உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    China میں کورونا کا قہر، شنگھائی میں لاک ڈاون کے بعد پہلی موت، ایک دن میں تین لوگوں نے توڑا دم

    China میں کورونا کا قہر، شنگھائی میں لاک ڈاون کے بعد پہلی موت، ایک دن میں تین لوگوں نے توڑا دم ۔ تصویر : سوشل میڈیا ۔

    China میں کورونا کا قہر، شنگھائی میں لاک ڈاون کے بعد پہلی موت، ایک دن میں تین لوگوں نے توڑا دم ۔ تصویر : سوشل میڈیا ۔

    covid-19 in shanghai: ڈھائی کروڑ کی آبادی والے شنگھائی کی میونسپل گورنمنٹ کے مطابق مرنے والوں میں دو خواتین اور ایک مرد شامل ہے۔ خواتین کی عمر 89 اور 91 سال تھی جب کہ مرد کی عمر 91 سال تھی۔

    • Share this:
      شنگھائی: آبادی کے لحاظ سے چین کا سب سے بڑا شہر شنگھائی ان دنوں کورونا کی مار جھیل رہا ہے۔ اتوار کو یہاں تین لوگوں کی موت کی تصدیق کی گئی۔ مقامی انتظامیہ کا دعویٰ ہے کہ شہر میں لگائے گئے لاک ڈاؤن کے بعد کورونا سے یہ پہلی موت ہے۔ تاہم 'زیرو ڈیتھ' کے دعوے پر بھی سوالات اٹھتے رہے ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ 2019 میں ووہان میں کورونا انفیکشن پھیلنے کے بعد شنگھائی چین کا اب تک کا سب سے زیادہ متاثرہ شہر بن گیا ہے۔

       

      یہ بھی پڑھئے : ورلڈ بینک و آئی ایم ایف کا اجلاس، وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن شرکت کیلئے امریکہ روانہ


      خبر رساں ایجنسی اے این آئی کے مطابق ڈھائی کروڑ کی آبادی والے شنگھائی کی میونسپل گورنمنٹ کے مطابق مرنے والوں میں دو خواتین اور ایک مرد شامل ہے۔ خواتین کی عمر 89 اور 91 سال تھی جب کہ مرد کی عمر 91 سال تھی۔ یہ لوگ پہلے سے ہی دل کی بیماری، ذیابیطس اور ہائی بلڈ پریشر سمیت کئی بیماریوں میں مبتلا تھے۔ ان لوگوں کو کورونا کی ویکسین تک نہیں لگی تھی۔ بتایا گیا کہ اسپتال میں داخل ہونے کے باوجود حالت سنگین ہوتی چلی گئی ۔ بچانے کی تمام کوششیں ناکام ہو گئیں۔

       

      یہ بھی پڑھئے : جی ایس ٹی کونسل 5 فیصد ٹیکس سلیب کو ہٹانے کی تجویز پر کرے گی غور، آخرکیوں؟


      اس سے قبل مارچ کے وسط میں شمال مشرقی جیلین صوبے میں دو اموات کی تصدیق ہوئی تھی۔ انہیں چین میں گزشتہ ایک سال میں کورونا سے ہوئی پہلی موت بتایا گیا تھا ۔ تاہم ان اموات کی اتنی کم تعداد پر بھی سوالات اٹھتے رہے ہیں۔ بی بی سی کی ایک رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ شنگھائی کے اسی اسپتال میں ایک ہفتہ کے اندر کم از کم 27 افراد کی موت ہو چکی ہے ۔ ان میں سے کسی کو بھی ویکسین نہیں لگی تھی۔

      اتوار کو شنگھائی کے میونسپل ہیلتھ کمیشن نے گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران یہاں کورونا کے 3238 تصدیق شدہ کیسز ملنے کے بارے میں بتایا۔ زنہوا نیوز ایجنسی کے مطابق 21,582 کیسز بغیر علامات کے پائے گئے۔ تعداد کے لحاظ سے یہ تعداد کم لگ سکتی ہے لیکن چین نے کورونا کے حوالے سے زیرو کووڈ پالیسی اپنائی ہے۔ ایسے میں معاملات میں معمولی اضافہ کے بعد بھی بہت سختی اختیار کی جاتی ہے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: