Choose Municipal Ward
    CLICK HERE FOR DETAILED RESULTS
    ہوم » نیوز » عالمی منظر

    کانگو میں مظاہرے کے دوران تشدد میں 44 افراد مارے گئے

    کانگو میں صدر جوزف كابیلا کی مخالفت میں گزشتہ 48 گھنٹوں کےدوران ہونے والے تشدد میں چھ پولیس والوں سمیت کم از کم 44 افراد مارے جا چکے ہیں۔

    • UNI
    • Last Updated: Sep 21, 2016 12:12 PM IST
    • Share this:
    • author image
      NEWS18-Urdu
    کانگو میں مظاہرے کے دوران تشدد میں 44 افراد مارے گئے
    فائل فوٹو

    کنشاسا۔ افریقی ملک کانگو میں صدر جوزف كابیلا کی مخالفت میں گزشتہ 48 گھنٹوں کےدوران ہونے والے تشدد میں چھ پولیس والوں سمیت کم از کم 44 افراد مارے جا چکے ہیں۔ انسانی حقوق واچ نامی ادارے نے دعوی کیا کہ احتجاجی مظاہرے کے دوران سیکورٹی فورسز کی کارروائی میں 37 لوگ مارے گئے جبکہ مظاہرین نے چھ پولیس والوں کو ہلاک کر دیا۔ نیویارک میں واقع انسانی حقوق تنظیم کے لئے افریقی محقق ایدا ساوئر نے کہا کہ دو روز سے جاری جھڑپوں میں 20 افراد مارےگئے تھے جبکہ کل رات اور آج 17 ہلاکتیں ہوئی ہیں۔


    وزیر داخلہ ايوارسٹے بوشاب نے کہا کہ ریلی کے دوران بھڑکے تشدد میں 17 لوگوں کی موت ہو ئی، جن میں تین پولیس والےہیں۔ دوسری جانب ملک کی اپوزیشن اصلاح پسند فورس برائے اتحاد و یکجہتی (ایف او این یو ایس) کے صدر جوشیک اولونگ کوئے نے دعوی کیا کہ اس لڑائی میں 53 لوگ مارے گئے ہیں مگر مقامی اہلکاروں نے بتایا کہ اس لڑائی کے دوران 25 مظاہرین کو گولی مار دی گئی۔


    کابیلا 2001 میں اپنے آنجہانی والد کی جگہ پر اقتدار میں آئے تھے۔ ملک کے آئین کے مطابق کوئی بھی دو مرتبہ سے زیادہ صدر نہیں بن سکتا۔ باغیوں نے ان پر اقتدار میں برقرار رہنے کے لئے انتخابات میں تاخیر کا الزام لگایا ہے۔

    First published: Sep 21, 2016 12:12 PM IST
    corona virus btn
    corona virus btn
    Loading