمنٹ کی  خرید و فروخت ہو رہی ہے۔ سپریم کورٹ کو اس پر غور کرنا چاہیے تھا۔ اپوزیشن کے لوگ بکے ہوئے ہیں۔ اپنے خطاب کے دوران عمران خان نے ایک بار پھر بھارت کی تعریف کی۔ وہ ہندوستان کے نام پر وہ جذباتی ہوگئے اور کہا کہ ہندوستان میں انہیں بہت عزت ملی ہے۔ ہندوستان کو ایک خوددار ملک بتاتے ہوئے انہوں نے ہندستان کی آزاد خارجہ پالیسی کو بھی سراہا۔

      عمران نے امریکہ کو بنایا نشانہ

      عمران خان نے ایک بار پھر امریکہ پر حکومت گرانے کا الزام لگایا۔ ان کا کہنا تھا کہ 'چار ماہ پہلے امریکہ نے سازش رچنا شروع کی تھی، امریکہ نے ہمارے سفیر کو دھمکی دی، امریکہ نے مجھے ہٹانے کا کہا، میڈیا میں بھی پیسہ چل رہا تھا، میڈیا کو شرم نہیں آئی، ہم نے آہستہ آہستہ بات کی، ہمیں معلوم ہوا کہ امریکہ کے سفارتکار ہمارے لیڈروں سے مل رہے ہیں۔

      عمران نے کہا کہ میں کسی کی کٹھ پتلی نہیں ہوں
      انہوں نے کہا کہ ہماری حکومت گرانے کا مکمل  پلان بنا ہوا تھا، میرا قصور یہ ہے کہ میں باہر سے پیسے لے کر مجھے کوئی کنٹرول نہیں کر سکتا لیکن میں کسی کی کٹھ پتلی نہیں بن سکتا، غیر ملکی بینکوں میں میرا کوئی چوری کا پیسہ نہیں ہے۔ اپوزیشن پیسے کی خاطر ملک کی قربان ی دینے کو تیار ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: