ہوم » نیوز » Explained

Corona Vaccination: دیہی ہندوستان میں ویکسی نیشن اور ہماری ذمہ داریاں

COVID-19 ویکسینز کے تحفظ اور اثر پذیری سے متعلق ڈیٹا کی دستیابی کے باوجود، ملک بھر میں ویکسینز بارے میں عوامی شکوک و شبہات اور معلومات کی کمی پائی جاتی ہے۔ یہ بات خاص طور پر دیہی اور قبائلی ہندوستانی علاقوں میں زیادہ پائی جاتی ہے جہاں ٹیکنالوجی کا عمل دخل کم ہے اور ویکسینیشن یا کوویڈ سے متعلق مناسب برتاؤ (CAB) محدود ہے۔

  • Share this:
Corona Vaccination: دیہی ہندوستان میں ویکسی نیشن  اور ہماری ذمہ داریاں
ویکسینیں اس وبا سے نجات پانے کی بہترین حکمت عملی ہے۔

بقلم: انل پرمار، ڈائریکٹر، کمیونٹی سرمایہ کاری، این جی او پارٹنر ۔ یونائٹیڈ وے ممبئی

دنیا کی سب سے بڑی COVID-19 ویکسینیشن کی مہمات میں سے ایک اس وقت بھارت میں جاری ہے اور 6 مئی تک ویکسین کی 16 کروڑ سے زیادہ خوراکیں لگائی جا چکی ہیں۔ ویکسینیں اس وبا سے نجات پانے کی بہترین حکمت عملی ہے۔ تاہم، COVID-19 ویکسینز کے تحفظ اور اثر پذیری سے متعلق ڈیٹا کی دستیابی کے باوجود، ملک بھر میں ویکسینز بارے میں عوامی شکوک و شبہات اور معلومات کی کمی پائی جاتی ہے۔ یہ بات خاص طور پر دیہی اور قبائلی ہندوستانی علاقوں میں زیادہ پائی جاتی ہے جہاں ٹیکنالوجی کا عمل دخل کم ہے اور ویکسینیشن یا کوویڈ سے متعلق مناسب برتاؤ (CAB) محدود ہے۔


اسلئے، یہ ضروری ہے کہ ویکسین فراہم کرنے کے ساتھ بھارت کے دیہی علاقوں میں موثر مواصلت اور بیداری کی مہم بھی چلا جائے تاکہ ان تک بروقت مدد پہنچائی جائے اور انہیں ویکسینیشن سے متعلق درست اور شفاف معلومات پہنچائی جا سکے۔ اس سے ویکسین سے متعلق جھجھک ختم ہوگی، ان کے اندیشے رفا  ہوں گے اور مزید شہریوں کو ویکسینیشن قبول کرنے اور دوسروں کو ترغیب دینے کو یقینی بنایا جا سکے گا۔ ٹیکنالوجی سے متعلق چیلنجز اور جغرافیائی اعتبار سے مشکل رسائی کے حامل علاقوں کے پیش نظر، ایسی کسی بھی حکمت عملی کو دیہاتوں تک پہنچنے کیلئے ایک ڈی سینٹرلائزڈ ایپروچ کا استعمال کرنا ہوگا۔



عوامی سطح پر ویکسینیشن کی ضرورت سے متعلق کمیونٹیز کو حساس کرنا، COVID-19 ویکسین سے متعلق مفروضوں کا تصفیہ کرنا اور خوف دور کرنا، نیز ویکسینیشن کیلئے اہل افراد کی رجسٹریشن کا اہتمام کرنا اہم ہے۔ اس کیلئے، معلومات، رویے اور عمل کو بہتر بنانا ضروری ہے۔

ویکسینیشن سے متعلق معلومات: دیہی علاقوں میں، کمیونٹیز کو سب سے پہلے یہ سمجھانا اہم ہے کہ ویکسینیشن کیا ہے اور اس کا مقصد کیا ہے۔ ایسی بنیادی معلومات کی کمی سے لوگ انتہائی آسانی سے افواہ پر یقین کر لیتے ہیں اور گمراہ ہو جاتے ہیں۔ اس کیلئے، پیغامات کی ترسیل مقامی زبان میں ہونی چاہئے اور ان کا سیاق و سباق کمیونٹیز کے سماجی و ثقافتی پس منظر میں فراہم کیا جانا چاہئے۔ ایسا کرتے وقت ریاستی سطح کے تنوع اور کمزوریوں، جیسے دیہی، قبائلی، غیر قبائلی اور دشوار رسائی والے علاقوں کو بھی مد نظر رکھنا چاہئے۔

رویہ: درست معلومات ویکسینیشن کے تئیں مناسب رویے کی وجہ بنتی ہے۔ یہی وہ چیز ہے جس کی مدد سے لوگ غلط معلومات کا گہرائی سے جائزہ لے سکتے ہیں اور افواہوں کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔

عمل: بہتر معلومات اور رویہ کمیونٹی کے اراکین کے عمل کو ایندھن فراہم کرتا ہے۔ اس معاملے میں، اس کا مطلب ہے کہ ویکسینیشن کیلئے رجسٹر کرنا اور اس بات کو یقینی بنانا کہ ویکسین کی دونوں خوراکین وقت پر لگیں۔

علامتی تصویر
علامتی تصویر




دیہی علاقوں میں ویکسینیشن کا عمل شروع کرنے کے راستے میں سب سے بڑا چیلنج ٹیکنالوجی تک محدود رسائی ہے اور چونکہ کمیونٹیز ٹیکنالوجی کے استعمال سے نابلد ہیں، اسلئے یہ امر معلومات کو مزید محدود کرتا ہے۔ ’’ CO-WINڈیش بورڈ کیا ہے؟‘‘، ’’میں کیسے رجسٹر کروں؟‘‘، ’’میں اپنا اپوائنٹمنٹ کیسے بُک کروں؟‘‘، ’’میرا قریب ترین ویکسینیشن سینٹر کہاں ہے؟‘‘ وغیرہ جیسے سوالات کی بھر مار ہے۔ ان جیسے سوالات کی وجہ سے دیہی علاقوں میں آباد کمیونٹیز کو شہری علاقوں میں آباد کمیونٹیز کے مقابلے کافی نقصان ہے۔ شہری علاقوں میں ٹیکنالوجی کا استعمال زیادہ ہے اور یہاں روایتی طبی پیغامات پر توجہ دی جاتی ہے۔ کمیونٹی کے اراکین کیلئے رجسٹریشن کا اہتمام کر کے اس فرق کو کم کرنا انتہائی ضروری ہے۔ گاؤں کی سطح پر رجسٹریشن ڈیسک سیٹ اپ کر کے اور گرام پنچایت کے اراکین اور آنگن واڑی کی سیویکاؤں، آشا ورکرز وغیرہ جیسے اہم اثر دار لوگوں کا استعمال کر کے یہ کام کیا جا سکتا ہے اور لوگوں کو رجسٹریشن کرنے کی جانب آمادہ کیا جا سکتا ہے۔ جب حکومت تمام عمر کے لوگوں کیلئے واک اِن ویکسینیشن رجسٹریشن کی اجازت نہیں دے دیتی ہے، تب تک یہ حکمت عملی اہم ہوگی۔ ویکسینیشن کے عمل کو بھارت کے دیہی علاقوں تک پہنچانا ایک پیچیدہ عمل ہے۔ تاہم، ڈی سینٹرلائزڈ منصوبہ بندی اور کمیونٹی پر مبنی ایپروچ کی مدد سے یہ کام کیا جا سکتا ہے۔ لوگوں کو اس تعلق سے آگاہ کرنا اہم ہے کہ CAB کا استعمال اور ویکسینیشن یقینی طور پر حالات کو معمول کی طرف لانے کی سمت واحد قدم ہے۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: May 26, 2021 10:31 PM IST