உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اچانک شخص کے پرائیویٹ پارٹ سے آنے لگی عجیب سی آواز، ایکسرے دیکھ کر ڈاکٹر کے اڑے ہوش

    معلومات کے مطابق چند روز قبل اس شخص کی سرجری ہوئی تھی لیکن اس آپریشن کے بعد ان کی پریشانی مزید بڑھ گئی۔ اس کے بعد اچانک اسے اپنی شرمگاہ سے سانپ کی طرح سرسراہٹ کی آواز آنے لگی۔

    معلومات کے مطابق چند روز قبل اس شخص کی سرجری ہوئی تھی لیکن اس آپریشن کے بعد ان کی پریشانی مزید بڑھ گئی۔ اس کے بعد اچانک اسے اپنی شرمگاہ سے سانپ کی طرح سرسراہٹ کی آواز آنے لگی۔

    معلومات کے مطابق چند روز قبل اس شخص کی سرجری ہوئی تھی لیکن اس آپریشن کے بعد ان کی پریشانی مزید بڑھ گئی۔ اس کے بعد اچانک اسے اپنی شرمگاہ سے سانپ کی طرح سرسراہٹ کی آواز آنے لگی۔

    • Share this:
      دنیا میں کئی طرح کے عجیب و غریب طبی (Weird Medical Condition) حالات منظر عام پر آتے ہیں۔ کبھی ڈاکٹروں کی غفلت اس کی وجہ بن جاتی ہے تو کبھی کوئی اور وجہ۔ یہ معاملات طبی دنیا میں برسوں سے کام کرنے والے ڈاکٹروں کو بھی حیران کر دیتے ہیں۔ ایسا ہی ایک انوکھا کیس امریکہ کے شہر اوہائیو (Ohio, America) سے سامنے آیا۔ یہاں ایک بزرگ شخص کے پرائیویٹ پارٹ سے اچانک پھپھکارنے (Hissing Noice From Private Part) کی آواز آنے لگی۔ ڈاکٹروں نے اس کا معائنہ کیا تو یہ نایاب طبی حالات میں سے ایک نکلا۔

      معلومات کے مطابق چند روز قبل اس شخص کی سرجری ہوئی تھی لیکن اس آپریشن کے بعد ان کی پریشانی مزید بڑھ گئی۔ اس کے بعد اچانک اسے اپنی شرمگاہ سے سانپ کی طرح سرسراہٹ کی آواز آنے لگی۔ جی ہاں آپ نے اسے صحیح پڑھا۔ اس شخص کے پرائیویٹ پارٹ سے سرسراہٹ کی آواز آرہی تھی۔ جب اس 72 سالہ شخص نے باتھ روم میں یہ آواز سنی تو وہ فوراً اسپتال گیا۔ جب تک وہ وہاں پہنچا، اس کی سانس پھولنے لگی تھی اور اس کے چہرے پر سوجن تھی۔

      امریکن جرنل آف کیس رپورٹس کے مطابق اس شخص کی یہ حالت ایکسرے رپورٹ میں معلوم ہوئی۔ دراصل اس شخص کے جسم میں ایک عجیب و غریب کیفیت تھی۔ اس میں جسم کے اندر بہت سی ہوا بھر جاتی ہے جس کی وجہ سے اس کے پھیپھڑوں نے کام کرنا چھوڑ دیا۔ اگر اسے نظر انداز کر دیا جاتا تو اس کے دل اور پھیپھڑوں کو ہمیشہ کے لیے نقصان پہنچ سکتا تھا جو بالآخر اس کی موت کا باعث بن سکتا تھا۔ اس کے علاوہ ہوا بھی ان کے پرائیویٹ پارٹ میں قید تھی۔ اس نایاب حالت کو نیوموسکروٹم pneumoscrotum کہتے ہیں۔ جس کی وجہ سے اس کی پرائیویٹ پارٹ سے سسکی کی آواز آرہی تھی۔ ڈاکٹروں نے ان کے سینے میں ٹیوپ لگاکر ہوا نکالنے کی کوشش کی۔ اس کے بعد اس شخص کو دوسرے اسپتال میں داخل کرا دیا گیا۔








      اس سرجری کے بعد بھی اس شخص کی حالت بہتر نہیں ہوئی۔ اگلے دو سال تک ان کے پرائیویٹ پارٹ سے مسلسل آوازیں آتی رہیں۔ ڈاکٹروں کے مطابق کافی عرصہ ہو گیا ہے۔ رپورٹس کے مطابق اب ڈاکٹروں نے اس مسئلے کے لیے سرجری کرانے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سرجری میں اس شخص کے دونوں testicles کو کاٹ کر الگ کیا جائے گا۔ اس شخص کی حالت کے بارے میں ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ یہ بہت rare case ہے۔ اب سرجری ہی واحد حل ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: