உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    یہاں اپنوں کی لاش جلا کر کھا جاتے ہیں لوگ ، چمڑے سے لے کر ہڈیاں تک چبانے کی ہے روایت

    یہاں اپنوں کی لاش جلا کر کھا جاتے ہیں لوگ ، چمڑے سے لے کر ہڈیاں تک چبانے کی ہے روایت

    یہاں اپنوں کی لاش جلا کر کھا جاتے ہیں لوگ ، چمڑے سے لے کر ہڈیاں تک چبانے کی ہے روایت

    کورونا کی وجہ سے دنیا میں لاشو کا انبار لگا ہوا ہے ۔ ہندوستان میں بھی اس وائرس کی دوسری لہر نے تباہی مچا رکھی ہے ۔ لاشوں کی آخری رسوم ادا کرنے کیلئے ویٹنگ چل رہی ہے ۔ اس درمیان دنیا میں ایک ایسا قبیلہ موضوع بحث بنا ہوا ہے جو لاشو کو جلا کر کھاجاتا ہے ۔

    • Share this:
      ویسے تو دنیا میں کئی سارے قبائل ہیں اور ہر قبیلہ کسی نہ کسی خاص وجہ سے سرخیوں میں رہتا ہے ۔ کئی قبائل میں عجیب و غریب روایات بھی ہوتی ہیں ۔ ہندوستان میں ایک قبیلہ کی خواتین جانوروں کو سینے سے دودھ پلاتی ہیں ۔ وہیں بات اگر برازیل کے یانومامی قبیلہ کی کریں تو یہ لوگ اپنوں کی لاش جلاکر اس کو ہی کھا جاتے ہیں ۔ اس قبیلہ میں روایت ہے کہ یہاں لاش کو جلا کر کھایا جاتا ہے ۔

      یانومامی قبیلہ کے لوگ جدیدیت سے کافی دور ہیں ۔ یہ لوگ ماڈرن سوسائٹی سے کوسوں دور ہیں ۔ یہاں کے لوگ اپنے روایتی طریقوں سے ہی زندگی گزارتے ہیں ۔ کپڑوں کے نام پر ان کے جسم پر صرف ایک لنگوٹ بندھا ہوتا ہے ۔ اس قبیلہ کی آخری رسوم کی روایت کافی عجیب و غریب ہے ، جہاں ہر کمیونٹی لاشوں کو یا تو جلا دیتی ہے یا دفن کردیتی ہے تو وہیں اس قبیلہ کے لوگ لاش کو جلا کر کھا جاتے ہیں ۔

      یانومامی قبیلہ کے لوگوں کا ماننا ہے کہ اہل خانہ کی موت کے بعد ان کی روح کو محفوظ رکھنی پڑتی ہے ۔ روح کو محفوظ رکھنے کیلئے اس قبیلہ کے لوگ لاش کو پہلے اچھی طرح سے جلاتے ہیں ۔ جب لاش پک جاتی ہے تو پورے کنبہ کے ساتھ مل کر اس کو کھا جاتے ہیں ۔

      یہی نہیں لاش کو جلانے سے پہلے سبھی رشتہ داروں کو بھی جمع کیا جاتا ہے ۔ سب مل کر لاش کھاتے ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: