ہوم » نیوز » عالمی منظر

چین اور پاکستان مل کر بنا رہے ہیں حیاتیاتی ہتھیار، ووہان کی لیب کو ملی ذمہ داری

اینتھنی کلان کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ووہان کے سائنسداں پاکستان میں سال 2015 سے ہی خطرناک وائرس پر تحقیق کر رہے ہیں۔ یہ تحقیق بنیادی طور پر وائرس کو ہتھیار میں بدلنے سے متعلق ہے۔

  • Share this:
چین اور پاکستان مل کر بنا رہے ہیں حیاتیاتی ہتھیار، ووہان کی لیب کو ملی ذمہ داری
چین اور پاکستان مل کر بنا رہے ہیں حیاتیاتی ہتھیار

بیجنگ، اسلام آباد۔ چین مسلسل پاکستان کو جدید ہتھیار دے رہا ہے جس کا استعمال ہندستان کے خلاف ہونے کا اندیشہ مسلسل بنا ہوا ہے۔ اب ایک نئے انکشاف میں سامنے آیا ہے کہ چین۔ پاکستان اکنامک کوریڈور (CPEC) کی آڑ میں حیاتیاتی ہتھیار بنانے کا کام کر رہے ہیں۔ آسٹریلیا کی نیوز ویب سائٹ کلاکسون نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ ہتھیار پچھلے پانچ سالوں سے بنائے جا رہے ہیں اور اس پورے کھیل میں کورونا وائرس کے لئے بدنام ووہان انسٹی ٹیوٹ آف وائیرلاجی بھی شامل ہے۔


رپورٹ کے مطابق، ووہان کی لیب کو اس پورے پروجیکٹ کی ذمہ داری سونپی گئی ہے۔ اینتھنی کلان کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ووہان کے سائنسداں پاکستان میں سال 2015 سے ہی خطرناک وائرس پر تحقیق کر رہے ہیں۔ یہ تحقیق بنیادی طور پر وائرس کو ہتھیار میں بدلنے سے متعلق ہے۔ اس کے علاوہ، چین۔ پاکستان نے جو ڈیل کی ہے، اس کا ایک حصہ خفیہ رکھا گیا ہے کیونکہ یہ حیاتیاتی ہتھیاروں سے منسلک ہے۔ چین اور پاکستان نے بائیو۔ وارفئیر کی صلاحیت کو بڑھانے کے لئے تین سال کی یہ خفیہ ڈیل کر رکھی ہے اور اس پر کام بھی شروع ہو گیا ہے۔





تحقیق میں بھی چھپی ہیں باتیں

رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ دونوں ملکوں کے سائنسدانوں کا ایک مشترکہ مطالعہ باقاعدہ طبی جرنل میں چھپ چکا ہے جس میں اس طرح کے خطرناک وائرس کا ذکر ہے۔ یہ تحقیق دسمبر 2017 سے لے کر اس سال مارچ تک کی گئی تھی۔ اس میں ’ جنوٹک پیتھاجنس ( جانوروں سے انسانوں میں آنے والے وائرس) ‘ کی پہچان اور علامات کے بارے میں بتایا گیا ہے۔ اس تحقیق میں پاکستان نے ووہان انسٹی ٹیوٹ کو وائرس سے متاثر سیلس مہیا کرانے کے لئے شکریہ بھی کہا تھا۔ اس کے ساتھ ہی ریسرچ کو سی پی ای سی کے تحت ملے تعاون کا بھی ذکر کیا گیا ہے۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Aug 26, 2020 02:39 PM IST