ہوم » نیوز » عالمی منظر

طالبان کا اپنے دم پر سامنا کررہی ہے افغان سیکورٹی فورسیز ، 24 گھنٹے میں 262 طالبان ہلاک، ملک بھر میں کرفیو

طالبان (Taliban) کو شہروں پر حملہ کرنے سے روکنے کی کوشش کے طور پر حکومت نے ہفتہ کو تقریبا پورے ملک میں کرفیو لگا دیا ہے ۔ کابل اور دو دیگر صوبوں کے علاوہ رات دس بجے سے صبح چار بجے کے درمیان کسی بھی طرح کی آمد و رفت کی اجازت نہیں ہوگی ۔

  • Share this:
طالبان کا اپنے دم پر سامنا کررہی ہے افغان سیکورٹی فورسیز ، 24 گھنٹے میں 262 طالبان ہلاک، ملک بھر میں کرفیو
طالبان کا اپنے دم پر سامنا کررہی ہے افغانستان سیکورٹی فورسیز، 24 گھنٹے میں 262 طالبان ہلاک ۔ (AP)

کابل : افغانستان مین امریکی فوجیوں کی واپسی کے بعد افغان سیکورٹی فورسیز اپنے دم پر طالبان کا مقابلہ کررہی ہے ۔ افغانستان کی وزارت دفاع نے ہفتہ کو دعوی کیا کہ افغان سیکورٹی فورسیز نے 24 گھنٹے میں الگ الگ خطوں میں 262 طالبان کو مار گرایا ہے ۔ وزارت دفاع نے کہا کہ مہم کے دوران 176 طالبان زخمی بھی ہوئے ہیں ۔ وہیں 21 آئی ای ڈی کو ناکارہ بنایا گیا ہے ۔


افغانستان کی وزارت دفاع نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران لغمان ، ننگر ہار ، نورستان ، کونار ، پکتیہ ، قندھار ، ہیرات ، بلخ ، جیوجان ، ہیلمند ، قندوز اور کپسا خطوں میں اے این ڈی ایس ایف کی مہموں کے نتائج میں 162 طالبان مارے گئے اور 176 زخمی ہوئے ہیں ۔ اس کے علاوہ 21 آئی ای ڈی کو تلاش کرکے اس کو ناکارہ بنادیا گیا ہے ۔


پورے ملک میں لگایا گیا کرفیو


اس درمیان طالبان کو شہروں پر حملہ کرنے سے روکنے کی کوشش کے طور پر حکومت نے ہفتہ کو تقریبا پورے ملک میں کرفیو لگا دیا ہے ۔ کابل اور دو دیگر صوبوں کے علاوہ رات دس بجے سے صبح چار بجے کے درمیان کسی بھی طرح کی آمد و رفت کی اجازت نہیں ہوگی ۔ وزارت کے مطابق پورے ملک میں سیکورٹی مہمات مسلسل چلائی جارہی ہیں ۔ خاص طور پر ان علاقوں میں جہاں طالبان آگے بڑھے ہیں ۔

طالبان نے 90 فیصد علاقوں پر قبضہ کا کیا دعوی

امریکی فوجیوں کی واپسی کے بعد طالبان اور افغانستان کے درمیان گزشتہ دو ماہ سے تصادم جاری ہے ۔ طالبان کا دعوی ہے کہ اس نے ملک کے 90 فیصد علاقوں پر قبضہ کرلیا ہے ۔ غور طلب ہے کہ افغانستان سے غیر ملکی افواج کی 20 سال بعد تقریبا پوری طرح سے واپسی ہوگئی ہے ، جس کی وجہ سے طالبان نے زیادہ جارحانہ رخ اختیار کرتے ہوئے ملک کے آدھے حصہ پر قبضہ کرلیا ہے ۔

صوبہ فریاب طالبان کا اعلی کمانڈر زخمی

ادھر شمالی صوبہ فریاب میں اتوار کے روز بارودی سرنگ کے دھماکے میں 5 طالبان عسکریت پسند ہلاک اور ایک اعلی کمانڈر مفتی اسماعیل زخمی ہوگیا۔ پولیس نے آج یہ اطلاع دی ۔ فریاب پولیس نے اپنے بیان میں کہا کہ طالبان کے سربراہ کمانڈر مفتی اسمعیل شیرین تغاب ضلع میں طالبان کمانڈروں کے ساتھ میٹنگ میں حصہ لینے کے بعد واپس لوٹتے وقت ان کی کار کو بارودی سرنگ دھماکے سے نشانے بنایا گیا، جس میں پانچ عسکریت پسند مارے گئے اور وہ سنگین طور پر زخمی ہوگیا۔

طالبان عسکریت پسندوں نے فریاب صوبے کے سبھی سات اضلاع پر قبضہ کرلیا ہے اور کابل سے 425 کلو میٹر دور شمال مغربی میں واقع صوبائی راجدھانی ممنا کو بھی قبضے میں لینے کے لئے دباؤ بنا رہے ہیں ۔ تاہم طالبان کی جانب سے اس واقعہ پر ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں آیا ہے۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 26, 2021 09:06 AM IST