உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کابل ہوائی اڈے کے باہر خوفناک ماحول! مسلسل دو دھماکے، کئی بچوں سمیت اب تک 13 افراد ہلاک

    Youtube Video

    کہا جا رہا ہے کہ اس دھماکے میں کئی لوگوں کی جانیں چلی گئی ہیں جبکہ اس دھماکے میں متعدد افراد زخمی بتائے جا رہے ہیں۔

    • Share this:
    نئی دہلی: دارالحکومت کابل ہوائی اڈے Kabul airport کے باہر ایک کے بعد ایک بھیانک دھماکے ہوئے ہیں۔ ہوائی اڈے پر دھماکے کی خبر پینٹاگون نے تصدیق کی ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ اس دھماکے میں کئی لوگوں کی جانیں چلی گئی ہیں جبکہ اس دھماکے میں متعدد افراد زخمی بتائے جا رہے ہیں۔ امریکی محکمہ دفاع کے سکریٹری جان کربی نے کہا کہ کابل ایئرپورٹ کے گیٹ پر ایک بڑا دھماکہ ہوا ہے۔ ابھی تک ہلاکتوں کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے اور جیسے ہی ہمیں معلومات ملیں گی دستیاب کر دی جائیں گی۔ ادھر فرانس نے ہوائی اڈے پر دوسرے دھماکے کیلئے خبردار کیا ہے۔ طالبان کے افغانستان Afghanistan پر قبضے کے بعد وہاں کے حالات مسلسل بگڑ رہے ہیں۔

    برطانوی حکومت اور امریکی سفارت خانے نے جمعرات کو ایک انتباہ جاری کیا تھا کہ افغانستان کے کابل ہوائی اڈے پر جمع ہونے والے لوگوں کو نشانہ بناتے ہوئے اسلامک اسٹیٹ (آئی ایس یا آئی ایس آئی ایس) کے دہشت گردوں کی جانب سے حملہ کئےجانے کی کافی حد تک ممکنہ خفیہ رپورٹ ہے۔

    چند گھنٹے قبل امریکی سفارت خانے نے کابل ایئرپورٹ پر دہشت گردوں کے حملے کے حوالے سے ایک حکم دیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا، فورا کابل ایئرپورٹ چھوڑ کر چلے جاؤ۔ کابل ایئرپورٹ کے مشرقی اور شمالی دروازوں امریکی شہری جلدی ہٹ جائیں۔ انہوں نے مزید کہا ، امریکی شہریوں کو اگلے احکامات تک محفوظ مقامات پر رہنا چاہیے۔ اس کے ساتھ ہی برطانیہ ، امریکہ اور آسٹریلیا نے کابل ایئرپورٹ پر جمع ہونے والے لاکھوں لوگوں سے کہا تھا کہ وہ افغانستان چھوڑنے کے لیے فوری طور پر محفوظ مقامات پر چلے جائیں۔

    آپ کو بتاتے چلیں کہ طالبان کے کابل پر قبضے کے بعد امریکہ ، اٹلی سمیت کئی ممالک اپنے اور اپنے شہریوں کو نکالنے میں مصروف ہیں۔ اس کے لیے فوج کے طیارے بھی استعمال کیے جا رہے ہیں۔ ہندستان اپنے شہریوں کے علاوہ ہندو اور سکھ افغان شہریوں کو نکالنے میں مصروف ہے۔ اس مشن کو 'دیوی شکتی' کا نام دیا گیا ہے۔

    میڈیا رپورٹس کے مطابق حملہ کابل میں بیرن ہوٹل کے قریب ہوا جہاں برطانوی فوجی اور صحافی ٹھہرے ہوئے ہیں۔ اس سے قبل اٹلی کے ایک فوجی طیارے کو کابل ایئرپورٹ سے اڑنے کے بعد اس پر فائرنگ کی گئی تھی۔ حالانکہ اس واقعے میں طیارے کو کوئی نقصان نہیں پہنچا تھا۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: