உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شام : مشرقی غوطہ میں بشار رجیم کی طرف سے کیمیائی بم حملہ ، کم سے کم 70 افراد ہلاک

    شام میں ہوئے بم دھماکہ کی فائل فوٹو: تصویر، یو این آئی۔

    شام میں ہوئے بم دھماکہ کی فائل فوٹو: تصویر، یو این آئی۔

    مشرقی غوطہ کے محصور علاقے میں شامی باغی گروپ نے الزام لگایا ہے کہ شامی حکومت کے فوجی دستے نے ہفتہ کے روز مشرقی غوطہ میں شہریوں پر کیمیائی بم سے حملے کئے ہیں،

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      دمشق: مشرقی غوطہ کے دوما شہر میں گزشتہ روز روسی حمایت یافتہ شامی فوج کی طرف سے مشتبہ کیمیائی بم حملے میں کم سے کم 70 افراد جاں بحق ہوئے ہیں۔ یہ اطلاع راحت رسانی اور طبی عملہ نے دی ہے۔ بی بی سی نیوز کی رپورٹ کے مطابق امدادی رضاکاروں نے بتایا کہ شام کے شہر دوما میں کم از کم 70 افراد ممکنہ طور پر زہریلی گیس کے حملے میں ہلاک ہو گئے ہیں۔وائٹ ہیلمٹس نامی امدادی تنظیم نے تہ خانوں میں بیسیوں لاشوں کی تصویریں ٹوئٹر پر پوسٹ کی ہیں۔ اس کا کہنا ہے کہ مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے۔فی الحال، اس خبر کی آزاد ذرائع سے تصدیق نہيں ہوسکی ہے ، جبکہ دوسری جانب شامی حکومت نے کیمیائی حملے کے الزامات کی تردید کی ہے۔
      دریں اثناء، امریکی محکمہ خارجہ نے بتایا کہ رپورٹوں میں شام کے دوما شہر میں کیمیائی بم حملے میں کافی تعداد میں شہری ہلاکتوں کی اطلاع دی گئی ہے۔ فضائی حملوں میں پناہ گزیں کیمپوں کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔ محکمہ خارجہ نے ایک بیان میں کہا کہ اس میں کوئی دو رائے نہيں کہ کیمیائی ہتھیاروں کے مہلک حملوں کے لئے شامی صدرکے حامی روس ہی ذمہ دار ہے۔
      متعدد طبی عملہ، نگراں تنظیموں اور رضاکار گروپوں نے مشرقی غوطہ کے محصور علاقے میں کیمیائی حملے کی تفصیلات بتائی ہيں۔ تاہم، حملے کی واضح تفصیلات ابھی تک سامنے نہیں آسکی ہیں۔ حکومت مخالف تنظیم غوطہ میڈیا سینٹر نے کہا ہے کہ مبینہ گیس حملے میں 75 شہریوں کی دم گھٹنے سے موت ہوگئی ہے اور ایک ہزار سے زیادہ لوگ متاثر اور زخمی ہوئے ہیں۔اس نے الزام لگایا ہے کہ ایک سرکاری ہیلی کاپٹر نے بیرل بم گرایا جس میں سارین نامی اعصاب کو مفلوج کرنے والے عناصرموجود تھے۔
      First published: