ہوم » نیوز » عالمی منظر

ایمنسٹی انٹرنیشنل کا نائجریائی فوج پر شیعوں کے قتل عام کا الزام

لاگوس: ایمنسٹی انٹرنیشنل نے آج کہا کہ نائجریا کی فوج نے گزشتہ دسمبر میں اقلیتی شیعہ مسلک کے سیکڑوں مردوں اور عورتوں کو قتل کیا ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Apr 22, 2016 04:10 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
ایمنسٹی انٹرنیشنل کا نائجریائی فوج پر شیعوں کے قتل عام کا الزام
علامتی تصویر

لاگوس: ایمنسٹی انٹرنیشنل نے آج کہا کہ نائجریا کی فوج نے گزشتہ دسمبر میں اقلیتی شیعہ مسلک کے سیکڑوں مردوں اور عورتوں کو قتل کیا ہے۔ تاہم، فوج نے ایمنسٹی انٹرنیشنل کی رپورٹ کو یکطرفہ اور جانبدارانہ قرار دے کر مسترد کردیا ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی یہ رپوٹ شمالی شہر زاریا میں ہونے والے واقعات سے متعلق ہے، جہاں فوج کے بقول نائجریا کی اسلامک موومنٹ نے فوج چیف اسٹاف لیفٹننٹ جنرل ٹوکور براتائي کو قتل کرنے کی کوشش کی تھی اور شیعہ مسلک کے لوگوں نے ان کے قافلے کی راہ روک دی تھی۔ جس کے دوسرے دن فوج نے اقلیتی شیعہ طبقہ کے لوگوں کی متعدد عمارتوں میں چھاپے ماری کی تھی۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل نے کہا کہ 12 اور 14 دسمبر کے درمیان 350 سے زیادہ لوگوں کو غیر قانونی طورپر فوج نے قتل کردیا تھا۔ ایمنسٹی کی رپورٹ میں چند تصاویر بھی شامل ہيں ، جن میں اجتماعی قبر کی جگہ دکھائي گئی ہے۔ ایمنسٹی نے کہا کہ اس نے فروری 2016 میں اپنی تحقیقات انجام دی ہيں، جس کے لئے 92 لوگوں سے انٹرویو لیا گيا، جن میں مبینہ متاثرین اور ان کے رشتہ دار نیز عینی شاہدین و وکلاء اور طبی عملہ شامل ہيں۔

First published: Apr 22, 2016 04:10 PM IST