اپنا ضلع منتخب کریں۔

    پرائیویٹ پارٹ کی وجہ سے شخص کو گنوانی پڑی نوکری، بولا، انٹرویو کے بعد یہ لفظ سن کر نہیں ہوا یقین

    بہت سی جگہوں پر پہلے ٹیسٹ دینے پڑتے ہیں اور پھر انٹرویو کے کئی راؤنڈ ہوتے ہیں جن میں کامیاب ہونے کے بعد ہی نوکری کے لیے منتخب کیا جا سکتا ہے لیکن تصور کریں کہ اگر آپ کو انٹرویو کے آخری دور میں بمشکل پہنچنے کے بعد آپ کی شکل کی بنیاد پر نکال دیا جائے تو کیسا لگے گا؟

    بہت سی جگہوں پر پہلے ٹیسٹ دینے پڑتے ہیں اور پھر انٹرویو کے کئی راؤنڈ ہوتے ہیں جن میں کامیاب ہونے کے بعد ہی نوکری کے لیے منتخب کیا جا سکتا ہے لیکن تصور کریں کہ اگر آپ کو انٹرویو کے آخری دور میں بمشکل پہنچنے کے بعد آپ کی شکل کی بنیاد پر نکال دیا جائے تو کیسا لگے گا؟

    بہت سی جگہوں پر پہلے ٹیسٹ دینے پڑتے ہیں اور پھر انٹرویو کے کئی راؤنڈ ہوتے ہیں جن میں کامیاب ہونے کے بعد ہی نوکری کے لیے منتخب کیا جا سکتا ہے لیکن تصور کریں کہ اگر آپ کو انٹرویو کے آخری دور میں بمشکل پہنچنے کے بعد آپ کی شکل کی بنیاد پر نکال دیا جائے تو کیسا لگے گا؟

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaBritain
    • Share this:
      آج کے دور میں کسی کے لیے بھی نوکری تلاش کرنا بہت مشکل ہو گیا ہے۔ بہت سی جگہوں پر پہلے ٹیسٹ دینے پڑتے ہیں اور پھر انٹرویو کے کئی راؤنڈ ہوتے ہیں جن میں کامیاب ہونے کے بعد ہی نوکری کے لیے منتخب کیا جا سکتا ہے لیکن تصور کریں کہ اگر آپ کو انٹرویو کے آخری دور میں بمشکل پہنچنے کے بعد آپ کے لک کی بنیاد پر نکال دیا جائے تو کیسا لگے گا؟ برطانیہ سے تعلق رکھنے والے ایک شخص کے ساتھ بھی ایسا ہی ہوا جب وہ اپنے چہرے یا جسم کے سائز کی بنیاد پر نہیں بلکہ اپنے پرائیویٹ پارٹ کے سائز کی وجہ سے ملازمت سے ہاتھ دھونا پڑ گیا۔

      دی سن ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق برطانیہ کا رہائشی 22 سالہ  جو (Joe)   حال ہی میں ہاتھ سے نوکری سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ اس کی وجہ جو کا پرائیویٹ پارٹ تھا۔ رپورٹ کے مطابق جو کے پرائیویٹ پارٹ کا سائز (Britain man private part lost job) عام انسانوں سے بڑا ہے۔ اس وجہ سے جب وہ کسی عوامی جگہ پر جاتے ہیں تو لوگوں کی توجہ اس کی پتلون کی طرف چلا جاتا ہے جس کی وجہ سے لوگ بہت شرمندہ ہوتے ہیں۔ لوگوں کو  محسوس ہوتا ہے  کہ وہ  ایک الگ جوش میں  ہیں جسے ہر کوئی برا سمجھتا ہے اور ان سے دوری بنا لیتا ہے۔

      گنوانی پڑی نوکری: 
      جو کے ساتھ سب سے برا ہوا جب وہ اپنی ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ انہوں نے بتایا کہ وہ نوکری کے لیے انٹرویو دے رہے تھے اور آخری مرحلے پر پہنچ چکا تھا۔ انہیں امید تھی کہ انہیں یہ نوکری ضرور ملے گی لیکن ایسا نہ ہو سکا۔ انٹرویو کے بعد انہیں بتایا گیا کہ انٹرویو کے دوران ان کا رویہ قابل اعتراض تھا اور وہ مناسب لباس نہیں پہنے ہوئے تھے۔ اس سے انہیں بہت تکلیف ہوئی اور وہ بہت مایوس ہوگئے۔

       

      ہندوستانی خواتین کرکٹرز کی میچ فیس اب مردوں کے برابر، بی سی سی آئی نے کیا بڑا اعلان


      خاص انڈر ویئر بنوانے کیلئے خرچ کرنے پڑتے ہیں ہزاروں روپئے
      ان کے دوست اور کچھ جاننے والے بھی انکی جسمانی بناوٹ کی وجہ سے انہیں تنگ کرتے ہیں۔ ہر کوئی یہ سوچتا ہے کہ ان کی لو لائف بہت اچھی ہوگی لیکن ایسا نہیں ہے کیونکہ انہیں صرف دو طرح کی لڑکیاں ملتی ہیں جو انہیں صرف ایک عجوبہ کی طرح دیکھنا چاہتی ہیں، کوئی رشتہ نہیں رکھنا چاہتیں اور دوسری وہ جو سیدھے طور پر انکار کر دیتی ہیں انہوں نے بتایا کہ اپنے پرائیویٹ پارٹ کو چھپانے کے لیے انہیں خصوصی انڈرویئر بنوانا پڑتا ہے جس کی وجہ سے انہیں ہر ماہ انڈرویئر پر صرف 19 ہزار روپے خرچ کرنے پڑتے ہیں۔ اس کے باوجود وہ مذاق کا نشانہ بن جاتے ہیں اور بعض اوقات انہیں گھر سے نکلنے میں بھی شرم آتی ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: