உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Explained: کیوںNCPCR نے اقلیتی اسکولوں کوآرٹی ای کےتحت لانےکی سفارش کی؟

    Youtube Video

    آئین کے دفعہ 30 میں اقلیتوں کو حق دیا گیا ہے کہ وہ اپنے تعلیمی ادارے قائم کریں اور ان کا انتظام کریں۔ اس دفعہ کے مطابق مختلف مذہبی اور لسانی اقلیتی برادریوں کے بچوں کو ایک الگ ثقافت، رسم الخط، زبان اور ان کے تحفظ کے مواقع فراہم کرنا ریاست کی جمہوری ذمہ داری ہے۔

    • Share this:
      نیشنل کمیشن فار پروٹیکشن آف چائلڈ رائٹس (NCPCR) نے ایک رپورٹ جاری کی ہے، جس کا عنوان ’’آئین ہند کے آرٹیکل 21 اے کے حوالے سے آرٹیکل 15 (5) کے تحت اقلیتی برادریوں میں بچوں کی تعلیم پر چھوٹ کے اثرات‘‘ ہے۔ اس رپورٹ میں اقلیتی اسکولوں (اقلیتی تنظیموں کے زیر انتظام اسکول) کا جائزہ لیا گیا۔ اقلیتی اسکولوں کو تعلیم کے حق کی پالیسی پر عمل درآمد سے استثنیٰ حاصل ہے اور وہ حکومت کے سرو شکشا ابھیان Sarva Shiksha Abhiyan کے تحت نہیں آتے۔ اس رپورٹ کے ذریعے این سی پی سی آر نے سفارش کی ہے کہ ان اسکولوں کو آر ٹی ای اور ایس اے دونوں کے تحت لایا جائے۔

      اقلیتی اسکولوں کو RTE اور SSA سے کیسے استثنیٰ حاصل ہے؟
      سنہ 2002 میں آئین میں 86 ویں ترمیم نے بنیادی حق کے طور پر حق تعلیم وضع کیا گیا۔ اسی ترمیم میں دفعہ 21A داخل کیا گیا، جس نے RTE کو چھ سے 14 سال کی عمر کے بچوں کا بنیادی حق بنایا۔ ترمیم کی منظوری کے بعد سروا شکشا ابھیان (ایس ایس اے) شروع کیا گیا، مرکزی حکومت کی ایک اسکیم جو ریاستی حکومتوں کے ساتھ شراکت میں نافذ کی گئی ہے جس کا مقصد چھ سے 14 سال کے تمام بچوں کو ’’مفید اور متعلقہ ، ابتدائی تعلیم فراہم کرنا ہے‘‘۔

      (Shutterstock/Representational)
      (Shutterstock/Representational)


      سنہ 2006 میں 93 ویں آئینی ترمیم کے تحت دفعہ 15 میں شق (5) داخل کی جس نے ریاست کو خصوصی امداد فراہم کرنے کے قابل بنایا ، جیسے کہ کسی بھی پسماندہ طبقے جیسے درج فہرست ذات اور درج فہرست قبائل کی ترقی کے لیے تحفظات ، تمام امداد یا غیر امدادی تعلیمی اداروں میں سوائے اقلیتی تعلیمی اداروں کے تمام طرح کے انتظامات کیے جاتے ہیں۔

      حکومت نے بعد میں رائٹ ٹو ایجوکیشن (RTE) دفعہ 2009 لایا ، جس میں سب کے لیے جامع تعلیم کا خاکہ پیش کیا گیا، جس سے اسکولوں میں پسماندہ بچوں کو شامل کرنا لازمی قرار دیا گیا ہے۔

      خاص طور پر اس دفعہ کے سیکشن 12(1)(c) نے غیر امداد یافتہ اسکولوں میں 25 فیصد نشستوں کا بندوبست کیا ہے تاکہ معاشی طور پر کمزور طبقات اور پسماندہ گروپوں کے بچوں کو داخلہ دیا جا سکے۔

      ان قوانین کے برعکس آئین کے دفعہ 30 میں اقلیتوں کا حق ہے کہ وہ اپنے تعلیمی ادارے قائم کریں اور ان کا انتظام کریں۔ اس دفعہ کے مطابق مختلف مذہبی اور لسانی اقلیتی برادریوں کے بچوں کو ایک الگ ثقافت، رسم الخط، زبان اور ان کے تحفظ کے مواقع فراہم کرنا ریاست کی جمہوری ذمہ داری ہے۔

      اس کے بعد سنہ 2012 میں ایک ترمیم کے ذریعے مذہبی تعلیم دینے والے اداروں کو آر ٹی ای ایکٹ پر عمل کرنے سے چھوٹ دی گئی۔ بعد میں 2014 میں دفعہ 15 (5) کے تحت چھوٹ کے جواز پر بحث کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے آر ٹی ای ایکٹ کو اقلیتی حیثیت والے اسکولوں کے لیے قابل اطلاق قرار دیا کہ ایکٹ اقلیتوں کو قائم کرنے اور انتظام کرنے کے حق میں مداخلت نہ کرے۔ اپنی پسند کے ادارے

      کمیشن نے یہ رپورٹ کیوں پیش کی؟

      کمیشن کا مقصد اقلیتی تعلیمی اداروں کی اس چھوٹ کے اثرات کا جائزہ لینا تھا جو کہ مختلف اقلیتی اداروں کے لیے لازمی ہیں۔ کمیشن کا خیال ہے کہ قواعد کے دو مختلف پہلو ہیں۔ دفعہ21 اے جو تمام بچوں کو تعلیم کے بنیادی حق کی ضمانت دیتا ہے اور دفعہ 30 جو اقلیتوں کو اپنے اپنے قوانین اور آرٹیکل 15 (5) کے ساتھ اپنے ادارے قائم کرنے کی اجازت دیتا ہے۔ ان دونوں پہلووں کا اس میں ذکر کیا گیا ہے۔

      کمیشن نے مطالعہ کیسے کیا؟
      این سی پی سی آر نے 2015-16 میں طلبا ، اساتذہ اور مختلف برادریوں کے ساتھ مشاورت شروع کی۔ تب سے اس طرح کے 16 مشاورت کا اہتمام کیا گیا ہے۔ نیز 2017 میں ریاستی کمیشنوں کے ساتھ مشاورتی اجلاس کے دوران اس موضوع پر تبادلہ خیال کیا گیا جہاں 80 شرکا بشمول چیئرپرسن اور 19 ریاستی کمیشنوں اور قومی کمیشن کے ممبران نے سفارشات کا ایک چارٹر منظور کیا جس میں اس اثر کا مطالعہ بھی شامل ہے۔

      یہ مطالعہ دو مراحل میں کیا گیا۔ پہلا مرحلہ طلبا کی تعداد ، کمیونٹی کی قسم ، اندراج ، شناخت کی حیثیت ، وابستگی کی حیثیت وغیرہ پر مرکوز ہے۔

      دوسرے مرحلے کا مقصد اقلیتی برادریوں کے نمائندوں ، تعلیمی اداروں کے سربراہان ، والدین اور اقلیتی اداروں میں پڑھنے والے طلبا کی تجاویز لینا تھا، خاص طور پر مدرسوں میں پڑھنے والے طلبا کی تعداد اور اندراج کے لحاظ سے اس پر بہت زیادہ زور دیا گیا۔ اس میں مشاورتی ورکشاپس ، دستاویزات کا تجزیہ اور رسمی اور غیر رسمی گروپ مباحثے شامل تھے۔

      رپورٹ کے نتائج کیا ہیں؟

      کمیشن نے رپورٹ میں مشاہدہ کیا ہے کہ بہت سے بچے جو ان اداروں یا اسکولوں میں داخل ہیں وہ ان حقوق سے لطف اندوز نہیں ہو سکے جو دوسرے بچے لطف اندوز ہو رہے ہیں کیونکہ جس ادارے میں وہ تعلیم حاصل کر رہے ہیں وہ مستثنیٰ ہے اور اقلیتی اداروں کے حقوق سے لطف اندوز ہو رہا ہے۔ کمیشن نے کہا ہے کہ استثنیٰ کے کچھ نقصان دہ اثرات ہیں - ایک طرف ایسے اسکول ہیں، جہاں زیادہ تر کرسچن مشنری اسکول ہیں، جو صرف ایک مخصوص کلاس کے طلبا کو داخل کر رہے ہیں اور محروم بچوں کو سسٹم سے باہر کر رہے ہیں، اس طرح یہ اشرافیہ کی آماچگاہ بن گیا ہے۔

      اس کے برعکس اقلیتی اسکولوں کی دوسری اقسام خاص طور پر مدارس پسماندگی میں مبتلا پسماندہ طلبا کی یہودی بستیاں بن چکے ہیں۔ کمیشن نے کہا ہے کہ مدارس کے وہ طلبا جو مذہبی علوم کے ساتھ سیکولر کورس نہیں کرتے ہیں- جیسے کہ سائنسی مضامین، ایسے طلبہ پیچھے رہ گئے ہیں اور اسکول چھوڑنے پر بیگانگی اور کمتری کا احساس محسوس کرتے ہیں۔

      رپورٹ میں یہ بھی پتہ چلا ہے کہ کل طلبا میں سے صرف 4.18 فیصد نے اسکول سے مفت یونیفارم، کتابیں اور اسکالرشپس وغیرہ جیسے فوائد حاصل کیے۔

      بچوں کو مفت اور لازمی معیار کی تعلیم کو یقینی بنانے کے لیے آر ٹی ای ایکٹ 2009 بنیادی کم از کم انفراسٹرکچر ، اساتذہ کی تعداد ، کتابیں ، یونیفارم ، مڈ ڈے میل وغیرہ سے متعلق اصولوں کو فراہم کرتا ہے جو کہ اقلیتی اسکولوں کے طلبا حاصل نہیں کر رہے ہیں۔

      کمیشن نے 93 ویں ترمیم لانے کے بعد اقلیتی درجہ کے سرٹیفکیٹ کے لیے درخواست دینے والے اسکولوں کی تعداد میں بھی اضافہ پایا ہے کل اسکولوں کے 85 فیصد سے زائد اسکولوں نے 2005-2009 اور بعد کے سال میں سرٹیفکیٹ حاصل کیا۔

      کمیشن کا خیال ہے کہ یہ اس لیے ہوا کیونکہ اسکول پسماندہ طبقات کے لیے نشستیں مخصوص کرنے کے قانونی اختیار سے باہر کام کرنا چاہتے تھے۔ ایم ایس سی حاصل کرنے والے اسکولوں کی تعداد میں دوسرا اضافہ 2010-2014 میں دیکھا گیا ، جب آر ٹی ای کو غیر امداد یافتہ اقلیتی اسکولوں کے لیے قابل اطلاق بنا دیا گیا۔

      ہندوستان میں اقلیتی اسکولوں کا تناسب کیا ہے؟ ان سکولوں میں کتنے اقلیتی طلبہ زیر تعلیم ہیں؟

      کمیشن نے عیسائیوں کی آبادی کے ساتھ ساتھ دیگر اقلیتی گروہوں کے زیر انتظام اسکولوں کی تعداد کے حوالے سے ملک میں مسیحی مشنری اسکولوں کی غیر متناسب تعداد کو پایا ہے۔

      آبادی کا تناسب اور اسکول انتظامیہ

      رپورٹ کے مطابق عیسائی اقلیتی آبادی کا 11.54 فیصد ہیں لیکن 71.96 فیصد اسکول چلاتے ہیں۔ مسلمان اقلیتی آبادی کا 69.18 فیصد ہیں لیکن 22.75 فیصد اسکول چلاتے ہیں۔ وہیں سکھ 9.78 فیصد اقلیتی آبادی پر مشتمل ہیں اور 1.54 فیصد ےسکول چلاتے ہیں۔ بدھ مت 3.83 فیصد اقلیت پر مشتمل ہے آبادی اور 0.48 فیصد اسکول چلاتے ہیں اور جین اقلیتی آبادی کا 1.9 فیصد اور 1.56 فیصد اسکول چلاتے ہیں۔

      اس سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ عیسائی مشنری اسکولوں میں پڑھنے والے 74 فیصد طلبا غیر اقلیتی طلبا ہیں۔

      رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اقلیتی برادریوں کے اقلیتی اسکولوں میں 62.50 فیصد طلبا غیر اقلیتی برادریوں سے تعلق رکھتے ہیں۔ مزید یہ کہ اقلیتی اسکولوں میں کل طلبا میں سے صرف 8.76 فیصد سماجی اور معاشی طور پر پسماندہ پس منظر سے تعلق رکھنے والے طلبا ہوتے ہیں۔

      کمیشن نے کہا ہے کہ ریاستی حکومتوں کو اقلیتی طلبا کے کم از کم فیصد کے بارے میں سخت ہدایات متعارف کرانے کی ضرورت ہے جنہیں ان اسکولوں کو داخل کرنے کی ضرورت ہے ، نیز آبادی کے سائز کے حوالے سے ایک مخصوص اقلیتی برادری کے زیر انتظام اسکولوں کے تناسب کو بھی دیکھنا چاہیے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: