ہوم » نیوز » عالمی منظر

چین کا رخ پڑا نرم، لیکن ہندوستان محتاط، سرحد پر بڑھائے فوجی اور ہتھیار

چین کی کسی بھی چالبازی سے نمٹنے کے لئے ہندوستان نے بھی فورا ان علاقوں میں اپنے جوانوں کی تعداد بڑھا دی ہے اور ہتھیار اور دیگر اشیا بھی اسٹینڈبائی موڈ پر رکھی گئی ہیں۔

  • Share this:
چین کا رخ پڑا نرم، لیکن ہندوستان محتاط، سرحد پر بڑھائے فوجی اور ہتھیار
چین کا رخ پڑا نرم، لیکن ہندوستان محتاط، سرحد پر بڑھائے فوجی اور ہتھیار

بیجنگ۔ ہندوستان (India) اور چین (China) کی وزارت خارجہ نے جمعرات کو کہا ہے مشرقی لداخ سرحدی تنازعہ  (India-China Border Dispute) کا پر امن حل نکالنے کے لئے دونوں ممالک سفارتی اور فوجی سطح پر بات چیت کر رہے ہیں۔ حالانکہ سرحد کے اس طرف چین نے چار ہزار کلو میٹر لمبی لائن آف کنٹرول پر لداخ سے لے کر اروناچل تک کئی فوجی ٹھکانے بنا لئے ہیں جسے لے کر ہندوستان محتاط ہے۔ چین کی کسی بھی چالبازی سے نمٹنے کے لئے ہندوستان نے بھی فورا ان علاقوں میں اپنے جوانوں کی تعداد بڑھا دی ہے اور ہتھیار اور دیگر اشیا بھی اسٹینڈبائی موڈ پر رکھی گئی ہیں۔


بیجنگ میں چینی وزارت خارجہ نے کہا کہ دونوں ملک حال ہی میں ہوئے اتفاق رائے کی بنیاد پر ہندوستان کے ساتھ سرحد پر کشیدگی کم کرنے کے لئے مناسب طریقے اپنا رہے ہیں اور کام کر رہے ہیں۔ ادھر، نئی دہلی میں ہندوستانی وزارت خارجہ نے کہا کہ دونوں فریق تنازعہ کے جلد نمٹارے کے لئے کام کرنے کو راضی ہوئے ہیں۔ حالانکہ، دونوں ہی ملکوں نے مشرقی لداخ میں تعطل دور کرنے کے لئے کئے گئے کاموں کی تفصیل نہیں دی ہے۔ مشرقی لداخ میں چین اور ہندوستان کی افواج کے درمیان جاری کشیدگی کو کم کرنے کے لئے سفارتی اور فوجی چینل کے ذریعہ مسلسل بات چیت جاری ہے۔


چین۔ ہندوستان دونوں ہی بڑھا رہے ہیں فوجی


نیوز ایجنسی اے این آئی کے مطابق، اروناچل، سکم، ہماچل پردیش اور اتراکھنڈ کی سرحدیں جہاں بھی ایل اے سی کو چھوتی ہیں، وہاں پر چین نے اپنے فوجی ٹھکانے بنا لئے ہیں۔ جس کو لے کر ہندوستان کافی محتاط ہے۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق، چین نے ان سبھی فوجی اڈوں پر جوان اور ہتھیار اکھٹا کر رکھے ہیں۔ ادھر، ہندوستان نے بھی احتیاط کے پیش نظر لداخ کے کارو میں تعینات تین انفینٹری ڈویژن کو بیک اپ دینے کے لئے ہماچل میں رکھی گئی ریزرو بریگیڈ کو اس علاقے میں بھیج دیا ہے۔ اس کے علاوہ اتراکھنڈ میں ہرسل۔ باراہوتی۔ نیلانگ وادی کے علاوہ دیگر کئی سیکٹر میں بھی اضافی ٹکڑیاں تعینات کی ہیں۔ جہاں بھی چین کے فوجی نظر آ رہے ہیں وہاں اضافی جوان تعینات کر دئیے گئے ہیں۔
First published: Jun 12, 2020 08:48 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading