உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Explained: سول سرونٹ کے ڈیپوٹیشن رول میں مجوزہ تبدیلیوں پر مرکز اور ریاستیں کیوں ہیں متضاد؟

    تینوں آل انڈیا سروسز (AIS) کے مرکزی ڈیپوٹیشن میں زیادہ سے زیادہ کنٹرول کا استعمال کیا جائے۔

    تینوں آل انڈیا سروسز (AIS) کے مرکزی ڈیپوٹیشن میں زیادہ سے زیادہ کنٹرول کا استعمال کیا جائے۔

    کیرالہ کے وزیر اعلی پنارائی وجین نے کہا کہ مرکز کی طرف سے مجوزہ ترامیم کوآپریٹو وفاقیت کو کمزور کر دیں گی۔ ان کے تمل ناڈو کے ہم منصب ایم کے اسٹالن نے کہا کہ مرکز کی طرف سے تجویز کردہ آئی اے ایس کیڈر رولز میں ترامیم ملک کی وفاقی سیاست اور ریاستی خودمختاری کی جڑوں پر حملہ کرتی ہیں۔

    • Share this:
      کیرالہ اور تمل ناڈو اتوار کو ان ریاستوں کی طویل فہرست میں شامل ہو گئے جو مرکز سے انڈین ایڈمنسٹریٹو سروس کیڈر رولز (Indian Administrative Service Cadre Rules) میں مجوزہ ترامیم کو ختم کرنے پر زور دیتے ہیں۔ وزیر اعظم نریندر مودی کو لکھے ایک خط میں کیرالہ کے وزیر اعلی پنارائی وجین نے کہا کہ مرکز کی طرف سے مجوزہ ترامیم کوآپریٹو وفاقیت کو کمزور کر دیں گی۔ ان کے تمل ناڈو کے ہم منصب ایم کے اسٹالن نے کہا کہ مرکز کی طرف سے تجویز کردہ آئی اے ایس کیڈر رولز میں ترامیم ملک کی وفاقی سیاست اور ریاستی خودمختاری کی جڑوں پر حملہ کرتی ہیں۔

      آئی اے ایس کیڈر رولز میں مرکز کی طرف سے تجویز کردہ ترامیم کونسی ہیں؟

      ۔ 12 جنوری 2022 کو تمام ریاستوں کو بھیجے گئے ایک مواصلت میں محکمہ عملہ اور تربیت (DoPT) نے آئی اے ایس (کیڈر) رولز 1954 کے رول 6 میں ترمیم کرنے کی تجویز پر ان کی رائے مانگی جو کیڈر افسران کی ڈیپوٹیشن سے متعلق ہے۔ اسی طرح کے خطوط انڈین پولیس سروس (آئی پی ایس) اور انڈین فاریسٹ سروس (آئی ایف او ایس) کے کیڈر رولز میں ترمیم کی تجویز بھی بھیجے گئے تھے۔

      ترامیم کے ذریعے مرکزی حکومت کا منصوبہ ہے کہ تینوں آل انڈیا سروسز (AIS) کے مرکزی ڈیپوٹیشن میں زیادہ سے زیادہ کنٹرول کا استعمال کیا جائے۔ ترمیم کے ساتھ مرکز ریاستی حکومتوں کی اجازت لیے بغیر سرکاری ملازمین کو مرکزی حکومت کی وزارتوں میں تعینات کرنے کے اختیارات حاصل کر لے گا۔ 1951 میں آل انڈیا سروسز ایکٹ کے وجود میں آنے کے بعد 1954 میں آئی اے ایس کیڈر کے قوانین بنائے گئے تھے۔

      وجین کا پی ایم مودی کو خط:

      اپنے خط میں کیرالہ کے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ آل انڈیا سروسز کے ڈیپوٹیشن رولز میں مجوزہ ترامیم آئی اے ایس افسروں میں ان جماعتوں کی ریاستی حکومتوں کی پالیسیوں کو نافذ کرنے میں خوف اور ہچکچاہٹ پیدا کریں گی جو مرکز میں حکمراں جماعت کی سیاسی مخالف ہیں۔ انھوں نے کہا کہ آل انڈیا سروسز کے ڈیپوٹیشن رولز میں مجوزہ ترامیم آئی اے ایس افسران کے درمیان مرکز میں حکمران پارٹی کی سیاسی مخالف جماعتوں کی ریاستی حکومت کی پالیسیوں کو نافذ کرنے میں خوف اور ہچکچاہٹ پیدا کرے گی۔ یہ تعاون پر مبنی وفاقیت کو کمزور کر دے گا۔ گرا دیا جا سکتا ہے‘۔

      اسٹالن کا ترامیم پر اعتراض:

      مرکزی حکومت کی طرف سے تجویز کردہ ترامیم کے مسودے پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسٹالن نے اس پر سخت اعتراض کیا۔ انہوں نے وزیر اعظم کو لکھے گئے خط میں کہا کہ ترمیمی تجویز ہماری وفاقی سیاست اور ریاستی خود مختاری کی جڑ پر ضرب لگاتی ہے۔

      اسٹالن نے کہا کہ اگر یہ لاگو کیا جاتا ہے تو مجوزہ ترامیم سے تعاون پر مبنی وفاقیت کے جذبے کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا جو یونین اور ریاستوں کے درمیان موجود ہے اور مرکزی حکومت میں اختیارات کے ارتکاز کا باعث بنے گی۔ میں اس حقیقت کو بھی اجاگر کرنا چاہوں گا کہ بہت ساری ریاستی حکومتوں میں بھی خاص سینیارٹی پر افسران کی کمی ہے۔ بنیادی طور پر مرکزی حکومت کی طرف سے کیڈر مینجمنٹ کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ہوا ہے۔

      اسٹالین نے کہا کہ یونین قومی سطح پر گروپ-1 کے افسران سے مشترکہ پول کا فائدہ اٹھا رہی ہے۔ ریاستی حکومتیں مکمل طور پر ریاست میں دستیاب IAS افسران کے محدود پول پر انحصار کرتی ہیں۔ ریاستی حکومتیں ریاستی سطح پر مرکزی حکومت کی اسکیموں سمیت مختلف پروگراموں کو نافذ کرنے میں سب سے آگے ہیں۔ ریاستوں کو بھی بار بار قدرتی آفات کا سامنا کرنا پڑتا ہے جس کی وجہ سے ریاست میں آئی اے ایس افسران کی خدمات دیگر جگہوں سے زیادہ مانگتی ہیں۔ ایسے حالات میں ریاستی حکومتوں کو افسروں کی تعیناتی پر مجبور کرنا یقیناً مختلف ریاستوں میں افسروں کی کمی کی وجہ سے ’گورننس خسارے‘ کو بڑھا دے گا اور یہ ریاستوں کے انتظامی فریم ورک کے لیے ’توہین‘ ہے۔

      وہ کونسی دوسری ریاستیں ہیں جنہوں نے تشویش کا اظہار کیا ہے؟

      قبل ازیں جمعہ کو راجستھان کے وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت نے بھی وزیر اعظم نریندر مودی کو خط لکھ کر انڈین ایڈمنسٹریٹو سروس کیڈر رولز میں مرکز کی مجوزہ ترامیم کی مخالفت کی تھی اور کہا تھا کہ یہ اقدام مرکزی اور ریاستی حکومتوں کے لیے مقرر کردہ آئینی دائرہ کار کی خلاف ورزی کرے گا اور کام کرنے کا جذبہ کم کرے گا۔

      مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے جمعرات کو وزیر اعظم نریندر مودی کو ایک اور خط لکھا، جس میں ان پر زور دیا کہ وہ آئی اے ایس (کیڈر) رولز 1954 میں ترمیم کی تجویز کو واپس لیں، کیونکہ اس سے افسران میں خوف کی نفسیات پیدا ہوگی اور ان کی کارکردگی پر اثر پڑے گا۔ اس معاملے پر وزیر اعظم کو لکھے گئے خط میں ایک ہفتے میں ان کا دوسرا بنرجی نے کہا کہ یہ ترمیم وفاقی سیاست اور آئین کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کر دے گی۔

      چھتیس گڑھ کے بھوپیش بگھیل اور جھارکھنڈ کے وزیر اعلیٰ ہیمنت سورین نے بھی وزیر اعظم نریندر مودی کو خط لکھ کر مرکز کی طرف سے تجویز کردہ ترامیم کو واپس لینے کو کہا ہے۔

      مرکز کی وضاحت:

      اطلاعات و نشریات کے سکریٹری اپوروا چندرا نے 21 جنوری کو آئی اے ایس (کیڈر) قواعد میں ترمیم کرنے کی مرکز کی تجویز کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ مرکز اور ریاستی حکومتوں دونوں کے ساتھ کام کرنے سے نہ صرف افسران کے نقطہ نظر کو وسیع کیا جاتا ہے بلکہ تمام ہندوستانی خدمات کا مقصد بھی پورا ہوتا ہے۔

      انہوں نے کہا کہ انڈین ایڈمنسٹریٹو سروس (آئی اے ایس) کے افسران ہمیشہ ریاستوں میں تعینات نہیں رہ سکتے کیونکہ یہ نہ تو سروس کے لیے اچھی طرح کام کرتی ہے اور نہ ہی افسران کے لیے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: