உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Bucha Civilian Massacre: بوچا شہری قتل عام سے گہری تشویش! ہندوستان نے UNSC میں آزادانہ تحقیقات کا کیا مطالبہ

    ٹی ایس ترومورتی نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے آخری بار اس مسئلے پر بات کرنے کے بعد سے یوکرین کی صورت حال میں کوئی خاص بہتری نہیں آئی ہے۔ اب وہاں کی صورت حال مزید خراب ہوئی ہے۔

    ٹی ایس ترومورتی نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے آخری بار اس مسئلے پر بات کرنے کے بعد سے یوکرین کی صورت حال میں کوئی خاص بہتری نہیں آئی ہے۔ اب وہاں کی صورت حال مزید خراب ہوئی ہے۔

    ٹی ایس ترومورتی نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے آخری بار اس مسئلے پر بات کرنے کے بعد سے یوکرین کی صورت حال میں کوئی خاص بہتری نہیں آئی ہے۔ اب وہاں کی صورت حال مزید خراب ہوئی ہے۔

    • Share this:
      اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل نمائندے ٹی ایس ترومورتی (India’s Permanent Representative to the UN Ambassador TS Tirumurti) نے منگل کے روز شمالی یوکرین کے قصبے بوچا (Bucha) میں شہریوں کی ہلاکتوں کی آزادانہ تحقیقات کا مطالبہ کیا، جس کے منظر نے دنیا کو صدمے میں ڈال دیا ہے۔

      ٹی ایس ترومورتی نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے آخری بار اس مسئلے پر بات کرنے کے بعد سے یوکرین کی صورت حال میں کوئی خاص بہتری نہیں آئی ہے۔ اب وہاں کی صورت حال مزید خراب ہوئی ہے۔ ساتھ ہی اس کے انسانی نتائج بھی سامنے آئے ہیں۔ بوچا میں شہریوں کی ہلاکتوں کی حالیہ رپورٹس گہری پریشان کن ہیں۔ ہم واضح طور پر ان ہلاکتوں کی مذمت کرتے ہیں اور آزادانہ تحقیقات کے مطالبے کی حمایت کرتے ہیں۔ اس اجلاس سے یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے بھی خطاب کیا تھا۔

      سینئر ہندوستانی سفارت کار نے مزید کہا کہ بحران کا اثر خطے سے باہر خوراک اور توانائی کی بڑھتی قیمتوں کے ساتھ محسوس کیا جا رہا ہے، خاص طور پر بہت سے ترقی پذیر ممالک کے لیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ ہمارے اجتماعی مفاد میں ہے کہ اقوام متحدہ کے اندر اور باہر دونوں طرح سے تنازعات کے جلد حل کے لیے تعمیری طور پر کام کریں۔ جب معصوم انسانی جانیں داؤ پر لگ جاتی ہیں، تو سفارت کاری کو واحد قابل عمل آپشن کے طور پر غالب ہونا چاہیے۔

      یہ بھی پڑھئے : جنرل باجوا کو ہٹانے کیلئے پاکستانی فوج میں بغاوت کرانے والے تھے عمران خان، PTI ممبر کا الزام


      انھوں نے کہا کہ اس تناظر میں ہم جاری کوششوں کو نوٹ کرتے ہیں، جن میں فریقین کے درمیان حال ہی میں ہونے والی ملاقاتیں بھی شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ضروری انسانی امداد اور طبی سامان کی فراہمی کے لیے محفوظ راستے کی ضمانت پر زور دینے والی کالوں کی بھی حوصلہ افزائی کی۔

      انہوں نے زور دے کر کہا کہ ہندوستان بدستور بتر ہوتی ہوئی صورتحال پر گہری تشویش میں مبتلا ہے اور تشدد کے فوری خاتمے اور امن کے مطالبے کو دہرایا۔ ترومورتی نے مزید کہا ہم نے تنازع کے آغاز سے ہی سفارت کاری اور بات چیت کے راستے پر چلنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔‘ بعد ازاں وہ کونسل میں ہندوستان کا مکمل بیان شیئر کرنے کے لیے ٹوئٹر کا سہارا لیا۔

      یہ بھی پڑھئے : عمران خان نے کیا انکشاف، اس امریکی عہدیدار نے بھیجا تھا دھمکی آمیز خط


      دارالحکومت کیف کے باہر بوچا میں شہریوں کی ہلاکتوں نے اس قصبے میں ایک اجتماعی قبر اور قریب سے گولی ماری گئی لوگوں کی بندھی لاشیں ملنے کے بعد بین الاقوامی غم و غصے کا اظہار کیا، جسے روسی افواج سے واپس لے لیا گیا کیونکہ ماسکو نے لڑائی کا مرکز کسی اور جگہ منتقل کر دیا تھا۔
      تاہم کریملن نے بوچا سمیت شہریوں کے قتل سے متعلق کسی بھی الزام کی واضح طور پر تردید کی ہے۔ کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے صحافیوں کو بتایا کہ اس معلومات پر سنجیدگی سے پوچھ گچھ کی جانی چاہیے۔ ہم نے جو دیکھا ہے اس سے ہمارے ماہرین نے ویڈیو میں جعل سازی اور دیگر جعلی ہونے کی علامات کی نشاندہی کی ہے۔

      بوچا میں ہونے والی اموات نے امریکہ اور یورپ کی جانب سے ماسکو کے خلاف مزید پابندیوں کے وعدوں کو بھی اپنی طرف متوجہ کیا، جس میں ممکنہ طور پر اربوں ڈالر کی توانائی پر کچھ پابندیاں بھی شامل ہیں جو یورپ اب بھی روس سے درآمد کرتا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: