உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Explained: افغانستان میں 20سال تک امریکہ کادبدابہ، لیکن آخر پسپائی کیوں؟ امریکہ نے افغانستان میں کتنا کیاخرچ؟

    خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) نے مزید کہا کہ چونکہ امریکہ نے اس کی ادائیگی کے لیے زیادہ تر رقم ادھار لی تھی، اس لیے امریکیوں کی نسلیں اس کی ادائیگی کی قیمت سے بوجھل ہوں گی ۔ 2050 تک ان قرضوں کی لاگت 6.5 ٹریلین ڈالر تک جا سکتی ہے۔

    خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) نے مزید کہا کہ چونکہ امریکہ نے اس کی ادائیگی کے لیے زیادہ تر رقم ادھار لی تھی، اس لیے امریکیوں کی نسلیں اس کی ادائیگی کی قیمت سے بوجھل ہوں گی ۔ 2050 تک ان قرضوں کی لاگت 6.5 ٹریلین ڈالر تک جا سکتی ہے۔

    خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) نے مزید کہا کہ چونکہ امریکہ نے اس کی ادائیگی کے لیے زیادہ تر رقم ادھار لی تھی، اس لیے امریکیوں کی نسلیں اس کی ادائیگی کی قیمت سے بوجھل ہوں گی ۔ 2050 تک ان قرضوں کی لاگت 6.5 ٹریلین ڈالر تک جا سکتی ہے۔

    • Share this:
      بالآخر امریکی فوجی اگست کے آخر تک افغانستان سے نکل چکے تھے۔ اب واشنگٹن کو اپنے اچانک خاتمے اور طالبان کے قبضے کے بعد تقریبا 7000 فوجیوں کو ملک واپس بھیجنا پڑا ہے۔ افغانستان میں جنگ کا اختتام ہوا۔ جو امریکہ نے سب سے طویل عرصے تک لڑا ہے۔ اب امریکہ جلدی انخلاء اور شدید تنقید کی لپیٹ میں آگیا ہے کیونکہ امریکہ پر الزام لگایا گیا ہے کہ اس نے اپنے بیانیہ کو آگے بڑھانے کی کوشش کرتے ہوئے تقریبا 20 سال گزارنے کے بعد ملک کو اپنی قسمت میں چھوڑ دیا۔ امن اور استحکام لانے کا مقصد اس کے لیے اب جو کچھ دکھانا پڑ سکتا ہے وہ ایک بہت بڑا بل اور ہزاروں کی تعداد میں مرنے والوں کی تعداد ہوسکتی ہے۔

      امریکہ کے لیے افغان جنگ کی قیمت کتنی ہے؟

      اس سلسلے میں کوئی صحیح اعداد و شمار دستیاب نہیں ہے یا اس بارے میں یکطرفہ بدنامی کے لیے کئی اعداد و شمار گڑھ لیے گئے ہیں۔ یہ اس بات پر منحصر ہے کہ کوئی اس کا حساب کیسے کرتا ہے۔ امریکی خصوصی انسپکٹر جنرل برائے افغان تعمیر نو (SIGAR) کی تازہ ترین سہ ماہی رپورٹ 30 جولائی 2021 ہو جاری ہوئی تھی۔ امریکی محکمہ دفاع (ڈی او ڈی) کے اعداد و شمار بہ عنوان ’’آپریشن اینڈرونگ فریڈم اور آپریشن فریڈم سینٹینل‘‘ میں کہا گیا ہے کہ افغانستان میں شمولیت کی مجموعی لاگت 837.3 بلین ڈالر ہے۔

      سیگار کی رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ یو ایس ایڈ سمیت دیگر امریکی ریاستوں اور سویلین ایجنسیوں نے افغان تعمیر نو کے لیے 132.9 ارب ڈالر کی "مجموعی ذمہ داریوں" کی اطلاع دی ہے۔ بی بی سی کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکی ڈی او ڈی کی جانب سے افغانستان میں خرچ کی جانے والی زیادہ تر رقم "انسداد بغاوت کی کارروائیوں ، خوراک ، لباس ، طبی دیکھ بھال ، خصوصی تنخواہ اور دیگر فوائد جیسی فوجیوں کی ضروریات پر خرچ کی گئی تھی۔ سب سے زیادہ سالانہ اخراجات افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعیناتی کے لیے کی گئی۔

      اسی طرح یہ بھی نوٹ کیا گیا کہ ’’افغانستان میں 20 سالہ جنگ کے لیے امریکی اخراجات کا ایک غیر سرکاری تخمینہ DoD کے حساب سے دوگنا ہے"۔ خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) نے مزید کہا کہ چونکہ امریکہ نے اس کی ادائیگی کے لیے زیادہ تر رقم ادھار لی تھی، اس لیے امریکیوں کی نسلیں اس کی ادائیگی کی قیمت سے بوجھل ہوں گی۔ 2050 تک ان قرضوں کی لاگت 6.5 ٹریلین ڈالر تک جا سکتی ہے۔

      تنازعہ کے بیس سال:

      افغانستان کی جنگ کا ایک بہت بڑا المیہ یہ ہے کہ اس نے افغان عوام پر بھیانک اثرات مرتب کیے ہیں۔ 2001 میں امریکی فوجیوں کے افغانستان میں قدم رکھنے کے بعد سے اب تک 47 ہزار سے زائد شہری ہلاکتیں ریکارڈ کی گئی ہیں ، اس کے ساتھ ہی سینکڑوں امدادی کارکن اور صحافی بھی مارے گئے ہیں۔

      امریکہ میں قائم براؤن یونیورسٹی کے واٹسن انسٹی ٹیوٹ کی ایک رپورٹ عام شہریوں کے لیے بارودی سرنگوں جیسے خطرات کی طرف بھی اشارہ کرتی ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ افغان سرزمین غیر دھماکہ خیز مواد سے آلودہ ہے، جس کی وجہ سے ہزاروں افغان، خاص طور پر بچے ہلاک اور زخمی ہو جاتے ہیں۔

      افغان فوج اور پولیس کی ہلاکتیں 66000 ہیں جبکہ امریکہ نے اس سال اپریل تک 2448 فوجی جوانوں کو کھو دیا تھا اور اس کے نیٹو اتحادیوں نے ایک ہزار سے زائد ہلاکتوں کی گنتی کی ہے۔ اے پی نے بتایا کہ افغانستان میں ہلاک ہونے والے امریکی دفاعی ٹھیکیداروں کی تعداد 3846 ہے۔ پچھلی صدی کی ویت نام کی جنگ کے ساتھ مماثلت دیکھی گئی ہے- طالبان اور دیگر گروہوں کی طرف سے ہونے والی جانی نقصانات 50000 جنگجوؤں سے تھوڑی زیادہ تھیں۔

      جیسے ہی طالبان کے خلاف جنگ آگے بڑھی، مختلف بین الاقوامی ایجنسیوں اور خود امریکہ نے افغانستان میں اربوں ڈالر کی تعمیر نو کا پیسہ خرچ کیا۔ عالمی بینک کا کہنا ہے کہ ملک نے صحت ، خواتین کی تعلیم وغیرہ جیسے شعبوں میں ترقی کی ہے۔

      تعلیمی محاذ پر عالمی بینک کا کہنا ہے کہ 15 سال یا اس سے زیادہ عمر کی افغان آبادی کے لیے شرح خواندگی 2011 میں 31.5 فیصد سے بڑھ کر 2018 میں 43 فیصد ہو گئی ہے۔ 2011 میں 17 فیصد سے 2030 میں 30 فیصد کے قریب ہے

      ہندوستان نے افغانستان میں کیا خرچ کیا ہے؟

      امریکہ کے ساتھ اس کے تعلقات اور افغانستان کی اسٹریٹجک اہمیت نے ہندوستان کو افغان تعمیر نو کے عمل میں شامل ہوتے دیکھا ہے۔ اس ماہ کے شروع میں راجیہ سبھا میں ایک جواب میں وزارت خارجہ نے کہا کہ ہندوستان نے 2001 سے اب تک افغانستان کو 3 ارب ڈالر سے زیادہ کی انسانی اور ترقیاتی امداد کا عزم کیا ہے۔ افغان پارلیمنٹ کی عمارت اور 200 کلومیٹر سے زائد لمبی شاہراہ زرنج سے صوبہ نیمروز کے دلارام تک ان کاموں میں شامل ہے۔

      وہیں ہندوستان نے بجلی کے منصوبے شروع کیے ہیں اور سلما ڈیم کی تعمیر بھی مکمل کی ہے۔ اس نے تعلیم اور خوراک کی مدد فراہم کی ہے اور افغان نیشنل ڈیفنس اور سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں کے لیے ہندوستان میں تربیت اور طبی علاج میں توسیع کی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: