ہوم » نیوز » عالمی منظر

جو بائیڈن کی جانب سے بار بار جنگ بندی کی اپیل کانیتن یاھو پرکوئی اثرنہیں،فلسطینی علاقوں پراب بھی اسرائیلی بربریت جاری

اسرائیل کے وزیر اعظم بنیامن نیتن یاھو (Prime Minister Benjamin Netanyahu) نے مقبوضہ غزہ میں شدید فوجی کارروائی کے ساتھ آگے بڑھنے کا عزم کیا ظاہر کیا ہے۔ جہاں اب تک 227 سے زیادہ فلسطینی شہری ہلاک ہوگئے، جن میں 64 بچے اور 38 خواتین شامل ہیں۔ ان کے علاوہ 1,620 مزید زخمی ہوئے ہیں۔

  • Share this:
جو بائیڈن کی جانب سے بار بار جنگ بندی کی اپیل کانیتن یاھو پرکوئی اثرنہیں،فلسطینی علاقوں پراب بھی اسرائیلی بربریت جاری
اسرائیل کے وزیر اعظم بنیامن نیتن یاھو (Prime Minister Benjamin Netanyahu) نے مقبوضہ غزہ میں شدید فوجی کارروائی کے ساتھ آگے بڑھنے کا عزم کیا ظاہر کیا ہے۔ جہاں اب تک 227 سے زیادہ فلسطینی شہری ہلاک ہوگئے، جن میں 64 بچے اور 38 خواتین شامل ہیں۔ ان کے علاوہ 1,620 مزید زخمی ہوئے ہیں۔

امریکی صدر جو بائیڈن (US President Joe Biden) کی سے غزہ میں اسرائیلی تشدد کے بے تحاشہ اضافہ کے دوران جنگ بندی کا اب تک کوئی اتا پتہ نہیں ہے۔بدھ کی شام اسرائیل کے وزیر اعظم بنیامن نیتن یاھو (Prime Minister Benjamin Netanyahu) نے مقبوضہ غزہ میں شدید فوجی کارروائی کے ساتھ آگے بڑھنے کا عزم کیا ظاہر کیا۔ جہاں اب تک 227 سے زیادہ فلسطینی شہری ہلاک ہوگئے، جن میں 64 بچے، 38 خواتین شامل ہیں اور 1,620 مزید زخمی ہوئے ہیں۔


  • نیتن یاہو کی متشدد بیانات


نیتن یاہو کی بیانات نے حتی کہ بائیڈن کی طرف سے فوجی کاررائیوں کو ختم کرنے اور جنگ بندی کرنے کے اپیل کو یکسر نظر انداز کردیا ہے۔


بائیڈن کی حماس کے حکمرانوں کے ساتھ جنگ ​​بندی کے لئے اسرائیل کو براہ راست اور عوامی سطح پر پریشر نہ ڈالنے سے وسیع پیمانے پر مذمت کی گئی ہے۔ لیکن دیگر سفارتی کوششوں میں طاقت جمع ہونے کے بعد بائیڈن پر زیادہ زور سے مداخلت کرنے کے لئے دباؤ ڈالا جارہا ہے۔

غزہ کی جانب سے داغے گئے راکٹ میں اسرائیل میں تباہ ہوئی ایک عمارت کے پاس فائرفائٹر کے اہلکار دیکھے جاسکتے ہیں ۔ اس راکٹ حملہ میں ایک پیکیجنگ پلانٹ میں کام کرنے والے دو تھائی ورکرس کی موت ہوگئی ۔ (AP Photo)
غزہ کی جانب سے داغے گئے راکٹ میں اسرائیل میں تباہ ہوئی ایک عمارت کے پاس فائرفائٹر کے اہلکار دیکھے جاسکتے ہیں ۔ اس راکٹ حملہ میں ایک پیکیجنگ پلانٹ میں کام کرنے والے دو تھائی ورکرس کی موت ہوگئی ۔ (AP Photo)


اس دوران میں اسرائیل نے غزہ میں فضائی حملوں کے ذریعے اہداف کو نشانہ بنایا ہے، جن میں سے بیشتر عام شہری ہیں۔ فلسطینی مزاحمتی گروپوں نے گھریلو راکٹوں سے اسرائیل کی جارحیت کا منہ توڑ جواب دیا ہے جس کا پتہ لگانے سے بچنے کے لئے وہ بنیادی طور پر دن بھر فائر کرتے ہیں۔

  • ’’بیشتر ناکام اور بے مقصد حملے:


فوجی ہیڈ کوارٹر کے دورے کے بعد نیتن یاہو نے کہا کہ وہ امریکی صدر کی حمایت کی تعریف کرتے ہیں ، لیکن انہوں نے کہا کہ اسرائیل اسرائیلی شہریوں کی پرسکون زندگی اور سلامتی کے لیے آگے بڑھ رہا ہے۔

مصری مذاکرات کار بھی اس لڑائی کو روکنے کے لئے کام کر رہے ہیں اور ایک مصری سفارت کار نے بتایا کہ اعلی حکام جنگ بندی کی پیش کش پر اسرائیل کے جواب کا انتظار کر رہے ہیں۔ سفارت کار نے ضوابط کے مطابق اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کی۔

ادھر جرمن وزیر خارجہ ہیکو ماس (German Foreign Minister Heiko Maas) نے کہا ہے کہ وہ اسرائیلیوں اور فلسطینیوں کے ساتھ بات چیت کے لئے جمعرات کو خطے کے لئے اڑان بھریں گے۔اسرائیل کے اندر نتن یاہو کی طرف سے شروع ہونے والے اور متاثر کن بیانات پر تنقید کی لہر بڑھتی جارہی ہے۔اسرائیل کے سب سے معزز اخبار کے چیف ایڈیٹر ، ہیریٹیز (Haaretz) نے ملک کی قیادت کو ایک ڈانٹ ڈپٹ کے دوران غزہ میں جاری جنگ کو "اب تک کا سب سے ناکام اور بے مقصد غزہ آپریشن" قرار دیا ہے۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 20, 2021 08:48 AM IST