اپنا ضلع منتخب کریں۔

    ہندوستان نے اقوام متحدہ میں کہا-ہم نے یو این کے اندر مختلف آوازوں کو ظاہر کرنے کی کوشش کی

    ہندوستان نے اقوام متحدہ میں کہا-ہم نے یو این کے اندر مختلف آوازوں کو ظاہر کرنے کی کوشش کی

    ہندوستان نے اقوام متحدہ میں کہا-ہم نے یو این کے اندر مختلف آوازوں کو ظاہر کرنے کی کوشش کی

    کمبوج نے کہا کہ یہ بہت واضح ہے کہ آج کا اقوام متحدہ وسیع تر رکنیت کے حقیقی تنوع کی عکاسی کرنے سے بہت دور ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi, India
    • Share this:
      سیکورٹی کونسل کے نومنتخب رکن کے طو رپر اپنے دو سال کی معیاد کے دوران ہندوستان نے اقوام متحدہ یونٹ کے اندر مختلف آوازوں کو ظاہر کرنے کی ہر ممکن کوشش کی اور ملک اسی جذبات کو سامنے لائے گا۔ یہاں ہندوستان کی سفیر روچیرا کمبوج نے جمعرات کو یہ بات کہی۔ ہنوستان نے جمعرات کو سیکورٹی کونسل کی ماہانہ صدارت حاصل کی۔ اگست 2021 کے بعد یہ دوسرا موقع ہے جب ہندوستان نے یو این ایس سی کے منتخب رکن کے طور پر اپنی دو سالہ مدت کے دوران کونسل کی صدارت کی ہے۔ کونسل میں ہندوستان کی 2021-2022 کی میعاد 31 دسمبر کو ختم ہو رہی ہے۔

      کمبوج نے کہا، کونسل کی ہماری رکنیت کے آخری دو سالوں میں، میں اعتماد کے ساتھ کہہ سکتی ہوں کہ ہم اپنی ذمہ داریوں کو اچھی طرح سے نبھا رہے ہیں، اور کونسل کے اندر مختلف آوازوں کو ظاہر کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ کونسل جہاں تک ممکن ہو مختلف مسائل پر ایک آواز میں بات کر سکے۔ ہم اسی جذبے کو اپنی دسمبر کی صدارتی دوڑ میں لائیں گے۔ کمبوج نے ایک پریس کانفرنس کے دوران اقوام متحدہ کے ہیڈکوارٹر میں ہندوستان کی صدارت اور ماہانہ شیڈول کے بارے میں صحافیوں کو آگاہ کیا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      افغانستان میں رُکے ہوئے 20 پروجیکٹ پر دوبارہ کام شروع کرے گا ہندوستان! طالبان نے دیا اشارہ

      یہ بھی پڑھیں:
      انگلینڈ میں پہلی مرتبہ نصف سے بھی کم رہ گئی عیسائیوں کی آبادی، مسلم-ہندووں کی بڑھی تعداد

      14 اور 15 دسمبر کو، وزیر خارجہ ایس جئے شنکر اصلاح شدہ کثیرالجہتی پر کونسل میں دستخطی پروگراموں کی صدارت کریں گے اور انسداد دہشت گردی کے عالمی نقطہ نظر اور آگے بڑھنے کے لیے ایک نیا رخ اختیار کریں گے۔ کمبوج نے کہا کہ یہ بہت واضح ہے کہ آج کا اقوام متحدہ وسیع تر رکنیت کے حقیقی تنوع کی عکاسی کرنے سے بہت دور ہے۔ انہوں نے کہا کہ عالمی رہنماؤں کی جانب سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں جامع اصلاحات کے مطالبے کے 22 سال بعد بھی ہم ایک انچ بھی نہیں بڑھے ہیں یہاں تک کہ بات چیت کا بھی فقدان ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: