ہوم » نیوز » عالمی منظر

ہندستان کے خلاف پاکستان کے دہشت گردوں کا استعمال کر رہا ہے چین: رپورٹ

ایک امریکی تحقیق کار مائیکل روبن کی ایک تحقیق میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ چین ہندستان کے خلاف پاکستانی دہشت گردوں کا استعمال کرتا ہے۔ وہیں، اپنی دہشت گردانہ سرگرمیوں کے لئے پاکستان، چین کو ڈھال مانتا ہے۔

  • Share this:
ہندستان کے خلاف پاکستان کے دہشت گردوں کا استعمال کر رہا ہے چین: رپورٹ
عمران خان اور شی جن پنگ کی فائل فوٹو

واشنگٹن۔ پاکستان اور چین (Pakistan and China) کی دوستی کسی سے چھپی نہیں ہے۔ اقوام متحدہ میں چین کھل کر پاکستانی دہشت گردوں کی حمایت کرتا ہے اور ہندستان (India) کے ذریعہ ان پر پابندی عائد کئے جانے کی مانگ کے خلاف اپنا ویٹو پاور استعمال کر کے انہیں بچا لیتا ہے۔ اب چین اور پاکستان کی دوستی کا ایک اور کڑوا سچ سامنے آیا ہے جس سے یہ واضح ہو گیا ہے کہ دونوں ملک ہندستان کو پریشان کرنے کے لئے دہشت گردوں کا استعمال کرتے ہیں۔ ایک امریکی تحقیق کار مائیکل روبن کی ایک تحقیق میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ چین ہندستان کے خلاف پاکستانی دہشت گردوں کا استعمال کرتا ہے۔ وہیں، اپنی دہشت گردانہ سرگرمیوں کے لئے پاکستان، چین کو ڈھال مانتا ہے۔


واشنگٹن ایگزامنر میں لکھے ایک مضمون میں روبن نے کہا کہ بیجنگ دہشت گردی پر روک لگانے کی حمایت میں نہیں ہے۔ پاکستان میں بڑھ رہی دہشت گردی کو لے کر ایف اے ٹی ایف بھی ناکام رہا اور اب وہ کچھ بڑے فیصلے کر سکتا ہے۔


رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حال ہی میں چینی سفیر یاو جنگ اور پاکستان کے خصوصی اقتصادی مشیر عبدالحافظ شیخ کی میٹنگ میں صرف سی پیک ( چین۔ پاک معاشی کورویڈو) کو لے کر ہی بات ہوئی۔ دونوں ملکوں کے درمیان ایف اے ٹی ایف پر کوئی بات چیت نہیں ہوئی۔ اس سے یہ واضح ہے کہ چین کسی بھی طریقے سے پاکستان میں پرورش پا رہی دہشت گردی کے خلاف نہیں ہے اور وہ اس کا استعمال ہندستان کے خلاف کر رہا ہے۔


فروری 2021 تک گرے لسٹ میں رہے گا پاکستان

خیال رہے کہ پاکستان کو ایف اے ٹی ایف سے بڑا جھٹکا لگا ہے ۔ پاکستان ابھی گرے لسٹ میں ہی رہے گا ۔ دراصل عمران خان کی حکومت ایف اے ٹی ایف کے 27 پوائنٹس میں سے چھ پر عمل درآمد کرنے میں ناکام رہی ہے ۔ جون 2018 میں ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو گرے لسٹ میں ڈالا تھا ۔ اس وقت پاکستان کو 27 نکات پر مشتمل ایکشن پلان کو 2019 کے آخر تک لاگو کرنے کا حکم دیا گیا تھا ۔ حالانکہ کورونا وائرس کو دیکھتے ہوئے اس کی مدت بڑھا دی گئی تھی۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Oct 24, 2020 09:24 AM IST