உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لبنان سے تارکین وطن کو لے جانے والی کشتی سیریا میں ڈوب گئی، 25 افراد ہلاک

    لبنان کے ساحلی قصبے منیہ سے بظاہر یورپ پہنچنے کا ارادہ رکھتے تھے۔

    لبنان کے ساحلی قصبے منیہ سے بظاہر یورپ پہنچنے کا ارادہ رکھتے تھے۔

    طرطوس کے گورنر عبدالحلیم خلیل نے مبینہ طور پر ہسپتال میں زندہ بچ جانے والے 13 افراد کی عیادت کی ہے۔ فوری طور پر یہ واضح نہیں ہو سکا کہ جہاز میں کتنے افراد سوار تھے اور وہ کہاں جا رہے تھے لیکن کوسٹ گارڈز ابھی تک لاشوں کی تلاش کر رہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaSyria
    • Share this:
      ملک شام (Syria) کے سرکاری میڈیا کے مطابق لبنان سے تارکین وطن کو لے جانے والی کشتی جمعرات کی سہ پہر شام کے ساحل کے قریب الٹ گئی جس کے نتیجے میں کم از کم 25 افراد ہلاک ہو گئے۔ لبنانی، شامی اور فلسطینیوں کی بڑھتی ہوئی تعداد نے بحران زدہ لبنان سے سمندر کے راستے یورپ جانے کی کوشش کی ہے، یہ واقعہ سب سے مہلک ہے۔

      طرطوس کے گورنر عبدالحلیم خلیل نے مبینہ طور پر ہسپتال میں زندہ بچ جانے والے 13 افراد کی عیادت کی ہے۔ فوری طور پر یہ واضح نہیں ہو سکا کہ جہاز میں کتنے افراد سوار تھے اور وہ کہاں جا رہے تھے لیکن کوسٹ گارڈز ابھی تک لاشوں کی تلاش کر رہے ہیں۔

      میڈیا رپورٹس کے مطابق لبنان میں دسیوں ہزار لوگ اپنی ملازمتوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور لبنانی پاؤنڈ اپنی قدر کا 90 فیصد سے زیادہ گر گیا ہے، جس سے ان ہزاروں خاندانوں کی قوت خرید ختم ہو گئی ہے جو اب انتہائی غربت میں زندگی گزار رہے ہیں۔ شام کے سرکاری ٹیلی ویژن نے سیرین پورٹس اتھارٹی کے سربراہ بریگیڈیئر جنرل سمر کوبروسلی کا کہنا ہے کہ اس واقعے میں کم از کم 25 افراد ہلاک ہوئے۔ کوبروسلی نے مزید کہا کہ بچ جانے والے 15 افراد ساحلی شہر طرطوس کے الباسل اسپتال میں زیر علاج ہیں، جن میں سے زیادہ تر لبنانی اور شامی ہیں اور کچھ شناختی کاغذات کے بغیر ہیں۔ جن کی ابھی تک شناخت نہیں ہوپائی ہے۔

      ہزاروں لبنانی، شامی اور فلسطینی گزشتہ مہینوں میں یورپ میں بہتر مواقع کی تلاش میں کشتیوں پر سواری کرتے ہوئے لبنان چھوڑ چکے ہیں۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ لبنان کی آبادی 6 ملین ہے، جس میں 10 لاکھ شامی مہاجرین بھی شامل ہیں۔ لبنان 2019 کے اواخر سے شدید اقتصادی بحران کی لپیٹ میں ہے جس نے تین چوتھائی سے زیادہ آبادی کو غربت کی طرف کھینچ لیا ہے۔

      اپریل میں لبنانی بحریہ کی وجہ سے تصادم کے بعد ایک کشتی میں درجنوں لبنانی، شامی اور فلسطینی سمندری راستے سے اٹلی کی طرف ہجرت کرنے کی کوشش کر رہے تھے، وہ طرابلس کی بندرگاہ سے پانچ کلومیٹر (تین میل) سے زیادہ نیچے گر گئی۔ اس واقعے میں درجنوں افراد مارے گئے۔

      تارکین وطن شمالی لبنان کے ساحل سے ملک چھوڑ رہے ہیں جو اس چھوٹے سے ملک کا سب سے غریب علاقہ ہے۔ لبنانی حکام نے بتایا کہ بحریہ کی افواج نے 55 تارکین وطن کو لے جانے والی ایک کشتی کو اس وقت بچا لیا جب اسے تکنیکی خرابی کا سامنا کرنا پڑا کیونکہ اسے شمالی علاقے عکر کے ساحل سے چھ سمندری میل (7 میل) دور تھا۔ اس نے بتایا کہ بچائے گئے لوگوں میں دو حاملہ خواتین اور دو بچے شامل ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      سرکاری میڈیا نے مزید تفصیلات نہیں بتائیں لیکن بچ جانے والوں میں سے کچھ کے حوالے سے بتایا کہ وہ کئی روز قبل لبنان کے ساحلی قصبے منیہ سے بظاہر یورپ پہنچنے کا ارادہ رکھتے تھے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ کشتی میں مختلف قومیتوں کے لوگ سوار تھے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: