உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بم کے خطرے کے سبب سین فرانسیسکو ایئرپورٹ کا ٹرمینل خالی کرایا گیا، حراست میں ایک شخص

    bomb threat: پولیس حکام نے بتایا کہ مسافروں کو جمعہ کی رات سین فرانسسکو کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے بین الاقوامی ٹرمینل سے بم کے خطرے کی وجہ سے نکالا گیا۔

    bomb threat: پولیس حکام نے بتایا کہ مسافروں کو جمعہ کی رات سین فرانسسکو کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے بین الاقوامی ٹرمینل سے بم کے خطرے کی وجہ سے نکالا گیا۔

    bomb threat: پولیس حکام نے بتایا کہ مسافروں کو جمعہ کی رات سین فرانسسکو کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے بین الاقوامی ٹرمینل سے بم کے خطرے کی وجہ سے نکالا گیا۔

    • Share this:
      امریکی سان فرانسسکو کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے ٹرمینل کو بم کے خطرے bomb threat کے پیش نظر خالی کرا لیا گیا ہے۔ اس معاملے میں ایک شخص کو حراست میں لیا گیا ہے۔ لاس اینجلس ٹائمز کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بم کی دھمکی ملنے کے بعد سین فرانسسکو کے ہوائی اڈے سے لوگوں کو نکال لیا گیا۔ ایک شخص کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

      پولیس حکام نے بتایا کہ مسافروں کو جمعہ کی رات سین فرانسسکو کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے بین الاقوامی ٹرمینل سے بم کے خطرے کی وجہ سے نکالا گیا۔ سین فرانسسکو پولیس ڈیپارٹمنٹ کے ترجمان نے کہا کہ ہوائی اڈے کے حکام کو بم کی دھمکی کی اطلاع ملی تھی۔ اس کے علاوہ ایک مشتبہ پیکج بھی ملا ہے اور خیال کیا جاتا ہے کہ یہ شے ممکنہ طور پر آتش گیر ہے۔ اس واقعہ کے سلسلے میں ایک شخص کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

      لیپ ٹاپ۔کمپیوٹر میں وائرس ڈال کر کی 170 کروڑ روپئے کی ٹھگی، فرضی کال سینٹر کے 10لوگ گرفتار

       اس نئی بیماری سے پھیلی دہشت! 15 اور زد میں، جانئے کیا ہیں علامات اور بچاؤ کے طریقے

      بڑی تعداد میں فورسز کے ساتھ ایکسپلوسیو آرڈیننس ڈسپوزل یونٹ کو بھی ایئرپورٹ پر تعینات کر دیا گیا ہے اور معاملے کی تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ ایئرپورٹ حکام نے واقعے کی تصدیق کردی ہے۔ ہوائی اڈے کے حکام نے بتایا کہ پولیس کی کچھ کارروائی کی وجہ سے لوگوں کو بین الاقوامی ٹرمینل سے نکالا گیا اور مسافروں سے کہا گیا ہے کہ وہ اگلے اطلاع تک بین الاقوامی ٹرمینل پر آنے سے گریز کریں۔ حکام نے بتایا کہ ایئر ٹرین اور بارٹ خدمات معطل کر دی گئی ہیں۔ جبکہ مسافروں کو چھوڑنے اور پک اپ کی سروس صرف گھریلو ٹرمینلز پر چلتی ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: