ہوم » نیوز » عالمی منظر

افغانستان کے سفیر کی بیٹی کے اغوا کے بعد پاکستان میں ہندوستانی مشن محتاط: ذرائع

India-Pakistan News: پاکستان میں افغانستان کے سفیر کی بیٹی کو اسلام آباد سے اغوا کرنے کی خبر کے بعد ہندوستان بھی محتاط ہوگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق، ہندوستانی مشن اور ان کی فیملی کے اراکین کو محتاط رہنے کو کہا گیا ہے۔

  • Share this:
افغانستان کے سفیر کی بیٹی کے اغوا کے بعد پاکستان میں ہندوستانی مشن محتاط: ذرائع
افغانستان کے سفیر کی بیٹی کے اغوا کے بعد پاکستان میں ہندوستانی مشن محتاط: ذرائع

اسلام آباد: پاکستان میں افغانستان کے سفیر کی بیٹی کو اسلام آباد سے اغوا کرنے کی خبر کے بعد ہندوستان بھی محتاط ہوگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق، ہندوستانی مشن اور ان کی فیملی کے اراکین کو محتاط رہنے کو کہا گیا ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ مشن کی سیکورٹی سے متعلق زیادہ احتیاط برتنے کو کہا گیا ہے۔

واضح رہے کہ افغانستان کے سفیر کی بیٹی کو اسلام آباد سے اغوا کرکے انہیں کئی گھنٹوں تک بندھک بنائے رکھا گیا اور اس کے ساتھ بے رحمی سے مار پیٹ کی گئی۔ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان کئی موضوعات پر ابھی تلخی ہے۔ سرحد پر سیز فائر ضرور ہے، لیکن پڑوسی ملک اپنی زمین سے ہندوستان کے خلاف دہشت گردانہ سرگرمیوں کو بڑھاوا دے رہا ہے۔


پاکستان میں افغان سفیر کی بیٹی کا اغوا ، گھنٹوں تک ٹارچر کرنے کے بعد رہا کردیا گیا
پاکستان میں افغان سفیر کی بیٹی کا اغوا ، گھنٹوں تک ٹارچر کرنے کے بعد رہا کردیا گیا


افغانستان کے سفیر نجیب اللہ علی خیل کی بیٹی سلسلہ علی خیل (26) کے ساتھ جمعہ کو ہوئے اس حیران کن حادثہ کے معاملے میں فی الحال کسی کو گرفتار نہیں کیا گیا ہے۔ افغانستان کے وزیر داخلہ نے معاملے کی فوری جانچ کا مطالبہ کیا ہے اور کہا کہ سلسلہ علی خیل کو ’بری طرح سے تشدد‘ کا نشانہ بنایا گیا۔ اسپتال کی میڈیکل رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ان کے سر پر حملے کئے گئے، کلائیوں اور پیروں پر رسی سے باندھے جانے کے نشان ہیں اور اس کے ساتھ بری طرح سے مارپیٹ کی گئی۔ خدشہ ہے کہ سفیر کی بیٹی کے جسم کی کئی ہڈیاں ٹوٹی ہوئی ہیں اور ایکسرے کرنے کے احکامات دیئے گئے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انہیں پانچ سے زیادہ گھنٹے تک بندھک بنائے رکھا گیا اور اسلام آباد پولیس انہیں اسپتال لے کر آئی۔ سلسلہ علی خیل کا اغوا کرنے اور رہائی کے تعلق سے تفصیلی اطلاع نہیں مل پائی ہے۔

پاکستان کی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا، ’سفارتی مشن ، سفارت کار اور ان کے اہل خانہ کے تحفظ بے حد اہم ہیں، اس طرح کے حادثات کو برداشت نہیں کیا جائے گا’۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 18, 2021 09:58 AM IST