உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ترقی پسند شاعروفلمی نغمہ نگارساحرلدھیانوی کی41ویں برسی، شخصیت وشاعری سےمتعلق اہم حقائق

    Youtube Video

    ساحر کی شاعری نے ہندوستانی فلم انڈسٹری خاص طور پر ہندی فلموں کو زبردست انداز میں متاثر کیا۔ گلزار سے پہلے بھی ساحر بالی ووڈ میں گیت کے شہنشاہ تھے۔ ان کی لکھی ہوئی غزلیں لوگ آج بھی بڑے پیار سے گنگناتے ہیں۔

    • Share this:
      معروف شاعر و فلمی نغمہ نگار ساحر لدھیانوی (پیدائش: 8 مارچ 1921 لدھیانہ | وفات 25 اکتوبر 1980، ممبئی) اردو شاعر کے بے مثال اور لازوال شاعر ہیں۔ انھوں نے اپنی شاعری میں برطانوی نوآبادیاتی دور کے سرمایہ دارانہ نظام کی زبردست انداز میں مخالفت کی اور وہ پرجوش آزادی کے حامل شاعر تھے۔ ان کی شاعری میں حب الوطنی، انسانیت دوستی اور انسانی اقدار کی زبردست جھلک نظر آتی ہے۔

      ساحر لدھیانوی (Sahir Ludhianvi) 8 مارچ 1921 کو غیر منقسم پنجاب کے لدھیانہ میں عبدالحئی کے نام سے پیدا ہوئے۔ لدھیانہ کے خالصہ ہائی اسکول سے اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعد انہوں نے ستیش چندر دھون گورنمنٹ کالج (ایس سی ڈی گورنمنٹ کالج)، لدھیانہ میں آرٹس اسٹریم میں داخلہ لیا۔

      کالج کے طالب علم کی حیثیت سے وہ اپنی غزلوں، نظموں اور تقریروں کے لیے مقبول تھے۔ انھوں نے اس دور کے مشہور اردو رسالے مثلا ادب لطیف ، شاہکار اور سویرا کی تدوین و اشاعت میں حصہ لیا اور ترقی پسند مصنفین کی تنظیم کے رکن بھی بنے۔

      ساحر کی شاعری  نے ہندوستانی فلم انڈسٹری خاص طور پر ہندی فلموں کو زبردست انداز میں متاثر کیا۔ گلزار سے پہلے بھی ساحر بالی ووڈ میں گیت کے شہنشاہ تھے۔ ان کی لکھی ہوئی غزلیں لوگ آج بھی بڑے پیار سے گنگناتے ہیں۔ آج یعنی 25 اکتوبر کو ساحر کی 41 ویں برسی ہے۔ اس میں میں ان کی شخصیت و شاعری سے متعلق چند دلچسپ حقائق پیش ہیں:



       

      چند دلچسپ حقائق:

      • وہ غیر منقسم پنجاب کے لدھیانہ کے کریم پورہ میں ایک لال سینڈ اسٹون حویلی میں مسلم خاندان میں پیدا ہوا۔

      • سنہ 1943 میں ساحر نے اپنی پہلی شعری کتاب ’تلخیاں‘ شائع کی۔ وہ صرف 22 سال کے تھے اور یہ کتاب ان کے تلخ بچپن کی یادوں پر مبنی تھی۔

      • وہ لاہور سے دہلی فرار ہوگیا کیونکہ ان کی جانب سے متنازعہ بیانات دینے پر اس وقت کی حکومت پاکستان نے ان کے خلاف گرفتاری وارنٹ جاری کیا تھا۔

      • پنجابی کی ایک مشہور مصنفہ امرتا پریتم نے بھی ساحر کے ساتھ کالج میں تعلیم حاصل کی۔ ساحر کو ان کے اشعار بہت پسند تھے۔ اسی لیے دونوں نے مل کر کئی اہم ادبی کام کیا ہے۔

      • انھوں نے اپنا نام ’ساحر‘ رکھا ، جس کا مطلب جادوگرہے اور اس کے ساتھ لدھیانوی کو شامل کیا کیونکہ وہ لدھیانہ سے تعلق رکھتے تھے۔

      • ان کی بہت سی کلاسک کتابوں میں سے جو لازوال رہیں، ان کے کاموں نے معاشرے میں خواتین کے جبر اور زندگی بھر درپیش عدم مساوات کے بارے میں بھی دلیری سے بات کی۔

      • 8. انہیں تاج محل (1963) کے لیے بہترین گیت نگار کا پہلا فلم فیئر ایوارڈ ملا اور اسی قسم کا دوسرا 'کبھی کبھی' (1976) پر اپنے کام کے لیے ایوارڈ دیا گیا۔

      • عشق و محبت کے کئی معاملات کے باوجود ساحر ساری زندگی اکیلے ہی رہے۔ اپنے والد کے خلاف بہت سی رنجشوں نے اپنی ماں کو اس وقت چھوڑ دیا جب وہ نابالغ تھے۔

      • وہ 25 اکتوبر 1980 کو 59 سال کی عمر میں اچانک دل کا دورہ پڑنے سے انتقال کر گئے۔

      • انہیں ان کی ادبی خدمات کے بدلے میں متعدد اعزازات سے نوازا گیا، جن میں ہندوستان کی جانب سے سنہ 1971 میں دیا جانے والا پدم شری کا اعلیٰ ترین شہری اعزاز بھی شامل ہے۔

      • سنہ 2013 میں بھارتی حکومت کی جانب سے ساحر لدھیانوی کے نام پر ساحر لدھیانوی کے نام پر ڈاک ٹکٹ جاری کیا گیا۔


       

      • مشہور نظم اے شریف انسانوں


      خون اپنا ہو یا پرایا ہو
      نسل آدم کا خون ہے آخر
      جنگ مشرق میں ہو کہ مغرب میں
      امن عالم کا خون ہے آخر
      بم گھروں پر گریں کہ سرحد پر
      روح تعمیر زخم کھاتی ہے
      کھیت اپنے جلیں کہ اوروں کے
      زیست فاقوں سے تلملاتی ہے
      ٹینک آگے بڑھیں کہ پچھے ہٹیں
      کوکھ دھرتی کی بانجھ ہوتی ہے
      فتح کا جشن ہو کہ ہار کا سوگ
      زندگی میتوں پہ روتی ہے
      جنگ تو خود ہی ایک مسئلہ ہے
      جنگ کیا مسئلوں کا حل دے گی
      آگ اور خون آج بخشے گی
      بھوک اور احتیاج کل دے گی
      اس لئے اے شریف انسانو
      جنگ ٹلتی رہے تو بہتر ہے
      آپ اور ہم سبھی کے آنگن میں
      شمع جلتی رہے تو بہتر ہے
      برتری کے ثبوت کی خاطر
      خوں بہانا ہی کیا ضروری ہے
      گھر کی تاریکیاں مٹانے کو
      گھر جلانا ہی کیا ضروری ہے
      جنگ کے اور بھی تو میداں ہیں
      صرف میدان کشت و خوں ہی نہیں
      حاصل زندگی خرد بھی ہے
      حاصل زندگی جنوں ہی نہیں

      آؤ اس تیرہ بخت دنیا میں
      فکر کی روشنی کو عام کریں
      امن کو جن سے تقویت پہنچے
      ایسی جنگوں کا اہتمام کریں
      جنگ وحشت سے بربریت سے
      امن تہذیب و ارتقا کے لئے
      جنگ مرگ آفریں سیاست سے
      امن انسان کی بقا کے لیے
      جنگ افلاس اور غلامی سے
      امن بہتر نظام کی خاطر
      جنگ بھٹکی ہوئی قیادت سے
      امن بے بس عوام کی خاطر
      جنگ سرمائے کے تسلط سے
      امن جمہور کی خوشی کے لیے
      جنگ جنگوں کے فلسفے کے خلاف
      امن پر امن زندگی کے لیے

       

      • تاج محل


      تاج تیرے لیے اک مظہر الفت ہی سہی
      تجھ کو اس وادیٔ رنگیں سے عقیدت ہی سہی
      میری محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے
      بزم شاہی میں غریبوں کا گزر کیا معنی
      ثبت جس راہ میں ہوں سطوت شاہی کے نشاں
      اس پہ الفت بھری روحوں کا سفر کیا معنی
      میری محبوب پس پردہ تشہیر وفا
      تو نے سطوت کے نشانوں کو تو دیکھا ہوتا

      مردہ شاہوں کے مقابر سے بہلنے والی
      اپنے تاریک مکانوں کو تو دیکھا ہوتا
      ان گنت لوگوں نے دنیا میں محبت کی ہے
      کون کہتا ہے کہ صادق نہ تھے جذبے ان کے
      لیکن ان کے لیے تشہیر کا سامان نہیں
      کیونکہ وہ لوگ بھی اپنی ہی طرح مفلس تھے
      یہ عمارات و مقابر یہ فصیلیں یہ حصار
      مطلق الحکم شہنشاہوں کی عظمت کے ستوں
      سینۂ دہر کے ناسور ہیں کہنہ ناسور
      جذب ہے ان میں ترے اور مرے اجداد کا خوں

      میری محبوب انہیں بھی تو محبت ہوگی
      جن کی صناعی نے بخشی ہے اسے شکل جمیل
      ان کے پیاروں کے مقابر رہے بے نام و نمود
      آج تک ان پہ جلائی نہ کسی نے قندیل
      یہ چمن زار یہ جمنا کا کنارہ یہ محل
      یہ منقش در و دیوار یہ محراب یہ طاق
      اک شہنشاہ نے دولت کا سہارا لے کر
      ہم غریبوں کی محبت کا اڑایا ہے مذاق
      میری محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: