உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    India - China: ’چین سرحدی معاہدوں کوکررہاہےنظرانداز، ہرکوئی اپنےپڑوسی کےساتھ ملناچاہتاہے‘

    اس کے علاوہ دو طرفہ مسائل پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

    اس کے علاوہ دو طرفہ مسائل پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

    مشرقی لداخ (Eastern Ladakh) میں چینی اور ہندوستانی فوجی طویل عرضہ سے ایک دوسرے کے مقابل میں ہیں۔ پینگونگ جھیل (Pangong lake) کے علاقے میں پرتشدد تصادم کے بعد 5 مئی 2020 کو شروع ہونے والے تعطل کو حل کرنے کے لیے دونوں فریقین نے اب تک کور کمانڈر سطح کے مذاکرات کے 16 دور منعقد کیے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, Indiachinachina
    • Share this:
      وزیر خارجہ ایس جے شنکر (S Jaishankar) نے اتوار کے روز کہا کہ چین ہندوستان کے ساتھ سرحدی معاہدوں کو نظر انداز کر رہا ہے اور یہ مسئلہ دو طرفہ تعلقات پر واضح طور پر سایہ ڈال رہا ہے۔ وزیر برازیل کے سرکاری دورے پر ہیں۔ اسی موقع پر انھوں نے ان خیالات کا اظہار کیا ہے۔

      جے شنکر نے برازیل کے ساؤ پالو میں ایک کمیونٹی پروگرام کے دوران کہا کہ اس وقت ہم ایک بہت مشکل مرحلے سے گزر رہے ہیں، بنیادی طور پر اس وجہ سے کہ ہمارے پاس چین کے ساتھ 1990 کی دہائی کے معاہدے ہیں۔ جو سرحدی علاقے میں بڑے پیمانے پر فوجیوں کو لانے پر پابندی لگاتے ہیں۔ جب کہ چین نے اس کو نظر انداز کیا ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ وادی گالوان (Galwan valley) میں کیا ہوا۔

      ایس جے شنکر وزیر خارجہ کے طور پر جنوبی امریکہ کے خطے کے اپنے پہلے دورے پر ہیں، انھوں نے مزید کہا کہ یہ مسئلہ حل نہیں ہوا ہے اور یہ واضح طور پر منڈلا رہا ہے۔ جے شنکر نے مزید کہا کہ وہ ہمارے پڑوسی ہیں۔ ہر کوئی اپنے پڑوسی کے ساتھ ملنا چاہتا ہے۔ ذاتی زندگی میں بھی اور ملک کے لحاظ سے بھی۔ لیکن ہر کوئی معقول شرائط پر ساتھ رہنا چاہتا ہے۔ مجھے آپ کا احترام کرنا چاہیے۔ آپ کو میرا احترام کرنا چاہیے۔

      انھوں نے مزید کہا کہ لہذا ہمارے نقطہ نظر سے ہم بہت واضح رہے ہیں کہ ہمیں رشتہ استوار کرنا ہے اور باہمی احترام کا ہونا ضروری ہے۔ ہر ایک کے اپنے مفادات ہوں گے اور ہمیں اس بات کے بارے میں حساس ہونا چاہیے کہ رشتے کے لیے دوسروں کے لیے کیا خدشات ہیں۔ مشرقی لداخ (Eastern Ladakh) میں چینی اور ہندوستانی فوجی طویل عرضہ سے ایک دوسرے کے مقابل میں ہیں۔ پینگونگ جھیل (Pangong lake) کے علاقے میں پرتشدد تصادم کے بعد 5 مئی 2020 کو شروع ہونے والے تعطل کو حل کرنے کے لیے دونوں فریقین نے اب تک کور کمانڈر سطح کے مذاکرات کے 16 دور منعقد کیے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      ایم ای اے نے کہا کہ جے شنکر کا برازیل، پیراگوئے اور ارجنٹائن کا دورہ خطے میں ہندوستان کے شراکت داروں کے ساتھ جاری اعلیٰ سطحی مصروفیات کو جاری رکھنے اور عالمی وبا کورونا وائرس (Covid-19) کے بعد کے دور میں تعاون کے نئے شعبوں کو تلاش کرنے کا موقع فراہم کرے گا، اس کے علاوہ دو طرفہ مسائل پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: