உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ناردن ایلائنس کا دعوی ، پنجشیر پر حملہ کرنے آئے 350 طالبان جنگجو ہلاک ، 40 پکڑے گئے

    ناردن ایلائنس کا دعوی ، پنجشیر پر حملہ کرنے آئے 350 طالبان جنجگو ہلاک ، 40 پکڑے گئے

    ناردن ایلائنس کا دعوی ، پنجشیر پر حملہ کرنے آئے 350 طالبان جنجگو ہلاک ، 40 پکڑے گئے

    مقامی صحافی ناتک مالک زادہ نے پنجشیر میں جنگ کو لے کر ٹویٹ کیا ہے ۔ ان کے مطابق افغانستان کے پنجشیر کے انٹرینس پر گلبہار علاقہ میں طالبان جنجگووں اور ناردن ایلائنس کے جنگجووں کے درمیان تصادم ہوا ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      کابل : امریکی فوج کی واپسی کے بعد صرف پنجشیر وادی کو چھوڑی کر پورے افغانستان پر طالبان کا قبضہ ہوگیا ہے ۔ پنجشیر پر قبضہ کرنے کیلئے پیر سے طالبان اور ناردن ایلائنس کے درمیان جنگ چل رہی ہے ۔ تازہ رپورٹ کے مطابق طالبان کے جنجگووں نے منگل کی رات کو بھی پنجشیر علاقہ میں دراندازی کی کوشش کی ۔ طالبان نے ایک پل اڑا کر ناردن ایلائنس کے جنجگووں کے بچ کر نکلنے کا راستہ بند کرنے کی بھی کوشش کی ۔

      وہیں دوسری طرف ناردن ایلائنس کی جانب سے دعوی کیا گیا ہے کہ گزشتہ رات خاوک میں حملہ کرنے آئے طالبان کے تقریبا 350 جنجگووں کو مار گرایا گیا ہے ۔ ٹویٹر پر ناردن ایلائنس کی جانب سے کئے گئے ایک دعوی کے مطابق 40 سے زیادہ طالبان جنجگووں کو قبضہ میں بھی لے لیا گیا ہے ۔ ناردن ایلائنس کو اس دوران کئی امریکی گاڑی اور ہتھیار بھی ہاتھ لگے ہیں ۔


      مقامی صحافی ناتک مالک زادہ نے پنجشیر میں جنگ کو لے کر ٹویٹ کیا ہے ۔ ان کے مطابق افغانستان کے پنجشیر کے انٹرینس پر گلبہار علاقہ میں طالبان جنجگووں اور ناردن ایلائنس کے جنگجووں کے درمیان تصادم ہوا ۔ طالبان نے یہ یہاں ایک پل کو بھی اڑا دیا ہے ۔ یہ پل گلبہار کو پنجشیر سے جوڑتا تھا ۔ اس کے علاوہ ناردن ایلائنس کے کئی جنگجووں کو پکڑا گیا ہے ۔


      بتادیں کہ پنجشیر وادی کابل سے 150 کلو میٹر دور شمال میں ہندوکش کے پہاڑوں کے قریب ہے ۔ شمال میں پنجشیر ندی اس کو الگ کرتی ہے ۔ پنجشیر کا شمالی علاقہ پنجشیر کی پہاڑیوں سے بھی گرا ہوا ہے ۔ وہیں جنوب میں کوہستان کی پہاڑیاں اس وادی کو گھیرے ہوئی ہیں ۔ یہ پہاڑیاں سال بھر برف سے ڈھکی رہتی ہیں ۔

      کبھی پنجشیر کے شیر احمد شاہ مسعود کا گڑھ رہے اس علاقہ سے مخالفت کا جھنڈا ان کے بیٹے احمد مسعود نے اٹھا رکھا ہے ۔ وہ لوگوں کو جنگ کی ٹریننگ دے رہے ہیں ۔ ان کے ساتھ اشرف غنی سرکار میں نائب صدر رہے امر اللہ صالح بھی ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: