உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Explained: فون پرانسٹال کیےجانے والے’’کوئیک لون ایپسQuick Loan Apps‘‘سےکیوں رہیں ہوشیار؟

    ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔

    ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔

    آپ کے فون کی اسکرین پر کلک کرنے پر ’’فوری رقم‘‘ کے خیال سے بہت سے لوگ متاثر ہیں۔ لیکن فوری قرض موبائل ایپس میں شامل حفاظت کے بارے میں حال ہی میں کئی طرح کے انکشافات ہوئے ہیں۔

    • Share this:
      عالمی وبا کورونا وائرس کی وجہ سے دنیا بھر کے انسانوں کی زندگیوں میں کئی طرح کی تبدیلی رونما ہورہی ہیں۔ اس وبائی دور میں بہت سے لوگ معاشی تنگی کی وجہ سے پریشان ہیں تو ایک بڑی اکثریت صحت کے مسئلہ سے جوجھ رہی ہیں۔ ایسے میں ’’موقع کا فائدہ‘‘ اٹھانے کے لیے سائبر والڈ میں فون پر خود بہ خود کئی ایسے قرض پر مبنی ایپس انسٹال کیے جارہے ہیں، جسے کوئیک لون ایپس (Quick Loan Apps) کہا جاتا ہے۔ ان ایپس کے ذریعہ جلد قرض کی فراہمی کا مبنیہ دعوی کیا جاتا ہے۔ ایسے میں اس کے استعمال کنندہ کا بری طرح استحصال کیا جاتا ہے۔ اس کی راز داری کو بھی خطرہ لاحق ہوتا ہے۔

      کووڈ سے متعلقہ سست رویوں نے ذاتی مالیات اور کاروباری اداروں کو بہت سخت نقصان پہنچایا ہے۔ آپ کے فون کی اسکرین پر کلک کرنے پر ’’فوری رقم‘‘ کے خیال سے بہت سے لوگ متاثر ہیں۔ لیکن فوری قرض موبائل ایپس میں شامل حفاظت کے بارے میں حال ہی میں کئی طرح کے انکشافات ہوئے ہیں۔

      ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔
      ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔


      اس طرح کے لون شارک Loan sharks اب ڈیجیٹل ماحولیاتی نظام digital ecosystems پر حملہ کر رہے ہیں۔ جو لوگ عالمی وبا کورونا وائرس سے متاثر ہیں، ان لوگوں کو فوری پیسے کا وعدہ کیا جارہا ہے اور ان کا استحصال کیا جارہا ہے۔ کورونا کی وجہ سے کئی کاروبار بند ہونے کے دہانے پر کھڑے ہیں اور دنیا بھر میں لاکھوں افراد بے روزگار ہوگئے ہیں۔

      کس طرح چین سے لون شارک نے ہندوستانی منڈیوں کو متاثر کیا؟

      سنہ 2020 میں چین کے لون شارک ایپلی کیشنز نے ہندوستان میں بہت سے لوگوں کی بچت میں ایک سوراخ پیدا کیا ہے جنہیں فوری رقم کی ضرورت تھی۔ اس غیر منظم حادثے کے بعد ریزرو بینک آف انڈیا Reserve Bank of India ڈیجیٹل قرض دہندگان کے لیے نئے قوانین تیار کر رہا ہے۔

      پچھلے جون کی اکنامک ٹائمز Economic Times کی رپورٹ کے مطابق اس وقت کم از کم 50 ایپس اپنے صارفین کو لامتناہی ہراساں کر رہی تھیں، ان میں بہت سے دوسروں کو خودکشی پر مجبور کر رہے تھے، جس کی وجہ سے گوگل Google جنوری 2021 میں اپنے پلے اسٹور سے 400 ایسی ایپس کو ہٹانے پر مجبور ہوا۔ زیادہ تر ایپس جائز نظر آتے ہیں اور ان میں سے بیشتر منی لون Money Loan، لون پیسہ Loan Paisa، لون ادھار Loan Udhaar، گو کیش Go Cash، منی ان نیڈ Money In Need وغیرہ جیسے نام رکھتے ہیں۔

      ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔
      ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔


      زیادہ سود کی شرحوں اور نہ ختم ہونے والی ہراسانی کے درمیان ڈیڈ لائن پوری نہ ہونے پر قرض نادہندگان کو حفاظتی نیٹ کے بغیر چھوڑ دیا جاتا ہے۔ بہت سے معاملات میں ایسی درخواستیں اپنے پیسے واپس ملنے کی امید میں معطل کردی جاتی ہے۔

      فزیکل لون شارک physical loan sharks کی طرح ڈیجیٹل منی لینڈرز کمزوروں اور مالی مدد کی اشد ضرورت پر حملہ کرکے کام کرتے ہیں۔ اگرچہ یہ شروع میں آسان لگتا ہے، اس طرح کے تجربات بہت جلد ڈراؤنے خوابوں میں بدل جاتے ہیں کیونکہ مقررہ تاریخیں چھوٹ جاتی ہیں۔ کچھ معاملات میں شرح سود 60 سے 100 فیصد تک زیادہ ہے۔

      اس طرح کے شکاری اہداف مسلسل کالوں کے ذریعے حاصل کیے جاتے ہیں اور قرض دہندگان کی تفصیلات ان کے نجی رابطوں تک پہنچ کر عام کی جاتی ہیں۔

      جب آپ کے فون پر زیادہ تر ایپلی کیشنز انسٹال ہوتے ہیں تو وہ حقدار بچے کی طرح رسائی کا مطالبہ کرتی ہیں، جس میں اسٹوریج، رابطے، کیمرا اور مائیکروفون شامل ہے۔ اگرچہ یہ بتانا مشکل ہے کہ کون سی ایپلی کیشنز اس ڈیٹا کو استعمال کرتی ہیں، اس طرح کے غیر محدود رابطے اور ڈیٹا تک رسائی ان کو فائدہ دے سکتی ہے جب کوئی ان کے قرضوں پر ڈیفالٹ کرتا ہے۔

      کس طرح قرض شارک آپ کے ذاتی ڈیٹا کو ہتھیار بناتے ہیں؟

      آپ سوچتے ہیں کہ پیسہ کہاں سے آتا ہے؟ منی کنٹرول کی تفتیش سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ زیادہ تر رقم زیادہ خالص مالیت والے افراد (HNI) یا غیر ملکی اداروں سے آتا ہے۔ ان میں سے اکثر 7 تا 15 دن کے اندر قرض کی ادائیگی کی توقع کرتے ہیں، جس کی اوسط رقم 3000 سے 50000 تک ہوتی ہے۔

      ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔
      ۔(علامتی تصویر : Shutterstock)۔


      ’’آپ دستاویزات کی پریشانی کے بغیر فوری رقم چاہتے ہیں؟ ہم پر بھروسہ کریں‘‘ اس طرح کے حملے استعمال کیے جاتا ہے۔ تا کہ ان پر صارفین کا اعتماد برقرار رہے۔ درحقیقت اگر کسی پلیٹ فارم کو طویل دستاویزات کی ضرورت نہیں ہوتی ہے، تو یہ ایک واضح خطرہ کی گھنٹی ہونی چاہیے اور آپ کو اس سے دور رہنا چاہیے۔ جبکہ باقاعدہ بینکوں کو قرضوں کے لیے کچھ دستاویزات اور پہلے سے تفتیش کی ضرورت پڑسکتی ہے۔

      آن لائن پیسے ادھار لیتے وقت کیسے محفوظ رہیں؟

      • 1. چیک کریں کہ آیا انہیں آر بی آئی RBI نے قرض دینے کی منظوری دی ہے یا نہیں؟ اگر قرض دہندہ کسی بینک سے منسلک نہیں ہے اور اس کے پاس این بی ایف سی لائسنس NBFC licence نہیں ہے تو وہ زیادہ تر جعلی ہیں۔

      • 2. "فوری قرضوں" میں نہ پڑیں جو فوری طور پر رقم کی پیشکش کا دعوی کرتے ہیں۔ ان میں سے بیشتر کا شرح سود بہت زیادہ ہے۔

      • 3. اگر قرض دہندہ آپ کی کریڈٹ ہسٹری کی پرواہ نہیں کرتا تو وہ آپ کی پرواہ نہیں کرتے! اس کے بجائے جائز قرض دہندگان اور بینکوں پر جائیں جہاں نہ صرف آپ کا ڈیٹا محفوظ ہے، بلکہ شرح سود بہت زیادہ نہیں ہوگا۔


      پیسے کی ضرورت ہے؟ پریشان نہ ہوں، آپ آر بی آئی کی ویب سائٹ پر قرض دہندہ اور ان کے اسناد کی تصدیق کر سکتے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: