உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے کہا- طالبان عام شہری، امریکہ نے افغانستان میں سب خراب کردیا

    پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے کہا- طالبان عام شہری، امریکہ نے افغانستان میں سب خراب کردیا

    پاکستانی وزیر اعظم عمران خان (Imran Khan) نے کہا، ’امریکہ (USA) نے جب اس بات کو سمجھا کہ افغانستان (Afghanistan) کی پریشانی کا فوجی حل نہیں نکالا جاسکتا، تب تک بہت تاخیر ہوچکی تھی۔ ایک وقت افغانستان میں امریکہ کے 10 ہزار سے زیادہ فوجی تھے۔ صحیح معنوں میں یہی وہ وقت تھا، جب امریکہ کو طالبان (Taliban) سے سمجھوتہ کرنا چاہئے تھا‘۔

    • Share this:
      اسلام آباد: افغانسان میں مبینہ دہشت گرد تنظیم طالبان کا اثر بڑھتا جا رہا ہے۔ حالات بد سے بدتر ہوتے جارہے ہیں۔ اس درمیان پاکستان (Pakistan) کے وزیرا عظم عمران خان (Imran Khan) نے افغانستان (Afghanistan) کے موجودہ حالات کے لئے امریکہ کو ہی ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔ عمران خان نے کہا، ’امریکہ (یو ایس اے) نے طالبان کو ٹھیک سے ہینڈل نہیں کیا‘۔ طالبان عام شہری ہیں، وہ کوئی ملٹری ڈریس میں نہیں ہیں۔ امریکہ یہ سمجھ نہیں پایا۔ یو ایس اے نے وہاں سب خراب کردیا۔

      امریکی نیوز چینل پی بی ایس کے صحافی جوڈی ووڈوف کو دیئے انٹرویو میں پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے یہ باتیں کہی۔ اس انٹرویو کو پاکستان میں منگل کی رات میں نشر کیا گیا۔ عمران خان نے کہا، ’افغانستان کی پریشانی کا حل فوج کے ذریعہ نہیں نکالا جاسکتا ہے۔ میں شروع سے ہی یہ کہتا آیا ہوں، لیکن میری بات کبھی نہیں سنی گئی۔ الٹا مجھے طالبان اور امریکہ مخالف کہہ کر مخاطب کیا گیا‘۔

      امریکہ سے ہوئیں یہ غلطیاں

      پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے کہا، ’امرکہ نے جب اس بات کو سمجھا کہ افغانستان کی پریشانی کا فوجی حل نہیں نکالا جاسکتا، تب تک بہت تاخیر ہوچکی تھی۔ ایک وقت افغانستان میں امریکہ کے 10 ہزار سے زیادہ فوجی تھے۔ صحیح معنوں میں یہی وہ وقت تھا، جب امریکہ کو طالبان سے سمجھوتہ کرنا چاہئے تھا‘۔ پاکستان کے وزیر اعظم نے کہا، ’سیاسی سمجھوتہ ہی افغانستان کے مستقبل کے لئے بہتر ہے۔ یہی واحد راستہ بھی ہے، سچ یہ ہے کہ اب طالبان افغانستان کی حکومت میں شامل رہے گا۔

       پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے کہا، ’امرکہ نے جب اس بات کو سمجھا کہ افغانستان کی پریشانی کا فوجی حل نہیں نکالا جاسکتا، تب تک بہت تاخیر ہوچکی تھی۔

      پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے کہا، ’امرکہ نے جب اس بات کو سمجھا کہ افغانستان کی پریشانی کا فوجی حل نہیں نکالا جاسکتا، تب تک بہت تاخیر ہوچکی تھی۔


      طالبان کو فنڈنگ کا الزام غلط

      عمران خان نے طالبان کو پاکستان کی طرف سے فنڈنگ کرنے کے الزامات کو مسترد کیا۔ انہوں نے کہا، ’یہ بالکل غلط الزام ہے۔ القاعدہ نے جب ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر حملہ کیا تو اس میں ایک بھی پاکستانی شہری شامل نہیں تھا۔ اس وقت طالبان کا کوئی جنگجو پاکستان میں نہیں تھا۔ امریکہ اور طالبان کی لڑائی میں 70 ہزار سے زیادہ پاکستانی شہریوں کی موت ہوچکی ہے۔ افغانستان میں چل رہے جنگ سے پاکستان کو 150 بلین ڈالر کا نقصان ہوا ہے‘۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: