ہوم » نیوز » عالمی منظر

Capitol Hill Violence: فیس بک۔انسٹاگرام نے 24 تو ٹویٹر نے 12 گھنٹے کیلئے بلاک کیا ڈونالڈ ٹرمپ کا اکاؤنٹ، کہا ہمیشہ کیلئے بند کر دیں گے ہینڈل

ٹویٹر نے امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا ٹویٹر اکاؤنٹ پالیسیوں کی خلاف ورزی کے سلسلے میں 12 گھنٹے کے لئے بند کردیا ہے۔

  • Share this:
Capitol Hill Violence: فیس بک۔انسٹاگرام نے 24 تو ٹویٹر نے 12 گھنٹے کیلئے بلاک کیا ڈونالڈ ٹرمپ کا اکاؤنٹ، کہا ہمیشہ کیلئے بند کر دیں گے ہینڈل
ٹویٹر نے امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا ٹویٹر اکاؤنٹ پالیسیوں کی خلاف ورزی کے سلسلے میں 12 گھنٹے کے لئے بند کردیا ہے۔

Donald Trump Twitter Suspended: امریکہ میں صدارتی انتخابات (US President Election 2020) کے نتائج کو لیکر سیاس جاری ہے۔ موجودہ صدر ڈونالڈ ٹرمپ جو بائیڈن سے اپنی ہار ماننے کو تیار نہیں ہیں۔ وہ چناؤ میں مسلسل دھاندھلی الزام لگا رہے ہیں اور الیکٹورل پروسز کو متاثر کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اس درمیان ڈونالڈ ٹرمپ کی حرکتوں سے تنگ آکر ٹویٹر، فیس بک اور انسٹاگرام نے سخت ایکشن لیا ہے۔ مائیکرو بلاگنگ پلیٹ فارم ٹویٹر نے ٹرمپ کا اکاؤنٹ بارہ گھنٹے کیلئے بند  کر دیا ہے۔


ٹویٹر نے امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا ٹویٹر اکاؤنٹ پالیسیوں کی خلاف ورزی کے سلسلے میں 12 گھنٹے کے لئے بند کردیا ہے۔ ٹویٹر نے بدھ کے روز یہاں جاری ایک بیان میں کہا ہے کہ اگر ڈونالڈ ٹرمپ ہماری شہری سالمیت یا تشدد سے متعلق ان کی پالیسیوں کی مستقبل میں خلاف ورزی کرتے ہیں تو ان کے زاتی اکاؤنٹ کو مستقل طور پرمعطل کر دیاجائے گا۔ کمپنی نے کہا کہ ڈونالڈ  ٹرمپ کی جانب سے حال ہی میں پوسٹ کئے گئے تین ٹویٹس کو آج ہٹا دیا گیا ہے کیونکہ انہوں نے کیپیٹل ہل پر پرتشدد صورتحال کے درمیان ان کی پالیسی کی خلاف ورزی کی ہے ۔ اس کے نتیجے میں ان کا اکاؤنٹ 12 گھنٹوں کے لئے ہو جائے گا۔


فیس بک نے 24 گھنٹے کیلئئ بلاک کیا ٹرمپ کا پیج


وہیں فیس بک نے بھی پوسٹ کیا کہ وہ دو پالیسی کی خلاف ورزی کے چلتے ٹرمپ کے پیچ پر پوسٹنگ کو چوبیس گھنٹے کیلئے روک رہے ہیں۔ کیپیٹل ہل پر ٹرمپ لے حامیوں کے تشدد کو لیکر فیس بک نیوز روم سے ٹویٹ کیا گیا، صڈر ٹرمپ کے خلاف ہم نے دو وائلینس پالیسی کے تحت ایکشن لیا ہے۔ ڈونالڈ ٹرمپ کا فیس بک پیج چوبیس گھنٹے کے لئے بلاک کر دیا گیا ہے۔ ان کا ایک ویڈیو بھی ہتا لیا گیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ٹرمپ اس دوران اپنے اکاؤنٹ سے کوئی بھی پوسٹ نہیں کر پائیں گے۔



انسٹاگرام نے بھی 24 گھنٹے کیلئئ ٹرمپ کے اکاؤنٹ پر لگائی پابندی

ٹویٹر۔فیس بک کے بعد انسٹاگرا، نے بھی ڈونالڈ ٹرمپ کو چوبیس گھنٹے کیلئے بلاک کر دیا ہے۔ انسٹاگرام کے ہیڈ ایڈم مسویری نے کہا، ہم صدر ٹرمپ کا انسٹاگرام اکاؤنٹ چوپیس گھنٹے کے لئے لاک کر رہے ہیں۔



3 نومبر کو امریکی صدر انتخابات (US President Elections 2020) کے بعد امریکہ میں تشدد کا خدشہ ظاہر کیا گیا تھا۔ 3 نومبر کو ہی یہ طے ہوگیا تھا کہ جو بائیڈن (Joe Biden) دنیا کے طاقتور ترین ملک کے اگلے صدر ہوں گے لیکن ڈونلڈر ٹرمپ کو یہ منظور نہیں ہے، وہ ہار ماننے کو تیار نظر نہیں آرہے۔ ٹرمپ نے انتخابی دھاندلی کا الزام لگا کر رائے عامہ کی تردید کرتے رہے۔ ادھر واشنگٹن ڈی سی کے کیپیٹل ہل پر (Capitol Hill Violence) ٹرمپ کے حامی پرتشدد ہوگئے۔ اس نے پارلیمنٹ میں توڑ پھوڑ اور ہنگامہ کیا۔ اس دوران پولیس کے ساتھ جھڑپ میں فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔ گولی لگنے سے ایک خاتون سمیت کم از کم چار افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ پولیس نے بھاری مقدار میں دھماکہ خیز مواد بھی برآمد کیا ہے۔ فوج کی خصوصی یونٹ نے مظاہرین کو پسپا کردیا۔ فی الحال واشنگٹن ڈی سی میں جمعرات کی شام 6 بجے تک کرفیو ہے۔



فیس بک نے ہٹایا ڈونالڈ ٹرمپ کا ویڈیو ۔۔۔



ٹرمپ نے کی امن کی اپیل۔۔

ادھر صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے حامیوں سے امن کی اپیل کی ہے۔حالات کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے نیشنل گارڈ روانہ کردیا گیا۔ وائٹ ہاؤس کے پریس سکریٹری نے ٹویٹ کیا کہ صدر ٹرمپ کی ہدایت پر نیشنل گارڈ اور سینٹرل سیکیورٹی فورس کے دیگر اہلکار روانہ کردیئے گئے ہیں۔ ہم تشدد کے خلاف اور امن برقرار رکھنے کے لئے صدر کی اپیل کا اعادہ کررہے ہیں۔
کیپٹل ہل کیا ہے ؟

کیپٹل ہل امریکہ میں مرکزی حکومت کی قانون ساز شاخ کے طور پر مشہور ہے۔ امریکی کانگریس کے ممبروں کے علاوہ ، سینیٹ کے ممبران اور دیگر نمائندہ عارضی ایوان بھی یہاں ہی کام کرتے ہیں۔ امریکی ایوان نمائندگان اور سینیٹ کی عمارتوں کا پورا کمپلیکس یہاں موجود ہے۔ اس کے علاوہ ، لائبریری آف کانگریس اور امریکن کیپیٹل بلڈنگ بھی یہاں واقع ہے۔ایوان نمائندگان کی مشہور سفید گنبد عمارات اور سینیٹ کا میٹنگ چیمبر بھی یہاں موجود ہے۔ ایک طرح سے ، کیپٹل ہل کو امریکہ کے دارالحکومت واشنگٹن کی حکمرانی اور انتظامیہ کا مرکز سمجھا جاتا ہے۔ اس عمارت کو قومی اہمیت اور صدارتی انضمام کے بہت سے تہواروں کے لئے بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ یہاں امریکی فن اور تاریخ کا ایک میوزیم موجود ہے ، جہاں ہر سال لاکھوں سیاح پہنچتے ہیں۔

یہاں کون کام کرتا ہے؟
امریکی کانگریس کے ممبروں کے علاوہ ، سینیٹ کے ممبران اور دیگر نمائندہ عارضی ایوان بھی یہاں کام کرتے ہیں۔ یہاں اعلیٰ عہدیداروں اور رہنماؤں کی میٹنگیں ہوتی ہیں اور اس علاقے میں سرکاری ملازمین اور انتظامیہ کی ایک بڑی تعداد روزانہ یہاں آتی ہے۔ ہم آپ کو بتادیں کہ وائٹ ہاؤس سے کیپیٹل ہل صرف دو میل یا ساڑھے تین کلومیٹر دور واقع ہے ، جہاں ٹرمپ کے حامی انتخابی ووٹوں کی گنتی روکنے کے لئے تشدد کرتے ہیں جو بائیڈن کو صدر بننے سے روکنے کے لئے کیے جانے والے اس تشدد سے ٹرمپ انتظامیہ کے بہت سے افسران و بھی ناراض ہے۔ این ایس اے رابرٹ برائن سمیت 3 اعلی عہدیداروں نے استعفی دینے کی پیش کش کی ہے۔وہیں وائٹ ہاؤس کی ڈپٹی پریس سکریٹری اوردیگرافسروں نےاستعفیٰ دے دیاہے۔سارامیتھیوزاوردیگرافسروں نے تشدد کے پیش نظر ٹرمپ انتظامیہ سے استعفیٰ دیاہے۔
Published by: Sana Naeem
First published: Jan 07, 2021 11:19 AM IST