ہوم » نیوز » عالمی منظر

بوکو حرام کی طرف سے اغوا کی گئی 219 لڑکیوں میں سے ایک ملی

جوہانسبرگ۔ نائیجیریا میں دہشت گرد تنظیم بوكو حرام نے دو سال پہلے جن 219 لڑکیوں کو اغوا کر لیا تھا ان میں سے ایک لڑکی مل گئی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: May 19, 2016 01:39 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
بوکو حرام کی طرف سے اغوا کی گئی 219 لڑکیوں میں سے ایک ملی
بوکوحرام: فائل فوٹو

جوہانسبرگ۔ نائیجیریا میں دہشت گرد تنظیم بوكو حرام نے دو سال پہلے جن 219 لڑکیوں کو اغوا کر لیا تھا ان میں سے ایک لڑکی مل گئی ہے۔ فوج اور مقامی کارکنوں کے مطابق، لڑکی کا نام امینہ علی نكیئي ہے اور وہ چبوك کے ایک اسکول میں پڑھتی تھی۔ اسی اسکول پر بوكو حرام کے دہشت گردوں نے دو سال قبل حملہ کر دیا تھا اور امینہ سمیت 219 لڑکیوں کو اغوا کر لیا تھا۔


لڑکی کے ملنے کی اطلاع اس کے چچا نے دی۔ امینہ ان 219 لڑکیوں میں سے پہلی لڑکی ہے جو دہشت گردوں کے چنگل سے آزاد ہونے میں کامیاب ہو پائی ہے۔ مقامی رہنما پوگو بترس نے کہا کہ فوج نے منگل کی رات کو شمال مشرقی علاقے کے اندرونی حصوں میں سنبسا جنگل میں بوکو حرام کے خلاف مہم چلائی تھی، ہو سکتا ہے کہ کچھ اور لڑکیوں کو بھی آزاد کرایا گیا ہو۔ انہوں نے کہا کہ وہ حکام کے ساتھ مل کر لڑکیوں کی شناخت کو یقینی بنانے میں لگے ہوئے ہیں۔


لڑکی کے چچا یعقوب نكیئي نے کہا کہ ان کی بھتیجی امینہ انہیں جنگل میں بھٹکتی ہوئی ملی۔ جب اسے اغوا کیا گیا تھا تو وہ 17 سال کی تھی اور اب 19 سال کی ہو گئی ہے۔ امینہ کو جب منگل کو گھر لایا گیا تو اس کی ماں نے اس کی نشاندہی کی۔ ان دو سالوں میں اس کے والد کی موت ہو چکی ہے۔ امینہ کو فوجی اپنے ساتھ لے گئے ہیں اور ہو سکتا ہے کہ اسے دابوا شہر کے فوجی کیمپ میں رکھا گیا ہو۔


First published: May 19, 2016 01:39 PM IST