ہوم » نیوز » عالمی منظر

اسرائیل میں کورونا وائرس قہر کے درمیان وزیر اعظم نتن یاہو کے خلاف ہزاروں لوگ سڑکوں پر اترے ، جانئے کیوں

اسرایل میں 2018 سے ہی سیاسی بحران جاری ہے ۔ اسرائیل میں ایک سال میں مسلسل تین مرتبہ عام انتخابات ہوچکے ہیں ۔ لیکن کسی بھی پارٹی کو اکثریت نہیں ملی ہے ۔

  • Share this:
اسرائیل میں کورونا وائرس قہر کے درمیان وزیر اعظم نتن یاہو کے خلاف ہزاروں لوگ سڑکوں پر اترے ، جانئے کیوں
اسرائیل میں کورونا وائرس قہر کے درمیان وزیر اعظم نتن یاہو کے خلاف ہزاروں لوگ سڑکوں پر اترے ، جانئے کیوں

کورونا وائرس (Coronavirus) کے قہر کے درمیان اسرائیل (Israel) میں سیاسی احتجاج ہوا ۔ اس احتجاجی مظاہرہ میں سماجی دوری (Social distancing) کا پوری طرح خیال رکھا گیا ۔ تل ابیب (Tel Aviv)  میں 10 ہزار لوگوں کی بھیڑ نے اسرائیل کے وزیر اعظم بنجامن نیتن یاہو  (Benjamin Netanyahu) کے خلاف احتجاج کیا ۔ نتن یاہو پر کرپشن کے الزامات لگے ہیں جبکہ وہ مسلسل ایسے الزامات سے انکار کرتے آئے ہیں ۔


کورونا وائرس کی وجہ سے لاک ڈاون سے گزر رہے اسرائیل میں اس انوکھے احتجاج نے دنیا کی توجہ اپنی طرف کھینچ لی ۔ تل ابیب میں رابن اسکوائر پر تقریبا 10 ہزار لوگوں کی بھیڑ سڑک پر اتوار کی رات امنڈ پڑی ۔ بھیڑ میں موجود سبھی لوگ ماسک لگائے ہوئے تھے ۔ احتجاجی مظاہرہ کے دوران سماجی دوری کا بھی خاص طور پر خیال رکھا گیا ۔ ایک دورسرے سے دو میٹر کی دوری پر کھڑے کو وزیر اعظم یاہو کے خلاف نعرے بازی کی ۔


نیتن یاہو پر لگے بدعنوانی کے الزامات کو لے کر سڑکوں پر نکلے لوگ ہاتھوں میں کالے جھنڈے تھامے ہوئے تھے ۔ اپوزیشن کے لیڈروں نے نیتن یاہو پر ملک کی جمہوریت کو خطرے میں ڈالنے کا الزام لگایا ہے ۔ اس دوران مظاہرین نے نیتن یاہو کے حریف رہے گینٹز پر اتحاد میں شامل ہوکر بدعنوانی میں شامل ہونے کا الزام لگایا ہے ۔ ریلی کو خطاب کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈروں نے کہا کہ بلیو اینڈ وہائٹ پارٹی کے لیڈر حکومت میں شامل ہونے کیلئے نیتن یاہو پر لگے بدعنوانی کے الزامات سے سمجھوتہ کرچکے ہیں ۔


دراصل نیتن یاہو نے بلیو اینڈ وہائٹ پارٹی کے لیڈر بیننی گینٹز کو حکومت میں شامل ہونے کی دعوت دی تھی ، جس کے بعد بدلتے سیاسی حالات دیکھنے کو ملے اور پیر کو یاہو اور بینی گینٹز نے اتحاد کیلئے ایک سمجھوتے پر دستخط کئے ، جس کے تحت دونوں کے درمیان وزیر اعظم عہدہ کو لے کر 18-18 مہینے شیئر کرنے پر اتفاق رائے قائم ہوا ۔ مانا جارہا ہے کہ وزیر اعظم کی پہلی مدت کار نیتن یاہو کے پاس ہی رہے گی ۔

قابل ذکر ہے کہ اسرایل میں 2018 سے ہی سیاسی بحران جاری ہے ۔ اسرائیل میں ایک سال میں مسلسل تین مرتبہ عام انتخابات ہوچکے ہیں ۔ لیکن کسی بھی پارٹی کو اکثریت نہیں ملی ہے ۔ نیتن یاہو کی لیکوڈ پارٹی کو ایک بھی الیکشن میں مطلوبہ سیٹیں نہیں ملیں ۔ ہر الیکشن میں نیتن یاہو کی لیکوڈ پارٹی اور بلیو اینڈ وہائٹ پارٹی کے درمیان ہی سخت مقابلہ دیکھنے کو ملا
First published: Apr 21, 2020 06:41 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading