اپنا ضلع منتخب کریں۔

    Maharashtra Political Crisis:حکومت گری تو مہاراشٹر میںBJPکے پاس ہیں یہ5راستے، قانون سے لے کر اتحاد تک جانیے سبھی سیاسی متبادل

    Youtube Video

    Maharashtra Political Crisis Latest Update: نومبر 2019 میں، مہاراشٹر میں ٹھاکرے کی قیادت میں این سی پی، کانگریس اور شیو سینا کی مشترکہ حکومت مہا وکاس اگھاڑی قائم ہوئی تھی۔ شیوسینا اور بی جے پی کا پرانا رشتہ ہے۔ دونوں حلیف رہے ہیں، لیکن 2019 میں، بی جے پی ادھو ٹھاکرے کو وزیر اعلیٰ بنانا نہیں چاہتی تھی، جس کے بعد شیو سینا نے بی جے پی سے تعلقات توڑ لیے۔

    • Share this:
      Maharashtra Political Crisis Latest Update:مہاراشٹر میں اگر مہا وکاس اگھاڑی حکومت گر گئی تو نئی سرکار بنانے کے لئے بی جے پی کے پاس کون کون سے ممکنہ راستے ہیں، آئیے دیکھتے ہیں۔

      متبادل-1
      بی جے پی کے پاس پہلے ہی 106 سیٹیں ہیں۔ ایسے میں اگر بی جے پی کو شیوسینا کے 38 باغی ممبران اسمبلی کی حمایت حاصل ہو جاتی ہے اور ریاست کی مختلف چھوٹی پارٹیوں کی حمایت ملتی ہے تو بی جے پی حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کر سکتی ہے۔ ڈیفیکشن ایکٹ ترمیم 2003 کے مطابق شیو سینا کے باغی ایم ایل اے بی جے پی کی حکومت بنانے کے لیے دو طریقوں سے حمایت دے سکتے ہیں۔ سب سے پہلے، شیوسینا سے الگ ہونے والے ایم ایل اے کا الگ گروپ بنا کر، وہ بی جے پی کی حمایت کر کے حکومت بنا سکتے ہیں۔ دوسرا آپشن یہ ہے کہ شیوسینا کے باغی ایم ایل اے اپنے گروپ کو بی جے پی میں ضم کر لیں، حالانکہ ایکناتھ شندے باغی ایم ایل اے کے انضمام سے صاف انکار کرچکے ہیں۔

      متبادل -2
      بی جے پی کے پاس باغی ایم ایل اے کی رکنیت کی منسوخی کے بعد بھی حکومت بنانے کا قانونی راستہ ہے۔ اس کے لیے باغی ایم ایل اے کی رکنیت منسوخ ہونے پر عدالت کا راستہ کھلا ہوا ہے۔ بالکل ایسے ہی معاملے میں سپریم کورٹ، اروناچل پردیش قانون ساز اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکر کے ایم ایل اے کی رکنیت منسوخ کرنے کے 2016 کے فیصلے کو منسوخ کرچکا ہے۔ عدالت نے اس وقت فیصلہ دیا تھا کہ اگر ڈپٹی اسپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد زیر التوا ہے تو وہ اراکین اسمبلی کی رکنیت منسوخ کرنے کا فیصلہ نہیں لے سکتے۔ ایسے میں سپریم کورٹ سے راحت ملنے کے بعد بی جے پی اور شیوسینا کے باغی ایم ایل اے آزاد اور دیگر چھوٹی پارٹیوں کے ساتھ مل کر حکومت بنا سکتے ہیں۔

      متبادل-3
      ایک اور آپشن جو ابھر کر سامنے آرہا ہے وہ یہ ہے کہ بی جے پی اور مشترکہ شیوسینا مل کر حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کریں۔ یہ تب ہی ممکن ہے جب ادھو ٹھاکرے جھک جائیں اور شیو سینا اور شیو سینا کے باغی ایم ایل اے ایک بار پھر اکٹھے ہوجائیں، ایسی صورت حال میں ایک بار پھر شیوسینا کے پاس 54 ایم ایل اے ہوں گے۔ اور پھر بی جے پی اور شیوسینا اکٹھے ہوتے ہیں تو بی جے پی حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کر سکتی ہے۔ اگرچہ ایسا ہونے کے امکانات نہ ہونے کے برابر ہیں لیکن یہ بھی ایک متبادل ہے جسے رد نہیں کیا جاسکتا۔

      متبادل-4
      سیاست امکانات کا کھیل ہے، اس لیے بعض اوقات ناممکن نظر آنے والے فیصلے اور اتحاد دیکھنے کو ملتے ہیں۔ متبادل کے طور پر بی جے پی، این سی پی اور شیو سینا کے باغی ایم ایل اے بھی حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کر سکتے ہیں۔ بی جے پی کے 106 ایم ایل اے ہیں، این سی پی کے پاس 53 ایم ایل اے ہیں، تو وہیں شیو سینا کے 38 باغی ایم ایل اے ہیں۔ تاہم، اس بات کی امید کم ہے کہ این سی پی بی جے پی کا ساتھ دے گی۔

      متبادل-5
      دوسرا آپشن نئی حکومت بنانے کا ہے جو کہ اس وقت ناممکن نظر آتا ہے۔ اگر مہاوکاس اگھاڑی کی حکومت مستعفی ہوجاتی ہے تو نئی حکومت کی تشکیل کے لیے براہ راست گورنر کا کردار شروع ہو جائے گا۔ ایسے میں گورنر بی جے پی کو نئی حکومت بنانے کی دعوت دے سکتے ہیں، کیونکہ بی جے پی ریاست کی سب سے بڑی پارٹی ہے اور پھر بی جے پی اور شیو سینا کے باغی ایم ایل اے مل کر حکومت بنا سکتے ہیں۔ مجموعی طور پر گورنر بھگت سنگھ کوشیاری کا کردار آنے والے وقت میں بہت اہم ہونے والا ہے۔ وہ اس وقت کورونا میں مبتلا ہیں اور ہسپتال سے واپسی کے بعد دوبارہ کام شروع کریں گے۔ اگر کسی بھی حالت میں حکومت بنتی ہے تو اکثریت کا فیصلہ اسمبلی میں ہی لیا جائے گا اور فی الحال بی جے پی اور شیوسینا کے باغیوں کے ساتھ اکثریت کا ہندسہ ہائی دکھائی دے رہا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Explained: دٓل بدل قانون کیاہے؟ کیاپارٹی سے بغاوت کرنےسےکوئی قانونی پکڑنہیں ہوگی؟

      یہ بھی پڑھیں:
      Maharashtra: کیا باغی ممبران اسمبلی کی ختم ہوگی رکنیت؟ شیوسینا کے وکیل نے دی یہ وارننگ

      2019 میں ٹھاکرے کی قیادت میں بنی تھی حکومت
      نومبر 2019 میں، مہاراشٹر میں ٹھاکرے کی قیادت میں این سی پی، کانگریس اور شیو سینا کی مشترکہ حکومت مہا وکاس اگھاڑی قائم ہوئی تھی۔ شیوسینا اور بی جے پی کا پرانا رشتہ ہے۔ دونوں حلیف رہے ہیں، لیکن 2019 میں، بی جے پی ادھو ٹھاکرے کو وزیر اعلیٰ بنانا نہیں چاہتی تھی، جس کے بعد شیو سینا نے بی جے پی سے تعلقات توڑ لیے۔ اگر بی جے پی کے حکومت بنانے کے لیے مساوات کی بات کریں تو مہاراشٹر میں بی جے پی کے پاس 288 اسمبلی سیٹوں پر 106 ایم ایل اے ہیں۔ شیوسینا 55، این سی پی 53، کانگریس 44، بہوجن وکاس اگھاڑی 3، سماج وادی پارٹی، اے آئی ایم آئی ایم اور پرہار جن شکتی پارٹی کے پاس دو دو اور ایم این ایس، سی پی آئی (ایم)، راشٹریہ سماج پکشا، سوابھیمانی پارٹی، جن سوراجیہ شکتی اور کرانتی کاری شیتکری کے پاس ایک ایک ایم ایل اے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: