ہوم » نیوز » عالمی منظر

میڈیکل اسٹاف کو لے جا رہی بس پر Bomb Attack، ایک کی موت اور تین زخمی

Bomb Targets Health Workers in Kabul: فردوس فرامرز نے بتایا کہ فی الحال کسی دہشت گرد تنظیم نے حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے اور اس معاملے میں تفتیش کی جارہی ہے۔ یہ حملہ ایسے وقت میں ہوا ہے جب افغانستان سے 2500 سے 3500 امریکی فوجیوں کی واپسی کا عمل جاری ہے۔.

  • Share this:
میڈیکل اسٹاف کو لے جا رہی بس پر  Bomb Attack، ایک کی موت اور تین زخمی
طبی امدادی عملے کو لے جارہی منی بس پر حملہ

کابل۔  افغانستان Afghanistan کی راجدھانی کابل Kabul میں بدھ کی صبح طبی امدادی عملے کو لے جارہی منی بس کو نشانہ بناکر کئے بم حملے میں ایک شخص ہلاک ہوگیا۔ کابل پولیس کے ایک افسر نے اس بارے میں اطلاع دی ہے۔ کابل پولیس چیف کے ترجمان فردوس فرامرز نے بتایا کہ اس واقعے میں میڈیکل اسٹاف کے تین ملازم زخمی ہو گئے اور پولیس نے انہیں اسپتال میں داخل کرایا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ یہ بس ڈاکٹروں ، نرسوں اور دیگر طبی ملازموں کو کابل سے صوبہ پنجشیر لے جارہی تھی۔ یہ حملہ صوبہ کابل کے کلکان میں ہوا۔

فردوس فرامرز نے بتایا کہ فی الحال کسی دہشت گرد تنظیم نے حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے اور اس معاملے میں تفتیش کی جارہی ہے۔ یہ حملہ ایسے وقت میں ہوا ہے جب افغانستان سے 2500 سے 3500 امریکی فوجیوں کی واپسی کا عمل جاری ہے۔

افغانستان سے بیس سال کے بعد امریکی فوجیوں کی واپسی کا آخری مرحلہ ایک مئی کو رسمی طور سے شروع ہو گیا ۔  یہ حملہ اس آفیشیل تاریخ سے ایک دن پہلے ہوا ہے جب افغانستان سے امریکہ اور ناٹو بلوں کی وااپسی کا عمل شروع ہونا ہے۔ طالبان نے ایک مئی تک سبھی امریکی فورسز forcesکی واپسی کی مانگ کی ہے۔ اس نے واپس جانے والی forces کی سکیورٹی کی کوئی گارنٹی نہیں دی ہے۔ لوگار صوبہ میں امریکی یا ناٹو بل تعینات نہیں ہیں۔


افغانستان (Afghanistan) میں گیسٹ ہاؤس میں ایک خودکش ٹرک بم دھماکے میں 21 لوگ مارے گئے اور 90 دیگر افراد زخمی ہوگئے۔ ملک کے لوگار صوبہ کی راجدھانی پُل عالم میں جمعے کی دیر رات ہوئے اس حملے میں کسی نے فورا ذمے داری نہیں لی ہے۔ اس بارے میں بی ابھی کچھ پتہ نہیں چل پایا ہے کہ گیسٹ ہاؤس (Guest House) کو نشانہ کیوں بنایا گیا۔ افغانستان میں سرکار کے ذریعے گیسٹ ہاؤس (Guest House) میں رہنے کی مفت سہولت دی جاتی ہے اور یہ سہولت عام طور پر غریبوں، مسافروں اور طلبا کو دی جاتی ہے۔

لوگار صوبے کونسل کے سربراہ استانکجوئی نے بتایا کہ حملے کے وقت ایک گروپ وہاں ٹھہرا ہوا تھا اور کچھ کمروں میں دور دراز ضلعوں سے یونورسٹی کے داخلہ امتحان ینے آئے والے طلباء رکے ہوئے تھے۔ وزارت داخلہ کے ترجمان طارق آرین نے کہا کہ حملے کی جانچ جاری ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس حملے میں گیسٹ ہاؤس کی چھت ڈھہہ گئی اور ملبے میں لاشوں کے دبے ہونے کا اندیشہ ہے۔
Published by: Sana Naeem
First published: May 05, 2021 10:57 PM IST