உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    EXPLAINED: روس ۔ یوکرین جنگ میں Zaporizhzhia نیوکلیئر پلانٹ پرحملےکتنےہوں گےخطرناک؟ کیاپورایوکرین ہوجائےگاخاکستر؟

    Youtube Video

    اوبامہ انتظامیہ کے دوران نیشنل سیکورٹی کونسل میں ہتھیاروں کے کنٹرول اور عدم پھیلاؤ کے سینئر ڈائریکٹر کے طور پر خدمات انجام دینے والے جون وولفسٹل نے کہا کہ پلانٹ کے ری ایکٹرز میں کنکریٹ کے موٹے کنٹینمنٹ گنبد ہیں، جو انہیں ٹینکوں اور توپ خانے کی بیرونی آگ سے محفوظ رکھنے میں معاون ہوسکتے ہیں۔ اگر حملوں کی شدت زیادہ ہوتو بربادی کا اندازہ بھی نہیں لگایا جاسکتا۔

    • Share this:
      یوروپ کا سب سے بڑا نیوکلیئر پاور پلانٹ یعنی Zaporizhzhia Nuclear Plant جمعہ 4 مارچ 2022 کے اوائل میں روسی گولہ باری سے متاثر شدید متاثر ہوا۔ جہاں سے آگ کے شعلے بھڑک اٹھے، وہاں تباہی کا خدشہ بڑھ گیا جو 1986 کے چرنوبل پگھلاؤ (Chernobyl meltdown) کی طرح کئی دہائیوں تک پورے وسطی یورپ کو متاثر کر سکتا ہے۔ یوکرین کے حکام کی جانب سے آگ بجھانے کے اعلان کے بعد خدشات ختم ہوگئے اور ری ایکٹر کے کمپارٹمنٹ کو نقصان پہنچنے کے باوجود یونٹ کی حفاظت متاثر نہیں ہوئی۔

      اگرچہ Zaporizhzhia جوہری پلانٹ چرنوبل سے مختلف ڈیزائن کا ہے اور آگ سے محفوظ رہ سکتا ہے۔ لیکن جوہری تحفظ کے ماہرین اور بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی نے خبردار کیا ہے کہ ایسی تنصیبات کے اندر اور اس کے ارد گرد جنگ چھیڑنا انتہائی خطرات کا باعث ہے۔ یوکرین کے ریاستی جوہری ریگولیٹر کی طرف سے اٹھائی جانے والی ایک بڑی تشویش یہ ہے کہ اگر لڑائی سے جوہری پلانٹ کو بجلی کی فراہمی میں خلل پڑتا ہے، تو اسے آپریٹنگ کولنگ سسٹم کو ہنگامی طاقت فراہم کرنے کے لیے کم قابل اعتماد ڈیزل جنریٹر استعمال کرنے پر مجبور کیا جائے گا۔ ان سسٹمز کی ناکامی جاپان کے فوکوشیما پلانٹ جیسی تباہی کا باعث بن سکتی ہے، جب 2011 میں ایک بڑے زلزلے اور سونامی نے کولنگ سسٹم کو تباہ کر دیا تھا، جس سے تین ری ایکٹروں میں پگھلاؤ شروع ہو گیا تھا۔

      یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی (Volodymyr Zelenskyy) نے کہا کہ اس کا نتیجہ بڑے پیمانے پر اور سنگین ہو گا۔ اگر کوئی دھماکہ ہوتا ہے، تو یہ سب کا انجام ہوتا ہے۔ یورپ کے لیے یہ بے نتیجہ اختتام ہوگا۔ انہوں نے آدھی رات کو ایک جذباتی تقریر میں ملکوں سے روس کی قیادت پر پلانٹ کے قریب لڑائی ختم کرنے کے لیے دباؤ ڈالنے کا مطالبہ کیا۔ جوہری پاور اسٹیشن پر تباہی سے یورپ کی موت کے خدشات کا اظہار کیا جارہا ہے۔



      آخر ہوا کیا؟

      اسٹریٹجک بندرگاہی شہر کھیرسن پر قبضہ کرنے کے بعد روسی افواج Zaporizhzhia کے قریب علاقے میں داخل ہوئیں اور جمعرات کو دیر گئے پلانٹ کے لیے راستہ کھولنے کے لیے قریبی شہر Enerhodar پر حملہ کیا۔ یہ فوری طور پر واضح نہیں ہوسکا کہ پاور پلانٹ کو کس طرح نشانہ بنایا گیا، لیکن اینرودر کے میئر دیمیٹرو اورلوف نے کہا کہ ایک روسی فوجیوں کو جوہری تنصیب کی طرف جاتے ہوئے دیکھا گیا تھا اور شہر میں زوردار گولیاں سنی گئیں۔

      Russia Ukraine War: جنگ زدہ یوکرین میں پھنسے جموں و کشمیر کے بہت سے طلباء بحفاظت وطن لوٹے



      بعد ازاں جمعہ کو یوکرائنی حکام نے کہا کہ روس نے جوہری پلانٹ پر قبضہ کر لیا ہے۔ پلانٹ کے ترجمان آندری توز نے یوکرائنی ٹیلی ویژن کو بتایا کہ جمعہ کی صبح گولے براہ راست تنصیب پر گرے اور اس کے چھ ری ایکٹر میں سے ایک کو آگ لگ گئی۔ توز نے کہا کہ ابتدائی طور پر فائر فائٹرز آگ کے قریب نہیں جا سکے کیونکہ ان پر گولی چلائی جا رہی تھی۔

      جمعہ کو یوکرائنی حکام سے بات کرنے کے بعد اقوام متحدہ کے جوہری نگراں ادارے آئی اے ای اے کے ڈائریکٹر جنرل رافیل گروسی نے کہا کہ ری ایکٹر کے ساتھ والی عمارت کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ پلانٹ کے چھ ری ایکٹرز کے تمام حفاظتی نظام بالکل متاثر نہیں ہوئے اور تابکار مواد کا کوئی اخراج نہیں ہوا۔ تاہم آپ تصور کر سکتے ہیں کہ آپریٹر اور ریگولیٹر ہمیں بتا رہے ہیں کہ قدرتی طور پر صورتحال انتہائی کشیدہ اور چیلنجنگ ہے۔

      اس ہفتے کے شروع میں گروسی نے پہلے ہی متنبہ کیا تھا کہ IAEA کو روسی افواج کی طرف سے قریب قریب فوجی آپریشن کرنے پر "شدید تشویش" ہے۔ یہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے کہ مسلح تصادم اور زمین پر Zaporizhzhia نیوکلیئر پاور پلانٹ اور یوکرین کی کسی بھی دوسری جوہری تنصیب کے ارد گرد سرگرمیاں کسی بھی طرح سے ان سہولیات یا ان کے ارد گرد کام کرنے والے لوگوں کو رکاوٹ یا خطرے میں نہیں ڈالتی ہیں۔

      آگے کیا ہوگا؟

      جس ری ایکٹر کو نشانہ بنایا گیا وہ آف لائن تھا، لیکن پھر بھی اس میں انتہائی تابکار ایٹمی ایندھن موجود ہے۔ باقی چھ ری ایکٹرز میں سے چار کو اب آف لائن لے جایا گیا ہے، جس سے صرف ایک کام جاری ہے۔

      UN میں روس پر ہندوستان کے موقف کو ملی فرانس کی حمایت، کہا-دنیا میں معنی رکھتی ہے ہندوستان کی آواز



      اوبامہ انتظامیہ کے دوران نیشنل سیکورٹی کونسل میں ہتھیاروں کے کنٹرول اور عدم پھیلاؤ کے سینئر ڈائریکٹر کے طور پر خدمات انجام دینے والے جون وولفسٹل نے کہا کہ پلانٹ کے ری ایکٹرز میں کنکریٹ کے موٹے کنٹینمنٹ گنبد ہیں، جو انہیں ٹینکوں اور توپ خانے کی بیرونی آگ سے محفوظ رکھنے میں معاون ہوسکتے ہیں۔ اگر حملوں کی شدت زیادہ ہوتو بربادی کا اندازہ بھی نہیں لگایا جاسکتا۔

      ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ نیوکلیئر پاور پلانٹ میں آگ لگنا کبھی بھی اچھی چیز نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نہیں چاہتے کہ ہمارے جوہری پاور پلانٹس حملے کی زد میں آئیں، آگ لگیں اور پہلے جواب دہندگان تک رسائی حاصل کرنے کے قابل نہ ہوں۔

      جوہری تنصیبات پر ایک اور خطرہ وہ تالاب ہیں جہاں ایندھن کی چھڑیوں کو ٹھنڈا کرنے کے لیے رکھا جاتا ہے، جو شیلنگ کے لیے زیادہ خطرناک ہوتے ہیں اور جو تابکار مواد کے اخراج کا سبب بن سکتے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: