உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    طالبان کے قہر سے افغانیوں کو بچانے میں امریکہ مصروف، ہر ہفتے جاری کر رہا ہے 800 سے زیادہ ویزا

    Afghanistan Crisis: امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے کہا کہ ’کابل اور واشنگٹن ڈی سی (Washington DC) واقع سفارت خانہ میں کاونسلر اسٹاف بڑھانے کے ساتھ، ہم جو ویزا جاری کرنے کے اہل ہیں، وہ اعدادوشمار مارچ میں  100 سے 813 ہر ہفتے پر پہنچ گیا ہے‘۔

    Afghanistan Crisis: امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے کہا کہ ’کابل اور واشنگٹن ڈی سی (Washington DC) واقع سفارت خانہ میں کاونسلر اسٹاف بڑھانے کے ساتھ، ہم جو ویزا جاری کرنے کے اہل ہیں، وہ اعدادوشمار مارچ میں 100 سے 813 ہر ہفتے پر پہنچ گیا ہے‘۔

    Afghanistan Crisis: امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے کہا کہ ’کابل اور واشنگٹن ڈی سی (Washington DC) واقع سفارت خانہ میں کاونسلر اسٹاف بڑھانے کے ساتھ، ہم جو ویزا جاری کرنے کے اہل ہیں، وہ اعدادوشمار مارچ میں 100 سے 813 ہر ہفتے پر پہنچ گیا ہے‘۔

    • Share this:
      واشنگٹن: امریکہ (America) میں جو بائیڈن انتظامیہ (Biden Administration) مسلسل افغانستان (Afghanistan) چھوڑ کر بھاگ رہے لوگوں کی مدد کرنے کے عمل میں اضافہ کر رہا ہے۔ امریکہ ہر ہفتے 813 ویزا جاری کر رہا ہے۔ جبکہ مارچ میں یہ اعدادوشمار 100 تھا۔ جمعہ کو امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے اس بات کی اطلاع دی ہے۔ حال ہی کے دنوں میں انتظامیہ کے افسران خصوصی تارکین وطن ویزا درخواست دہندگان کی فہرست نکالنے کے لئے اوور ٹائم کر رہے ہیں۔

      نیل پرائس نے کہا، ’کابل اور واشنگٹن ڈی سی واقع سفارت خانہ میں کاونسلر اسٹاف بڑھانے کے ساتھ، ہم جو ویزا جاری کرنے کے اہل ہیں، وہ اعدادوشمار مارچ میں  100 سے 813 ہر ہفتے پر پہنچ گیا ہے‘۔ انہوں نے کہا، ’ہم یقینی طور پر ایسی سرکار نہیں دیکھنا چاہتے، جو لوگوں کو ہرجگہ ملے حقوق سے محروم رکھتی ہے‘۔ ترجمان نے بتایا، ’فی الحال، ہمارے پاس ایئر پورٹ کمپاونڈ (کابل، افغانستان) سے آگے جانے کے وسائل نہیں ہیں‘۔

       صدر جو بائیڈن نے کہا تھا کہ امریکہ کل 50 ہزار افغانیوں کو نکالنے کے بارے میں سوچ رہا ہے۔ ان میں افغان ویزا اور پناہ گزینوں کی درخواستوں کے ساتھ ان کی فیملی شامل ہیں۔

      صدر جو بائیڈن نے کہا تھا کہ امریکہ کل 50 ہزار افغانیوں کو نکالنے کے بارے میں سوچ رہا ہے۔ ان میں افغان ویزا اور پناہ گزینوں کی درخواستوں کے ساتھ ان کی فیملی شامل ہیں۔


      سی این این کی رپورٹ میں محکمہ خارجہ کے حوالے سے لکھا گیا کہ ہفتہ واری ویزا جاری کرنے کا عمل مارچ اور ابتدائی آغاز کے درمیان خصوصی طور پر اضافہ کیا گیا ہے۔ ایک افسر نے کہا کہ مہینوں سے چلی داخلی تبادلہ خیال کے بعد بھی اس بات کا فیصلہ لینے میں کمی تھی کہ کیسے ویزا کے کام کو سنبھالا جائے اور اس میں تیزی لائی جائے۔ اس دوران افسران کے سامنے سب سے بڑا چیفلنج ان افغانوں کے مطالبات کو پورا کرنے کا ہے، جو افغانستان چھوڑنے اور امریکہ پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

      صدر جو بائیڈن نے کہا تھا کہ امریکہ کل 50 ہزار افغانیوں کو نکالنے کے بارے میں سوچ رہا ہے۔ ان میں افغان ویزا اور پناہ گزینوں کی درخواستوں کے ساتھ ان کی فیملی شامل ہیں۔ محکمہ خارجہ کے مطابق، جو بائیڈن کے عہدہ سنبھالنے کے دوسران 17000 ایس آئی وی درخواست عمل میں تھے۔ وہیں، کورونا وائرس وبا کے سبب کابل میں مارچ 2020 کے بعد سے ہی کوئی انٹرویو نہیں ہوئے تھے۔ حالانکہ، فروری کے آغاز میں انٹرویو کا عمل دوبارہ شروع ہوا، لیکن کورونا کے سبب عارضی طور پر اسے دوبارہ بند کرنا پڑا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: