ہوم » نیوز » عالمی منظر

افغانستان میں بارودی سرنگ دھماکہ ، تین بچوں سمیت 10 شہریوں کی موت

افغانستان کے مشرقی خوست صوبہ میں منگل کو ایک بارودی سرنگ دھماکہ میں تین بچوں سمیت 10 شہریوں کی موت ہو گئی ۔

  • UNI
  • Last Updated: Dec 17, 2019 08:52 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
افغانستان میں بارودی سرنگ دھماکہ ، تین بچوں سمیت 10 شہریوں کی موت
فائل فوٹو ۔

افغانستان کے مشرقی خوست صوبہ میں منگل کو ایک بارودی سرنگ دھماکہ میں تین بچوں سمیت 10 شہریوں کی موت ہو گئی ۔ پولیس کے ترجمان حیدرعادل نے بتایا کہ ضلع علی شیر میں یہ دھماکے مقامی وقت کے مطابق آج علی الصبح تقریبا پانج بجے اس وقت ہوا جب ایک گاڑی زمین کے اندر چھپائے گئے جدید اور طاقتور دھماکہ خیز آلہ (آئی ای ڈی) سے آپریٹ کیا گیا ۔ اس دھماکے میں گاڑی کے پرخچے اڑ گئے۔


انہوں نے گردآلود سڑک پر آئی ای ڈی لگانے کے لئے طالبان دہشت گرد گروپ کو مورد الزام ٹھہرایا۔ انہوں نے بتایا کہ طالبان دہشت گرد سڑک کے کنارے بم اور بارودی سرنگ بچھانے کے لئے ملک میں تیار آئی ای ڈی کا استعمال کر رہے ہیں ۔


ادھر افغانستان کے شمالی بلخ صوبہ کی راجدھانی مزار شریف میں بھی ایک زبردست دھماکہ ہوا ، جس میں کم از کم 22 لوگ زخمی ہوگئے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ مزار شریف میں ہوئے زوردار دھماکہ میں 22 لوگوں کو بلخ اسپتال کے ایمرجنسی وارڈ میں داخل کرایا گیا ہے۔ ان میں سے کسی کی حالت سنگین نہیں ہے ۔


صوبائی پولیس ترجمان عادل شاہ عادل نے بتایا کہ یہ دھماکہ دیسی دھماکہ کے ذریعہ کرایا گیا اور اسے شہر میں الوکوزئی اسکوائر میں سڑک کنارے ایک سائکل پر رکھا گیا تھا۔ زخمیوں میں ایک پولیس افسر اور ٹریفک پولیس کے تین جوان شامل ہیں ۔ سلامتی دستوں نے پورے علاقہ کا احتیاط کے طورپر محاصرہ کرلیا ہے۔ اب تک کسی بھی تنظیم نے اس کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

فوجی مہم میں 11 طالبان دہشت گرد ہلاک

دریں افغانستان کے صوبہ کندوز میں گزشتہ شب فوجی مہم میں 11 طالبانی دہشت گرد ہلاک ہو گئے اور کئی دیگر زخمی ہو گئے ۔ فوج کے ترجمان عبد لہادی جمال نے یہ اطلاع دی ۔ ہادی نےکہا کہ صوبہ کندوز کے ضلع چہار درہ کے عیسی خیل گاؤں میں رات کے وقت فوجی مہم چلائی گئی تھی ، جس میں 11 طالبان دہشت گرد مارے گئے اور 12 اے کے 57 رائفل سمیت گولہ بارود برآمد کیا گیا ہے۔ طالبان کی جانب سے اس واقعہ پر ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے ۔ واضح ر ہے کہ طالبان اس علاقے میں افغان حکومت کے خلاف کئی برسوں سے لڑائی چھیڑے ہوئے ہیں ۔ اس علاقے میں القاعدہ اور داعش کے دہشت گرد سکیورٹی فورسز کے لیے چیلنج بنے ہوئے ہیں ۔
First published: Dec 17, 2019 08:52 PM IST