ہوم » نیوز » عالمی منظر

آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان پرتشدد جھڑپ ، 16 کی موت  ، 100سے زیادہ زخمی

دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی جنگ کی سطح تک پہنچ گئی ہے ۔ ارمینیا اور آذربائیجان نے اپنی اپنی سرحد پر ٹینک ، توپ اور جنگی طیارے تعینات کردئے ہیں ۔ اس درمیان ارمینیا نے ملک میں مارشل لا لاگو کرتے ہوئے اپنی افواج کو سرحد کی جانب کوچ کرنے کا حکم دیدیا ہے ۔

  • Share this:
آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان پرتشدد جھڑپ ، 16 کی موت  ، 100سے زیادہ زخمی
ارمینیا اور آذربائیجان کے درمیان پرتشدد جھڑپ ، 16 کی موت  ، 100سے زیادہ زخمی ۔ (AP)

آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان زمین کے حصے کو لے کر اتوار کو پرتشدد چھڑپ ہوگئی ۔ اس میں اب تک 16 لوگوں کی موت ہوچکی ہے جبکہ 100 سے زیادہ لوگ زخمی ہوئے ہیں ۔ آرمینیا نے دعوی کیا ہے کہ آذربائیجان کی فوج کی جانب سے چلائی گئی گولی ایک خاتون اور ایک بچے کو لگی ، جس سے ان کی موت ہوگئی ۔ وہیں آذربائیجان کے صدر نے کہا کہ ان کی فوج کوکافی نقصان پہنچا ہے ۔


دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی جنگ کی سطح تک پہنچ گئی ہے ۔ آرمینیا اور آذربائیجان نے اپنی اپنی سرحد پر ٹینک ، توپ اور جنگی طیارے تعینات کردئے ہیں ۔ اس درمیان آرمینیا نے ملک میں مارشل لا لاگو کرتے ہوئے اپنی افواج کو سرحد کی جانب کوچ کرنے کا حکم دیدیا ہے ۔ دونوں ممالک کے درمیان حالات اس قدر بے قابو ہوگئے ہیں کہ آرمینیا نے آذربائیجان کے دو جنگی طیاروں کو مار گرانے کا دعوی کیا ہے ۔ حالانکہ آذربائیجان کی وزارت دفاع نے اس دعووں کی تردید کی ہے ۔


ادھر اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹریس نے آرمینیا اور آذربائیجان سے نگورنو قاراباخ خطے میں فوری طور پر جنگ بندی پر عمل درآمد کی اپیل کی ہے اور کہا ہے کہ وہ جلد ہی دونوں ممالک کے رہنماؤں سے رابطہ کر کے اس معاملہ پر بات چیت کریں گے ۔ مسٹر گوٹریس نے اتوار کے روز یہ بیان جاری کیا ۔


بیان کے مطابق ’’اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل نگورنو قاراباخ خطے میں تناؤ کو کم کرنے کے لئے فوری طور پر جنگ بندی پر عمل درآمد اور بامقصد بات چیت شروع کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ وہ جلد ہی اس معاملہ پر آذربائیجان کے صدر اور آرمینیا کے وزیر اعظم سے بات کریں گے۔ ‘‘

اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل نے کہا کہ انہیں نگورنو قاراباخ خطہ میں آرمینیا اور آذربائیجان کے مابین شروع ہونے والے فوجی تنازع پر سخت تشویش ہے اور فوجی طاقت کے استعمال کی شدید مذمت کرتے ہیں ۔ انہوں نے اس تنازع میں عام شہریوں کی ہلاکت پر بھی غم و غصہ کا اظہار کیا ہے۔

نیوز ایجنسی یو این آئی کے ان پٹ کے ساتھ ۔ 
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Sep 28, 2020 08:37 AM IST