உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کھانا لیکر پہنچا ڈلیوری بوائے تو سنی خاتون کی چیخوں کی آواز، اندر جھانک کر دیکھا تو تڑپ رہی تھی حاملہ

    پیری رہان بتاتے ہیں کہ وہ سامان ڈلیوری کرنے کیلئے گئے تھے۔ اسی بیچ انہیں کسی کی درد بھری چیخیں سنائی دیں جیسی کسی کا قتل کیا جارہا ہو۔ انہیں بالکل بھی سمجھ نہیں آیا کہ آخر کیا ہو رہا ہے۔ پھر بھی انہوں نے رک کر اندر جھانکا تو انہیں ایک تیس سال کی خاتون زمین پر لیٹی ہوئی نظر آئی جو زور زور سے تڑپ کر کرہا رہی تھی۔

    پیری رہان بتاتے ہیں کہ وہ سامان ڈلیوری کرنے کیلئے گئے تھے۔ اسی بیچ انہیں کسی کی درد بھری چیخیں سنائی دیں جیسی کسی کا قتل کیا جارہا ہو۔ انہیں بالکل بھی سمجھ نہیں آیا کہ آخر کیا ہو رہا ہے۔ پھر بھی انہوں نے رک کر اندر جھانکا تو انہیں ایک تیس سال کی خاتون زمین پر لیٹی ہوئی نظر آئی جو زور زور سے تڑپ کر کرہا رہی تھی۔

    پیری رہان بتاتے ہیں کہ وہ سامان ڈلیوری کرنے کیلئے گئے تھے۔ اسی بیچ انہیں کسی کی درد بھری چیخیں سنائی دیں جیسی کسی کا قتل کیا جارہا ہو۔ انہیں بالکل بھی سمجھ نہیں آیا کہ آخر کیا ہو رہا ہے۔ پھر بھی انہوں نے رک کر اندر جھانکا تو انہیں ایک تیس سال کی خاتون زمین پر لیٹی ہوئی نظر آئی جو زور زور سے تڑپ کر کرہا رہی تھی۔

    • Share this:
      عام طور پر ہمارے گھر سامان کی ڈلیوری کرنے کیلئے کمپنی کی جانب سے ڈلیوری بوائے پنچتے ہیں لیکن ایک برطانوی ڈلیوری بوائے کے ساتھ جو ہا اس نے انہیں برطانوی اخبار کی سرخیوں میں لا دیا۔ پیری ریان Perry Ryan گئے تو تھے سامان ڈلیور کرنے لیکن انہوں نے ایک خاتون کا بچہ بھی ڈلیور کروا دیا اور بن گئے ڈلیوری مین۔
      انتیس سالہ پیری ریان Perry Ryan پیشے سے ڈلیوری بوائے ہیں اور فٹ بال کے کھلاڑی بھی ہیں۔ انہوں نے اپنی ڈلیوری بوائے کے ٹائٹل کو تب سچ کر دجھایا جب انہوں نے واقعی ایک خاتون کی ڈلیوری کرا دی۔ گھر میں اکیلے حاملہ خاتون کو درد سے چیختا سن کر وہ اس کے پاس گئے جب تک پیرا میڈیکل اسٹاف وہاں پہنچتا، تب تک پیری نے ان کا دھیان رکھا اور اسی درمیان خاتون کے بچے نے جنم لے لیا۔

      سامان ڈلیور کرنے گئے پیری ریان نے سنی آواز
      پیری رہان بتاتے ہیں کہ وہ سامان ڈلیوری کرنے کیلئے گئے تھے۔ اسی بیچ انہیں کسی کی درد بھری چیخیں سنائی دیں جیسی کسی کا قتل کیا جارہا ہو۔ انہیں بالکل بھی سمجھ نہیں آیا کہ آخر کیا ہو رہا ہے۔ پھر بھی انہوں نے رک کر اندر جھانکا تو انہیں ایک تیس سال کی خاتون زمین پر لیٹی ہوئی نظر آئی جو زور زور سے تڑپ کر کرہا رہی تھی۔ انہون نے جاننے کی کوشش کی تو خاتون زیادہ کچھ تو نہیں بتا پائی لیکن انہیں یہ سمجھ میں آگیا کہ ان کی ڈلیوری کا وقت آگیا ہے۔ انہوں نے پیرامیڈیکل کو فون کیا اور خود خاتون کی مدد کرنے لگے۔ خاتون کے شوہر پاس میں ہی کسی دکان پر کام کرتے ہیں جیسے ہی انہیں کسی پڑوسی کا فون آیا تو وہ بھاگ کر گھر پر پہنچے۔

      بغیر ڈاکٹر کے ہوئی ڈلیوری
      گھر پہنچ کر خاتون کے شوہر نے وہاں کی حالت دیکھی تو وہ حیران رہ گئے تب تک پیری رہان نے فون ہر ہی مڈوائس سے انسٹرکشن لینے شروع کر دئے اور ان کے شوہر کو ڈلیوری کے انسٹرکشن سمجھانے لگے۔ آخرکار کافی کوششوں کے بعد پیری اور خاتون نے ملک کر ایک پیاری سی بچی کا جنم کرا لیا۔ پیری بتاتے ہیں کہ یہ ان کیلئے بیحد عجیب تھا انہوں نے کبھی نہیں سوچا تھا کہ وہ ایسا کر سکتے ہیں۔
      یہ بچی مسٹر انڈ مسز شوکر کے گھر پیدا ہوئی اور انہوں نے ڈلیوری بوائے پیر ریان کا تہہ دل سے شکریہ ادا کیا جس حالت میں میری بیوی اس وقت تھی کسی اور کو گھر میں پہلے سے مجود دیکھنے کیلئے کافی سکون بھرا تھا۔ اب بچی صحت یاب ہے اور پیری ریان کی سنجیدگی اور مدد کے قصے برطانیہ کی میڈیا میں چھائے ہوئے ہیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: