உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Hong Kong نے کھول دئیے ساحل، بیجنگ میں بیرون ملک سے آنے والوں کو راحت، شنگھائی جیسے دیگر شہروں کے مقابلے بیجنگ کو راحت

    کورونا وائرس سے ان شہروں کو ملی راحت۔

    کورونا وائرس سے ان شہروں کو ملی راحت۔

    مارچ میں روزانہ تقریباً 300 مریض کورونا سے مر رہے تھے لیکن حالیہ دنوں میں اس کی تعداد صفر پر آ گئی ہے۔ بیجنگ میں اب بیرون ملک سے آنے والوں کو ہوٹل میں 10 دن کے لیے قرنطینہ کرنا ہوگا۔

    • Share this:
      Hong Kong نے ساحل سمندر کھول دئیے، بیجنگ میں بیرون ملک سے آنے والوں کو راحت، شنگھائی جیسے دیگر شہروں کے مقابلے بیجنگ کو راحت

      بیجنگ: ہانگ کانگ نے COVID-19 پابندیوں کو کم کرتے ہوئے جمعرات کو ساحل اور پول کھول دیئے ہیں۔ چین کے دارالحکومت بیجنگ میں بیرون ملک سے آنے والوں کے لیے قرنطینہ قوانین میں نرمی کر دی گئی ہے۔ چین کے سخت 'زیرو کوویڈ' موقف کے درمیان، شنگھائی جیسے دوسرے شہروں کے مقابلے بیجنگ میں راحت ہے۔ شنگھائی کے رہائشیوں کو سخت لاک ڈاؤن کا سامنا ہے۔ ہانگ کانگ نے اومیکرون ویرینٹ کی وجہ سے واٹر اسپورٹس کو روک دیا، لیکن نئے کیسز کم ہونے کے بعد پابندیاں ہٹائی جا رہی ہیں۔

      روزانہ قریب 300 مریضوں کی موت
      مارچ میں روزانہ تقریباً 300 مریض کورونا سے مر رہے تھے لیکن حالیہ دنوں میں اس کی تعداد صفر پر آ گئی ہے۔ بیجنگ میں اب بیرون ملک سے آنے والوں کو ہوٹل میں 10 دن کے لیے قرنطینہ کرنا ہوگا اور پھر ایک ہفتے تک ہوم آئسولیشن میں رہنا ہوگا۔ اس سے قبل انہیں 21 دن تک آئیسولیشن میں رہنا پڑا تھا۔

      تین مرحلوں میں کرائی جارہی ہے شہریوں کی جانچ
      بیجنگ میں تمام رہائشیوں کی تین مرحلوں میں اسکریننگ کی جا رہی ہے۔ جمعرات کو یہاں 50 نئے کیسز پائے گئے، جن میں سے آٹھ غیر علامتی ہیں۔ شنگھائی میں بھی 4,651 نئے کیسز سامنے آئے ہیں جن میں سے 261 غیر علامتی ہیں۔ 13 مریض جاں بحق ہو چکے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:
      ملک بھر میں بڑھ رہے ہیں Coronavirus کے معاملے، اس بار بچے زیادہ ہورہے ہیں متاثر

      شنگھائی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی
      خبر رساں ایجنسی اے این آئی کے مطابق چین کی 'زیرو کوویڈ' پالیسی کی وجہ سے شنگھائی کے رہائشیوں کو غیر متوقع غفلت، بدسلوکی اور ہراساں کیے جانے کا سامنا ہے۔ انٹرنیٹ میڈیا پر لیک ہونے والی ویڈیو میں انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی کا انکشاف ہوا ہے۔ وبا کی روک تھام کے نام پر ان خلاف ورزیوں نے کمیونسٹ چین کے نظام کے غیر انسانی پہلو کو بے نقاب کر دیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      4th COVID-19 Wave:کوروناکی چوتھی لہرکے امکانات بہت ہی کم،مقامی بیماری کی شکل لے رہاکوویڈ19

      ہندوستان میں 3,275نئے کیسیز
      اس کے ساتھ ہی ہندوستان میں ایک دن میں کورونا کے 3,275 نئے کیسز سامنے آنے کے ساتھ ہی ایکٹیو کیسز کی تعداد بڑھ کر 19,719 ہو گئی ہے۔ کل صبح 8 بجے جاری کردہ اعداد و شمار سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ اس دوران 55 اموات ہوئیں، جن میں سے 52 صرف کیرالہ سے ہیں۔ وزارت صحت کے مطابق ملک میں کورونا سے صحت یاب ہونے کی شرح 98.74 فیصد اور اموات کی شرح 1.22 فیصد رہی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: